Posts

Showing posts from December, 2013

Criminal negligence, Mullah Radio and Friday Sermons

Image
ہر جمعہ مبارک کے دن لاکھوں خطیب اسلام کے نام پر طالبان اور دہشت گردوں کی خاموش 
حمایت میں خطبے فرماتے ہیں . عوام خاموشی سے سنتے ہیں . ملا پر کوئی روک ٹوک نہیں . قرآن پاک کی منتخب ادھوری آیات اور ادھوری احادیث مبارک بیان کر کے سیاست ور ہر موضو ع پر بلا روک ٹوک بولتے ہیں . سب خاموش ہیں . یاد رہے سوات میں ملا ریڈیو نے اسی طرہ عوام کو بیوقوف بنایا تھا . بعد میں جو کچھ ہوا وہ ہم سب کو معلوم ہے . الله کا عذاب ہم پر نازل ہو چکا ہے مڈل ایسٹ جہاں سے ان کو ڈالر ملتے ہیں ووہاں کیا ہوتا ہے پڑھینن .



کم از کم چار اقدامات قرآن حدیث میں کہیں بھی نہیں کہا گیا کہ جلسے کرو‘ جلوس کرو۔ ریلی نکالو‘ کانفرنسیں کرو‘ نعرے لگائو۔ امام ابو حنیفہؒ اور ان کے استادِ گرامی امام جعفر صادقؒ نے کتنے جلسوں سے خطاب کیا؟ کتنے جلوس نکالے؟ کتنی ریلیاں منعقد کیں اور کرائیں‘ کتنی شاہراہوں اور چوکوں کو کانفرنسوں سے بند رکھا؟کیا حشر کے روز ہم سے یہ پوچھا جائے گا کہ تم نے کتنے سُنیوں کو مارا‘ کتنے شیعہ قتل کیے؟ کتنے بریلوی‘ کتنے دیو بندی اور کتنے اہلِ حدیث ختم کیے۔ دوسرے مسلک والے سے کتنی نفرت کی؟کیا ہم سے یہ باز پرس ہو گی کہ تم …

Protocols of elders of Zion & Wild horse of Media .... سرکش گھوڑا

The document 'The Protocols of the Elders of Zion' "הפרוטוקולים של זקני ציון"surfacedin the Russian Empire, and was first published in 1903. Book may be downloaded as:Pdf:  http://www.trueczech.110mb.comBook may be downloaded as html: click here >>>>>  Read article below:-Zionism, Bible & Qura.. http://peace-forum.blogspot.com/2011/02/protocols-of-elders-of-zion.htmlتقریباً ایک سو سترہ سال قبل پوری دنیا پر حکومت کرنے کا منصوبہ ان لوگوں کی نظر میں ایک خواب نہیں تھا بلکہ ایک حقیقت تھی‘ جسے ایک دن پورا ہونا تھا۔ ایک ہزار سال تک دنیا بھر میں در بدر رہنے والی اس قوم کے تین سو کے قریب دانشور، مفکر، فلسفی اور ان کے مذہبی پیشوا، جنہیں ''ربّی‘‘ کہا جاتا ہے‘ سوئٹزرلینڈ کے شہر ''بال‘‘ میں جمع ہوئے۔ ان دانشوروں کا ہدف صرف ایک تھا کہ اس دنیا پر محسوس اور غیر محسوس طریقے سے کیسے مکمل طور پر اختیار حاصل کرنا ہے۔ ان سب نے مل کر ایک حکمتِ عملی ترتیب دی جسے آج کی دنیا ''پروٹوکولز‘‘ ''Protocols of the Elders of Zion'' کے نام س…

Incompatible with technology

Image
WHAT is one to make of the societal exhortation to focus the nation’s energies on acquiring scientific knowledge and updating the technological base to traverse the 21st century with some degree of confidence? Although it may appear fashionable to be pessimistic about our chances of ‘making it’, one wonders how we can imbibe scientific thoughts and methods with the intellectual baggage we carry. Can we reinvent and modernise government and private businesses? Does the youth and new breed of young entrepreneurs provide greater future hope?

Any nation’s response to technological change is partly influenced by the environment and partly by genetics. Pakistani society is inherently at odds with technology. Whereas axiomatic reasoning and treatment defies any prior knowledge, we take many things as given — prior beliefs cannot be questioned. We are a nation of believers. We are used to being given ideas and accepting them. For example, the educational examination systems are based on the …

Dispatches from Waziristan

Image
The mood here is pensive. I was here in the spring, when most of the IDPs had returned, and the brigade commander and his staff were boisterous about their recent achievements.
From sanitisation operations, which are small-scale `mop up` eneasements. to trackine sub-trib-al politics, they seemed sure of themselves. Now, most of the junior officers (the adjutant, the brigade major) are the same, but the new brigadier is still settling in.

Almost everybody is offcolour. They`ve just been recently hit, hard.

The new brigadier got a bitof a welcome party in just his first week, officers recall. They had picked up signal chatter a month ago, but they hadn`t been able to process it because the intel was too disconnected.

All they knew was that the insurgents had gotten hold of some uniforms.

That`s it.

Meanwhile, the army`s new `digital camo` uniforms had still not arrived for all the units stationed in this sector held by the 327 for a couple of years now.

Some of the officers who had bee…

Balochistan: madressahs the fallback option

Image
AT the age of 40, Abdul Rahim Jan earns a meagre income of Rs9,000 a month selling potatoes off a pushcart in the dusty Nawan Killi area of Quetta.

`I cannot pay school fees or buy costly books for my children,` he tells Dawn. So his nine-yearold son and seven-yearold daughter study in two seminaries. `The madressahs provide free religious education and food to them,` he says.

In Balochistan, there are thousands of families like that of Rahim Jan, pushed by a combination of religious, political and social factors into sending their children to madressahs. The madressah network, which is widely accused of recruiting `jihadis` and financing militancy, is not just spreading rapidly here but is also actively discouraging formal schooling. Yet where the religious-right is manipulating the situation, the government`s shortcomings are glaring, too: over 10,000 settlements across Balochistan have no schools at all, and the province has 2.3 million children out of school.

The Balochistan gove…

In through the out door Hizb ut Tahrir

Image
Many young educated Pakistanis are struggling to find political, social and economic examples of the faith-driven utopia that they were told Pakistan was to become.

These young people are the products of the myopic narratives about Pakistani nationhood and religion found in our textbooks and the populist media.

The problem with many among this generation of young middle-class men and women is that unlike the earlier generations, they seem to have wholly bought into the charade of a religion-based utopia they were told the founding fathers had supposedly conceptualised.

This has happened in spite of the fact that today they have more opportunities to acquire modern education and information than ever before.

But this generation has decided to somewhat block and deflect alternative narratives that attempt to counter the one that defines Pakistan as some unique experiment to achieve a religious, nationalist and political singularity.

A good part of this dilemma is also about how many yo…

چہرے نہیں سسٹم بدلنا ہوگا Change Political system of Pakistan not mere faces

اگر تاریخ کوئی سبق دیتی ہے تو سمجھ لینا چاہیے کہ ہم بحیثیت قوم اپنی آزادی کے وقت سے جس تبدیلی کا بے تابی سے انتظار کر رہے ہیں اسے معجزہ ہی لا سکتا ہے۔ ہماری داستان ایک ایسے سماج کی ہے جو چھیاسٹھ برس سے ایک ہی دائرے میں بے مقصد چکر لگائے جا رہا ہے۔ جمہوریت‘ قانون کی پاسداری اور اچھی حکمرانی کا فقدان اس کی روش بن چکی ہے۔ بدقسمتی سے ایک نو آزاد قوم کے طور پر ہم آزادی سے وابستہ ان چیلنجوں کا مقابلہ نہیں کر پائے جو ہمارے جیو پولیٹیکل حالات اور سماجی بُنت کا حصہ تھے۔ ہمارا اصل مسئلہ یہ ہے کہ ملک کے اقتدار پر جاگیرداروں‘ قبائل اور اشرافیہ کی بالادستی اپنی جڑیں اتنی گہری کر چکی ہے کہ یہ نظام میں کوئی ایسی تبدیلی نہیں لانے دیتی جو اُسے راس نہ آتی ہو۔ وہ صرف اپنے مفاد کی خاطر آئین میں ترامیم کرتے ہیں۔ اس کا سب سے زیادہ نقصان ریاستی اداروں اور قومی سلامتی کو پہنچا اور اس کے نتیجے میں ملک کا ایک ایسا سیاسی نظام وضع نہیں کیا جا سکا جو اس کی نسلی اور لسانی طور پر متنوع آبادی کے لیے موزوں ہو۔  ہماری حکمران اشرافیہ نظام کی کمزوریاں دور کرنے اور قومی اتحاد کا باعث بننے والے عوامل پر توجہ دینے کے …

Goodbye Chief Justice Iftikhar Chaudhry

Image
،ظلم غربت، کرپشن اور دہشت گردی کی ماری قوم کے لیے افتخار چودھری کی موجودگی صحرا میں بھٹکے مسافر کے لیے نخلستان کی ما نند تھی. نا ایل اور کرپٹ حکمرانوں اور برو کریٹ کی کرپتیوں اور نہ اہلی کے اگے ایک دیوار کم از کم ڈر تھا . میڈیا اور عوام اکثر میگا سکینڈلز معلوم کر کے خوش ہو جاتے .
کیوں کہ عوام نے ان کے بحالی میں حصہ لیا تھا لہٰذا توقعات بھی زیادہ تھیں کافی حد تک افتخار چودھری نے ان کو خوش کیا . مگر کیا جو کچھ انھوں نے کیا یہ کافی تھا ؟ یا وہ کچھ مزید کام کر سکتے تھے جن کے مثبت اثرات نہ صرف دیر تک رہتے بلکہ پاکستان کی سمت ہی بدل دیتے .تمام تنقید اور تعریف ایک طرف یہاں  صرف اہم معاملات پر فوکس focus کر تے ہیں:
آیے جذبات محبت خلوص کے دائروں سے باھر نکال کر جائزہ لیں :
اگر ایک diabetic شوگر کا مریض ڈاکٹر کے پاس جایے اور اس کو بتا ے کہ اس کی نظر کمزور ہو رھی ہے ، تا نگوں میں درد ہے ، پاؤں میں زخم ٹھیک نہیں ہوتا  گردے kidney میں تکللیف ہے . ڈاکٹر اس کی آنکھوں کا علاج کرتا ہے ، درد کی دو ا pain killer  دیتا ہے . گردوں کی دو دیتا ہے  مریض کو فرق پڑتا ہے . آنکھ بہتر ہوتی ہے ، درد کم ہو جاتا ہے…