Featured Post

Wake up Now ! جاگو ، جاگو ، جاگو

Wake up Pakistan ! Presently the Muslim societies are in a state of ideological confusion and flux. Materialism, terrorism,...

Wednesday, June 11, 2014

مسلم دنیاکی اناڑی قیادت Immature leadership of Muslim world

I remember in the 1980s as he orated against the Soviet Union, President Reagan often quoted from Thomas Paine’s Common Sense with his vision of a United States strong enough “to begin the world over again.” One of his Republican successors did it. President George W Bush did begin the world all over again. But he turned it upside down. No wonder, we are today living in a turbulent world.
The ideological division of the Cold War world into two rival blocs, the East and the West, has given way to a new configuration of power in the form of unipolarity, unleashing its own security challenges and problems for the world at large. The world now stands divided between the “West and the Rest” and, as before, between two unequal halves, one embarrassingly rich and the other desperately poor. While the West is endowed with abundance of wealth and affluence, the “Rest,” which includes mostly Third World countries representing the overwhelming part of humanity, languishes in poverty and backwardness.

Unfortunately, all is not well with the Third World. Most developing countries suffer serious governance and rule of law problems rooted in their authoritarian and non-representative political culture. Some of them are mired in perpetual intra-state or inter-state conflicts. What is even more disturbing is that two of the world’s largest regions, Africa and South Asia, both rich in natural and human resources, are the biggest victims of poverty and violence. Both continue to be scenes of endemic instability as a result of conflicts and hostilities, unresolved disputes, unaddressed historical grievances, and deep-rooted communal and religious estrangement.

And the Muslim world is in no better shape. It represents the tragic story of Medusa, the ill-piloted French naval ship in the 19th century that ran aground because of its incompetent captain’s blunders and his dependence on others for navigational guidance, leaving behind a sordid tale of helplessness, death and desperation. The Medusa’s wreck is still out there, stuck on the West African coast. Like Medusa’s wreck, the Muslim world is just lying there, aimlessly floating like a stricken ship with no one to steer it out of the troubled waters.

The Muslim world today is indeed in a crisis. Representing one-fifth of humanity as well as of the global land mass spreading over 57 countries and possessing 70 percent of the world’s energy resources and nearly 50 percent of the world’s natural resources, the Muslim world should have been a global giant, economically as well as politically. Rich in everything but weak in all respects, it represents only five percent of the world’s GDP and is totally a non-consequential entity with no role in global decision-making, or even in addressing its own problems.

Though some of them are sitting on the world’s largest oil and gas reserves, the majority of Muslim countries are among the poorest and most backward in the world. Poor and dispossessed, Muslim nations emerging from long colonial rule may have become sovereign states but are without genuine political and economic independence. With rare exceptions, they are all at the mercy of the West for their political strength and survival and are politically bankrupt with no institutions other than authoritarian rule. They have no established tradition of systemic governance or institutional approach in their policies and priorities.

They have no bone, no muscle and whatever wealth they possess is being exploited by the West. The rulers in today’s Muslim world, without exception, are at the mercy of the US for their political strength and survival, and are responsible for the current political, economic and military subservience of their countries to the West. Their lands and resources remain under “protective” military control of their masters, who are also the direct beneficiaries of their oil proceeds and investments.

Every ingredient of political life in these so-called sovereign states has been faked; sovereignty is not sovereignty, parliament is not parliament, law is not law, and the opposition parties are as corrupt and wasted as the ruling parties. Even the independence following the colonial powers’ handing over of the reins of government to local rulers was not true independence. Other than being members of the United Nations, they have no semblance of sovereignty, independence or freedom.

Peace is the essence of Islam and yet the Muslim nations have seen very little of it, especially after the Second World War. Conflict and violence are pervasive in the Muslim world. Some states are home to foreign military bases, while others have allowed foreign forces to use their territory freely and even to carry out their “operations” at will. There are others selflessly engaged in proxy wars on behalf of others and in some cases against their own people. The tragedies in Palestine, Kashmir, Iraq and Afghanistan represent the continuing helplessness of the world’s Muslims.

Since 9/11, Islam itself is being demonised by its detractors with obsessive focus on the religion of individuals and groups accused of complicity or involvement in terrorist activities. Islam is being blamed for everything that goes wrong in any part of the world. The Muslim freedom struggles of yesterday are now seen as the primary source of “militancy and terrorism.”

Global terrorism is now being used to justify military occupations and to curb the legitimate freedom struggles of Muslim peoples. Muslim issues remain unaddressed for decades. Palestine is tired and has given up. Iraq is still burning. Afghanistan has yet to breathe in peace. Kashmir is devastated and stands disillusioned. Lebanon is simmering. Pakistan is suffering the worst leadership crisis. Iran is on notice. The Muslim world could not be more chaotic and more helpless. Surely these are critical times for the Muslim world.

What aggravates this dismal scenario is the inability of the Muslim world as a bloc to take care of its problems or to overcome its weaknesses. Its rulers have mortgaged to the West not only the security and sovereignty of their countries but also the political and economic futures of their nations. Despite material affluence in a few oil-rich countries, there is a widespread sense of political and economic deprivation in the Muslim world.

These are all a dreary phenomena for which the rulers of the Muslim world alone are responsible. Thanks to our obscurantist mindset, we have done nothing to secure our future in this alarmingly chaotic world. It makes no sense dwelling nostalgically on Islam’s past and “lost” glory. For us, the steady erosion of Islamic polity and power, the Muslim world’s lurch into Western colonialism, and now, total political, economic, social and technological backwardness, should be stark reminders of the historical magnitude of the failures of Muslim leadership. We cannot entirely blame the West for the Muslim world’s institutional bankruptcy, its political and intellectual aridity, its deficiency in knowledge, education and science and technology, its aversion to modernity and modernisation, and its growing servility to the West.

Things will not change unless the Muslim world itself fixes its fundamentals and puts its house in order. Angels will not descend to help or salvage it. It must take control of its own destiny through unity, mutuality and cohesion within its ranks. Its wealth and resources now being exploited by the West should be used to build its own strength and for its own socio-economic well-being. The key to reshaping the destiny of the Muslim world lies in its political and economic independence and military strength with each Muslim nation opting for peace and democracy, and for knowledge and technology as top priority.
Email: shamshad1941@yahoo.com
News International

اس حقیقت سے کوئی انکار نہیںکرسکتا کہ آج مسلم دنیا بحران کی زد میں ہے۔ پوری دنیا کا پانچواں حصہ مسلم آبادی پر مشتمل ہے، وسیع و عریض رقبے پر پھیلے ہوئے 57 ممالک میں مسلمانوں کی حکومت ہے، دنیا میں موجود 70فیصد توانائی اور50 فیصد قدرتی وسائل بھی مسلمان ممالک کے پاس ہیں۔ اتنی بڑی آبادی، رقبے اور وسائل کی مالک مسلم دنیا کو سیاسی اور اقتصادی لحاظ سے دنیا کی بہت بڑی طاقت ہونا چاہیے تھا؛ لیکن افسوس ، صورت حال اس کے بالعکس ہے۔۔۔۔تمام نعمتوں سے مالا مال مسلم دنیا ہراعتبار سے کمزور ہے۔ دنیا کی جی ڈی پی میں اس کا حصہ صرف 5 فیصد ہے۔ اس کی حیثیت نہیںناقابل ذکر ہے، اس کا نہ صرف عالمی سطح کی فیصلہ سازی میں کوئی کردار ہے بلکہ یہ خود اپنے معاملات طے کرنے کی صلاحیت سے بھی عاری ہوچکی ہے۔
اس کا اپنا کوئی مضبوط ڈھانچہ ہے نہ موثرادارے ، حتیٰ کہ اس کے پاس جو دولت ہے، اسے عملی طور پر مغرب استعمال کرتا ہے۔ ستم ظریفی یہ ہے کہ پوری مسلم دنیا، بلااستثنیٰ اپنی سیاسی قوت اور بقا کے لیے امریکہ کے رحم و کرم پر ہے۔ مسلم دنیا کے حکمران ہی اپنے ممالک کے سیاسی،اقتصادی اور فوجی اعتبار سے مغرب کے زیر دست ہونے کے ذمہ دار ہیں۔ ان کے ملکوں کی زمین اور وسائل ان کے ''آقائوں‘‘ کی '' حفاظتی تحویل‘‘ میں ہیں اور وہی ان کے تیل اور سرمائے سے براہ راست استفادہ کرتے ہیں۔ اگرچہ تیل اورگیس کے سب سے بڑے ذخائر کچھ مسلمان ممالک کے پاس ہیں لیکن مسلم دنیا کے بیشتر ممالک دنیا کے سب سے زیادہ غریب اور پسماندہ ہیں۔ بلاشبہ طویل نو آبادیاتی تسلط سے نجات پانے والے اکثر ممالک غریب اور بے وسیلہ تھے ، آزاد ہونے کے بعد وہ مکمل خود مختار ریاستیں بن سکتے تھے لیکن انہیں آج تک حقیقی سیاسی و اقتصادی آزادی نصیب نہیں ہوپائی۔ ان کی تجارت، ان کی تیل کی آمدنی، سرمایہ کاری کے لیے مختص فنڈز، بینکنگ سسٹم ، بچتیں اورامیرمسلمان ممالک کی ہر چیز مغرب کے زیر تسلط ہے۔ معمولی استثنیٰ کے ساتھ تمام مسلمان حکمران سیاسی اعتبار سے نااہل ہیں اور اپنی مطلق العنان حکمرانی کے سوا ملک کے اداروں کو مضبوط بنانے میں ان کی کوئی دلچسپی نہیں ہے۔
حکومتی نظام یا ملکی پالیسیوں اور ترجیحات کاتعین کرنے کے لیے ان کے پاس مضبوط روایات نہیں ہیں، لہٰذا ان نام نہاد خود مختار ریاستوں کی سیاسی زندگی کا ہرپہلو ناپائیدار اور غیر حقیقی ہے۔۔۔۔ان کی خود مختاری حقیقی خود مختاری نہیں، پارلیمنٹ صحیح معنوں میں پارلیمنٹ نہیں، قانون کو قانون نہیںکہا جاسکتا اور اپوزیشن کی جماعتیں حکمران پارٹیوں کی طرح کرپٹ اور اچھی روایات سے تہی دامن ہیں۔ دراصل نو آبادیاتوں طاقتوں نے مقامی حکمرانوں کو اقتدار تو سونپ دیا مگر حقیقی آزادی نہیں دی۔ نوآزاد مسلم ممالک کی حیثیت اقوام متحدہ کا رکن ہونے کے باوجود مغرب کی کالونیوں جیسی ہے اورآج تک انہیں حقیقی آزادی اور قومی وقار نصیب نہیں ہوسکا۔
امن و سلامتی اسلام کی روح ہے لیکن مسلمان اقوام کے پاس اس کا حصہ نہایت قلیل ہے، خصوصاً دوسری جنگ عظیم کے بعدان میںانتشاربڑھ گیا ۔ کچھ مسلمان ممالک میں بیرونی ممالک کے فوجی اڈے قائم ہیں اورکچھ نے بیرونی فورسزکو اپنی سرزمین استعمال کرنے اور اپنی مرضی کے آپریشنز جاری رکھنے کی اجازت دے رکھی ہے۔ ان میں کچھ ایسے بھی ہیں جو غیروںکے ایما پر پراکسی وار لڑرہے ہیں اور ان میں سے بعض اپنے ہی لوگوں کے خلاف برسر پیکار ہیں۔ فلسطین، کشمیر، عراق اور افغانستان کے المیے دنیا میں مسلمانوں کی بے بسی کا مظہر ہیں۔ نائن الیون کے بعد خود اسلام کا چہرہ ایسے افراد یا گروپوں کے مذہب کے طور پر پیش کیا جارہا ہے جو دہشت گردی میں ملوث ہیں۔ دنیا کے کسی بھی حصے میں پیش آنے والے ہر غلط کام کاذمہ دار اسلام کو قرار دے دیاجاتا ہے۔ دنیاکی طاقتوراقوام تشدد اورانتہاپسندی کی لعنت کی آڑ میں مسلمانوں کی جدوجہد آزادی کو ''عسکریت اور دہشت گردی‘‘ کانام دے کر مسلمان عوام کی تحاریک آزادی کوفوجی غلبے کے ذریعے کچلنے کے درپے ہیں۔
کئی دہائیوںسے مسلمانوں کے مسائل اور معاملات پر توجہ نہیں دی جارہی۔ فلسطین کو نظراندازکردیاگیا ہے، عراق ابھی تک جل رہا ہے، افغانستان قیام امن کا منتظر ہے، مسئلہ کشمیرکا حل خواب و خیال بن چکا ہے، لبنان کے حالات بدستورکشیدہ ہیں، لیبیا کو مفلوج کردیاگیا ہے اور مصرکو ایک نئی مطلق العنان حکومت کی تجربہ گاہ بنایا جارہا ہے۔ شام میں حکومت کی برطرفی اگلا ہدف ہے۔ ایران سے نمٹنے کا لائحہ عمل تیاری کے مراحل میں ہے اور پاکستان انتہائی نگہداشت کے وارڈ (ICU)میں ہے۔ مسلم دنیاکواس زیادہ بحران زدہ اور بے بس نہیں کیاجاسکتا۔ یقیناً یہ وقت مسلم دنیا کے لیے انتہائی پریشان کن اور سنگین ہے۔ اس ابتر صورت حال کو جو چیز مزید المناک بنارہی ہے وہ مسلم دنیا کی بحیثیت ایک بلاک اپنے مسائل کے حل اورکمزوریوں پر قابو پانے میں نااہلی ہے۔
ہم مسلم دنیا میں اداروں کی ناکامی، علم کی کمی اور سائنس اینڈ ٹیکنالوجی میں پیچھے رہ جانے کا سارا الزام مغرب کو نہیں دے سکتے، اس کی تمام تر ذمہ داری مسلمان حکمرانوں پر عائد ہوتی ہے۔ انہوں نے نہ صرف اپنی سکیورٹی اور خود مختاری بلکہ اپنے ملکوں کا سیاسی اور اقتصادی مستقبل بھی مغرب کے ہاتھوں میں گروی رکھ چھوڑا ہے۔ مسلم دنیا کے وہ چند ممالک جو تیل کی دولت سے مالامال ہیں، وہ بھی سیاسی اور اقتصادی آزادی سے محروم ہیں۔ اسلام کے ماضی کی عظمت اور''گم شدہ ‘‘ شان و شوکت کے ناسٹلجیا میں زندہ رہنا مناسب نہیں، ہماری بھرپور توجہ اس امر پر مرکوز رہنی چاہیے کہ اسلامی دنیا اقتدار سے کیونکر محروم ہوئی، وہ کون سے اسباب ہیں جن کی بنا پرمسلم دنیا مغرب کی نو آبادیاتی تسلط میں آگئی اور اب جبکہ ہم صنعتی اور ٹیکنالوجی کے میدان میں انتہائی پسماندہ ہیں، سیاسی ، اقتصادی اور فوجی اعتبار سے بھی مغرب کے دست نگر ہوچکے ہیں، مسلم لیڈر شپ اپنی تاریخی ناکامیوں کا ادراک کرتے ہوئے آگے بڑھنے کی ٹھوس تدابیر اختیارکرے۔
بدقسمتی سے ہماری حالت انیسویں صدی کے فرانسیسی بحریہ کے جہاز ''میڈوسا‘‘ کے مشابہ ہے جس کا اناڑی کپتان اپنی حماقتوں اور دوسروں کی تکنیکی مہارت پر انحصار کرتے ہوئے ادھر ادھر بھٹکتا رہا اور بالآخر اپنے پیچھے بے بسی ، موت اور مایوسی کی ایک المناک کہانی چھوڑ گیا۔ میڈوسا مغربی افریقہ کے ساحل آرگوئن سے ٹکرا کر تباہ ہوگیا تھا۔ آج مسلم دنیا کی حالت اپنے مفاد پرست اور نااہل قائدین کی وجہ سے میڈوسا کے کپتان سے مختلف نہیں جومحکمہ کسٹم کا ایک افسر تھا لیکن فرانسیسی بادشاہ کا ذاتی دوست ہونے کی بنا پر جہازکا کپتان بن گیا ۔ ہمارے قائدین نے بھی اپنے ''آقائوں‘‘کی آشیرباد سے اقتدار تو حاصل کرلیا لیکن وہ نہیں جانتے کہ مسلم دنیا کو کس طرف لے جانا ہے۔
جب تک مسلم دنیا بذات خود اپنی بنیادیں اوراندرونی معاملات درست نہیں کرتی،اس میں کوئی مثبت تبدیلی نہیں آئے گی۔کوئی فرشتہ ان کی مدد کے لیے آسمان سے نہیں اترے گا، وہ اس وقت مغرب کی مدد کرنے میں مصروف ہیں۔ مسلم دنیا کو متحد اور منظم ہوکر اپنی تقدیر اپنے ہاتھوں میں لینا ہوگی۔ اپنے وسائل اور دولت جسے مغرب استعمال کررہا ہے، اپنی طاقت بڑھانے اور اپنی سماجی و اقتصادی حالت بہتر بنانے پرخرچ کرنا ہوںگے۔ مسلم دنیا کی نجات اور فلاح ہر مسلمان ملک کی پالیسیوں اور ترجیحات میں پوشیدہ ہے، لیکن اس کا انحصار مسلم قائدین اور حکومتوں پر ہے کہ وہ نہ صرف اپنی سکیورٹی اور آزادی کو یقینی بنائیں بلکہ اپنی سیاسی ، اقتصادی اور سماجی استحکام کا بھی اہتمام کریں۔
مسلم دنیا کا مستقبل بہتر بنانے کی کلید سیاسی و اقتصادی آزادی اور فوجی طاقت ہے۔ اس مقصد کے لیے ہر مسلمان ملک کو امن ، تعلیم اور ٹیکنالوجی کے حصول کو ترجیحِ اوّل بنانا ہوگا۔ ہر ملک کو اپنی موجودہ پالیسیوں اور ترجیحات کا از سر نو تعین کرتے ہوئے قیام امن اور اچھی جوابدہ حکومت قائم کرنے کی جانب پیشرفت کرنا ہوگی۔ مسلم دنیا کو عزت، وقار اور ترقی کے راستے پر ڈالنے کی ذمہ داری حکومتوں پر عائد ہوتی ہے اور وہی مسلم ملت کو سیاسی،ادارہ جاتی اور ذہنی پسماندگی سے نکال سکتی ہیں۔
پاکستان مسلم دنیا میں اتحاد اور یکجہتی پیدا کرنے کے لیے بنیادی کردار ادا کرسکتا ہے۔ اسے مسلمان ممالک میں سیاسی، اقتصادی اور تزویراتی تعاون کو فروغ دینے کے لیے انہیں تقسیم کرنے کے بجائے باہم مربوط کرنے کی حکمت عملی اختیارکرنی چاہیے۔ اسے اپنے آپ کو بھی مسلم دنیا کے لیے معیاری تعلیم، سائنس اینڈ ٹیکنالوجی کے حصول اور جدیدیت کے اعتبار سے شاندار مثال بننا چاہیے۔
(کالم نگار سابق سیکرٹری خارجہ ہیں)