Featured Post

Wake up Now ! جاگو ، جاگو ، جاگو

Wake up Pakistan ! Presently the Muslim societies are in a state of ideological confusion and flux. Materialism, terrorism,...

Saturday, February 13, 2016

Valentine’s Day Pagan roots: Catholic & Muslim views [English & Urdu]

ویلنٹائن ڈے کی مخالفت کیوں؟
Image result for valentine day

Image result for valentine day pagan history

February 14th is often celebrated as Valentine’s Day. Should you celebrate it?
Christians who may be tempted to compromise need to ask themselves about the origins of Valentine’s Day.

Notice what the Roman Catholics teach,

The roots of St. Valentine’s Day lie in the ancient Roman festival of Lupercalia, which was celebrated on Feb. 15. For 800 years the Romans had dedicated this day to the god Lupercus. On Lupercalia, a young man would draw the name of a young woman in a lottery and would then keep the woman as a sexual companion for the year (The Origins of St. Valentine’s Day. (http://www.americancatholic.org/Features/ValentinesDay/).
It is of interest to note that the same Catholic source states,
The Catholic Church no longer officially honors St. Valentine, but the holiday has both Roman and Catholic roots.
It is good that the Church of Rome no longer officially honors Valentine or the holiday.
Image result for valentine day pagan history
Look at some of what the Muslims say about Valentine’s Day,
Celebrating the Valentine Day is not permissible because: Firstly, it is an innovated holiday that has no basis in the Sharee`ah…Christians were aware of the Pagan roots of Valentine’s Day. The way the Christians adopted St. Valentine’s Day should be a lesson for Muslims. In fact, the failure to fully separate Valentine’s Day from its pagan roots explains why Islamic scholars and a number of Muslims avoid adopting traditions of non-Muslims, even though they could possibly be Islamicized…We should avoid anything associated with pagan immoral practices -…- Islam does not encourage flirting or suggestions of romantic relationships before marriage – Love between families, friends and married people does not need to be celebrated on a day with such un-Islamic origins (Ruling on Celebrating Valentine’s Day. (http://www.contactpakistan.com/news/news144.htm ).

What is the ruling on Valentine’s Day?…
Firstly: Valentine’s Day is a jaahili Roman festival, which continued to be celebrated until after the Romans became Christian. This festival became connected with the saint known as Valentine who was sentenced to death on 14 February 270 CE. The kuffaar still celebrate this festival, during which immorality and evil are practised widely…Secondly: It is not permissible for a Muslim to celebrate any of the festivals of the kuffaar, because festivals come under the heading of shar’i issues which are to be based on the sound texts…Partially joining in, at the very least, is disobedience and sin…it is not permissible to celebrate the festivals of the ignorant and the mushrikeen (polytheists). (fatwa No. 73007. What is the ruling on Valentine’s Day? (http://islamqa.info/en/ref/73007 )
So, according to Muslims, it is improper to celebrate pagan holidays and the so-called “Christians” clearly adopted a pagan holiday.
In Pakistan and other Islamic-dominated lands, steps to minimize its impact have been taken:
Conservatives in Pakistan tacked up posters urging people to boycott Valentine’s Day on Thursday, saying it’s a western-inspired event that’s spreading vulgarity in their country…
For them, Valentine’s Day is nothing but an occasion to encourage illicit relations between the country’s young  unmarried males and females. It’s a sign that Western culture and values are eating away the fabric of Pakistan’s traditional, Islamic society. Valentine’s Day, they say, is not a Pakistani holiday and not part of the culture here…
In Indonesia, the world’s most populous Muslim country, government officials and clerics in Jakarta called for young people to skip Valentine’s Day, saying it was an excuse for couples to have forbidden sex. Santana R. Valentine’s Day under attack in Pakistan. AP, February 14, 2013  )
Pakistan’s Electronic Media Regulatory Authority, or PEMRA, sent a letter to TV and radio stations reminding them that the holiday is “not in conformity to our religious and cultural ethos.” The report warns that “a large segment of society” has complained about “Valentine’s Day celebrations” and blames Valentine’s Day for “depraving, corrupting and injuring morality of Pakistani youth.”…
The letter begins:
It is generally observed that in the past “Valentine’s Day” is celebrated on February 14 by all the satellite TV channels whether an Entertainment or News & Current Affairs channel. PEMRA has been receiving complaints from a large segment of society that Valentine’s Day celebrations are not in conformity to our religious and cultural ethos and has, therefore, condemned its unequivocal propagation through media. Furthermore, such events have been perceived as a source of depraving, corrupting and injuring morality of Pakistani youth as well as violating Code of Conduct developed by PEMRA in pursuance of Rule 15 & PEMRA Rules 2009. (Dewey C. Pakistani regulator warns media against promoting Valentine’s Day (Washington Post, February 14, 2013.  http://www.washingtonpost.com/blogs/worldviews/wp/2013/02/14/pakistani-regulator-warns-media-against-promoting-valentines-day/)

Notice that because of sexual immortality associated with Valentine’s Day, many of the states in Malaysia have taken proactive steps to try to stop sinning then:
PAS Youth chief Nasrudin Hasan Tantawi said the Kedah, Kelantan and Selangor governments have directed all local authorities to work closely with police and Rela in order to carry out operations to check immoral activities during Valentine’s Day…He said the National Fatwa Council forbids Muslims from celebrating Valentine’s Day because of elements of Christianity and sin. (Move on Valentine’s Day ‘sins’ Malaysia Star – Feb 8, 2011. http://thestar.com.my/news/story.asp?file=/2011/2/9/nation/8024821&sec=nation)
KUALA LUMPUR – More than 300 volunteers between 19 to 25 years-old today joined a programme to make Muslims wary of the importance of not celebrating Valentine’s Day.
Islamic Development Department (Jakim) director of Family, Social and Community Division, Saimah Mokhtar hopes parents take the ban on Valentine’s Day celebration seriously as it has elements of Christianity and mixed with vices forbidden by Islam.
The programme called “Jerat Hari Valentine” (Valentine’s Day Trap) targets several locations in Kuala Lumpur, said Jakim director-general Datuk Othman Mustapha. (Bernama. Now Jakim wants parents to ban Valentine’s Day celebration. Malaysian Chronicle. February 3, 2013. http://www.malaysia-chronicle.com/index.php?option=com_k2&view=item&id=51672:now-jakim-wants-parents-to-ban-valentines-day-celebration&Itemid=2)
Notice that many of the Muslims associate Valentine’s Day with Christianity (obviously the false compromising kind) and sin.
In other words, Valentine’s Day causes the name of Christ (through the term ‘Christianity’) to be blasphemed among the Gentiles (Romans 2:24; Isaiah 52:5)!
Valentine’s Day causes the name of Christ (through the term ‘Christianity’) to be blasphemed among the Gentiles–which is something that the Bible warns against doing:
24 For “the name of God is blasphemed among the Gentiles because of you,” as it is written. (Romans 2:24)
How does this pagan holiday help get the true gospel out?
It does not.
And that is the point.
Of course, Valentine’s Day is NOT a real Christian holiday and does have its basis in sinful pagan practices.
Jesus did not observe Valentine’s Day or anything close to it.

Valentine’s Day is not a biblical holiday.
It is essentially based upon lawlessness and does not edify Christ. 13 years ago, an article in Christianity Today stated:
There are more tales of the “origins” of Valentine’s Day than arrows in Cupid’s quiver. As expected, most have something to do with pagan ritual (pretty much every holiday—from Christmas to Mother’s Day—has something to do with pagan ritual). Four centuries before Christ, Romans had a day called Lupercalia. Without going too much into it, I’ll sum it up as a sexual lottery. Pull names out of a box at random and couple with a young member of the opposite sex. After a year, you get to pick another name (Olsen T. Then Again Maybe Don’t Be My Valentine. Christianity Today. February 12, 1999).
The modern practice of giving cards to ask/tell someone to “be my Valentine” seems to be a holdover from the ancient sexual lottery.
None who profess Christ should observe this February “holiday”–it simply is not a Christian holiday. It began as a sexual lottery and still has sexual ramifications, even in the 21st century. Modern Muslims and modern Catholics realize this, shouldn’t you?
For more information, please consider studying the following articles:
Valentine’s Day: Its Real Origins Christianity Today suggests that Valentine’s Day is good for Christians to observe. Is this true?  There is also a YouTube titled Should Christians Observe Valentine’s Day?
Is There “An Annual Worship Calendar” In the Bible? This paper provides a biblical and historical critique of several articles, including one by WCG which states that this should be a local decision. What do the Holy Days mean? 


Source: cogwriter.com

~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~
ویلنٹائن ڈے کی مخالفت کیوں؟

ویلنٹائن ڈے کے حوالے سے ہمارے ہاں تین مختلف قسم کے ردعمل موجود ہیں۔ کچھ لوگ اس کے حق میں ہیں، اسے پروموٹ کرتے اور اس کے لئے دلائل دیتے ہیں، چونکہ اس معاملے میں کارپوریٹ معاملات شامل ہیں۔ بعض پراڈکٹس ویلنٹائن کے حوالے سے فروخت ہوتی ہیں، اس لئے کنزیومر ازم بھی ساتھ شامل ہو جاتا ہے۔ ویلنٹائن ڈے کی پروڈکٹس (چاکلیٹ، پھول، ٹیڈی بیئر وغیرہ) کی فروخت سے جن کے مفادات وابستہ ہیں، ان کی حمایت کی وجہ سمجھ بھی آتی ہے، مگر ویلنٹائن کو نظریاتی اور فکری بنیادوں پر سپورٹ فراہم کرنے والا حلقہ بنیادی طور پر یا تو عیش پرست ہے جو موج مستی کرنا پسند کرتے ہیں یا پھر یہ لبرل عناصر ہیں،جو فرد کی آزادی کے موید ہیں۔ جس کا جو جی چاہے ، وہ کرے، کوئی پابندی نہ لگائی جائے۔ ادھر ویلنٹائن کی مخالفت کرنے والے حلقے میں روایتی مذہبی لوگوں کے علاوہ لوئر مڈل کلا س کی روایتی اخلاقیات والے لوگ شامل ہیں، جن کے خیال میں اپنی مشرقی اور اسلامی اقدار کی حفاظت کرتے ہوئے ہمیں اپنے بچوں کو مغرب کی تہذیبی یلغار سے بچاناچاہیے۔
ویلنٹائن ڈے کی حمایت میں تین چار دلائل دئیے جاتے ہیں۔'' یہ محبت کے اظہار کا دن ہے، اس پر پابندی کیوں لگائی جائے؟انسانی زندگیوں میں نفرتیں اس قدر زیادہ ہوچکی ہیں ، اگر ایک دن محبت کے نام کر دیا گیا ہے تو اس میں کیا برائی ہے؟ نوجوان لوگ کچھ دیر کے لئے خوش ہوجائیں، کچھ ہنس کھیل لیں تو کون سی قیامت آ جائے گی، مولوی حضرات کسی کو خوش دیکھ نہیں سکتے ... وغیرہ وغیرہ۔ ‘‘ایک اور دلیل جو عام طور سے دی جاتی ہے، ''ویلنٹائن ڈے صرف لڑکے اور لڑکی کی محبت کا دن نہیں ہے، محبت کا صرف یہی رنگ تو نہیں ، ماں ، باپ ، بھائیوں وغیرہ کو بھی پھول دئیے جاسکتے ہیں۔ پرخلوص محبت کا اظہار ہی ہے، ایک دن مقرر ہوگیا ہے تو اسے منانے میں کیا حرج ہوسکتا ہے؟ ‘‘بعض لوگ اس الزام پر برہم ہوجاتے ہیں کہ ویلنٹائن ڈے مغرب سے درآمد شدہ تہوار ہے، جھنجھلاہٹ میں یہ ایک ہی فقرہ دہراتے ہیں،''ویلنٹائن مغرب سے آیا ہے تو پھر کیا ہوا؟ اس میں کیا حرج ہے...؟ ‘‘ 
ویلنٹائن ڈے کے حوالے سے کوئی حتمی رائے قائم کرنے سے پہلے دو تین باتیں سمجھ لی جائیں۔ سب سے اہم یہ کہ ہر تہوار یا دن کا ایک خاص پس منظر اور ایک مجموعی تاثر (Overall Impact)ہوتا ہے۔اسی مخصوص پس منظر ہی میں اسے دیکھنا پڑے گا ، یہ ممکن نہیں کہ آپ اس کے کسی ضمنی اثر(Side Effect) کو قبول کر لیں اور صرف اسی کی بنیاد پر رائے قائم کر لیں۔ مثال کے طور پر روزے ہم اللہ کے حکم کی تعمیل میں رکھتے ہیں اور یہ ایک طرح سے تذکیہ نفس کا طریقہ ہے۔ اس کے ضمنی فوائد بے شمار ہوسکتے ہیں، بعض ماہرین اس کے طبی فوائد بھی گنواتے ہیں۔ یہ ثانوی اثرات یا فوائد خواہ جس قدر ہوجائیں، مگر روزے کا بنیادی سبب جو ہے ،و ہی رہے گا۔ ایسا نہیں کہ کوئی سمارٹ ہونے کے لئے روزے رکھنے شروع کر دے، ایسا کرنا ہرگز عبادت نہیں کہلائے گا۔ یہی بات نماز کے بارے میں کہی جاتی ہے۔ اللہ کا حکم ہے، ہمیں رسول اللہﷺ نے یہ سکھایا اور اس کے اجر سے متعارف کرایا۔ اب نماز پڑھنے کے ضمنی اثرات کئی ہوں گے ، بعض سکالر اس میں ورزش کے پہلو کی جانب اشارہ کرتے ہیں، تو کچھ اسے ذہنی سکون کا نسخہ تصور کرتے ہیں وغیرہ وغیرہ۔ یہ سب کچھ اپنی جگہ ،نماز مگر نماز ہی رہے گی، اللہ کی بندگی کا ایک اسلوب، نبیﷺ کے بتائے ہوئے طریقے کے مطابق ۔اس کا مجموعی تاثر بھی وہی رہے گا، اسی سے یہ عبادت پہچانی جاتی ہے۔ تہوار کی بات چل رہی ہے تو عیدکو لے لیں۔ عید الفطر انعام ہے رمضان المبارک کی عبادت کا، اس دن کو اسی پس منظر میں دیکھا اور جانا جاتا ہے۔ 
عیدالضحیٰ میں قربانی کی سنت پوری کی جاتی ہے، تاریخی پس منظر ہے،جس سے اس دن کو پہچاناجاتا ہے۔ 
ویلنٹائن ڈے کا ایک پس منظر ہے، مغربی تاریخ میں کچھ روایات ہیں اور پھر جدید مغربی تاریخ میں اس دن کو منانے کا بدلتا انداز ہے، جس پر اب دو عشروں سے کارپوریٹ روایات اور کنزیومرازم کا غلبہ ہوچکا۔ ویلنٹائن بنیادی طور پر پرو نکاح یا پرومیرج تحریک تھی۔ جب ایک خاص زمانے میں بادشاہ وقت نے نوجوانوں پر شادی کرنے کی پابندی عائد کر دی کہ شادی شدہ لوگ اپنی بیوی بچوں کی محبت میں فوج میں شامل ہونے سے گریز کرنے لگے تھے۔روایت کے مطابق سینٹ ویلنٹائن نے اس ناروا شاہی حکم سے بغاوت کا راستہ نکالا اور نوجوان جوڑوں کی شادیوں کا سلسلہ شروع کر دیا۔اسی جرم میں اسے سزا بھی ہوئی ،مگر یہ سلسلہ چل نکلا۔ بیسویں صدی کے دوسرے نصف حصے میں جب مغرب کی بدلتی اخلاقی قدروں میں شادی کا انسٹی ٹیوشن کمزور پڑنے لگا تو ویلنٹائن ڈے کا انداز بھی بدل دیا گیا۔ اب محبت کرنے والے جوڑوں کے مابین عہد وپیمان اور کھلے اظہار محبت کے لئے اسے استعمال کیا جانے لگا۔ رفتہ رفتہ اس میں کنزیومر ازم کا رنگ بڑھتا گیا۔ اب صرف اظہار کافی نہیں بلکہ سرخ پھول ، چاکلیٹ ، ٹیڈی بیئر وغیرہ لازم ہوگئے، ویلنٹائن ڈنرروایت ہوگئی اور پھر ویسٹرن سٹائل میں رومانوی شام منانے بلکہ زیادہ کھلے الفاظ میں شب بسری کے تمام لوازمات شامل ہوتے گئے ۔
ویلنٹائن ڈے کی مغربی روایت میں اور جو لوگ پاکستان جیسے ملک میںیہ دن رائج کرنا چاہتے ہیں، ان سب پر یہ واضح ہے کہ یہ خالصتاً مرد و عورت کے مابین اظہار محبت کا دن ہے۔ یہ اظہار محبت بھی مغربی کلچر سے مستعار یا اخذ کردہ ہے۔ مشرقی کلچر اور اسلامی روایات میں جس کی قطعی گنجائش نہیں۔ جس طرح کسی نئی چیز کو معاشرے کے لئے قابل قبول بناتے ہوئے پہلے کچھ تکلفات اور ادب آداب کا لبادہ پہنایا جاتا ہے‘ اسی طرح اس دن کے حوالے سے کہہ دیا جاتا ہے کہ اسے ماں باپ یا بہن بھائیوں سے محبت کے اظہار کے لئے بھی استعمال کیا جا سکتا ہے۔ نہیں جناب، یہ دلیل درست نہیں ہے۔ یہ صرف ایک حیلہ، دھوکہ اور تنقید کرنے والوں کا منہ بندکرنے کا حربہ ہے۔ ہمیں اپنے والدین اور بہن بھائیوں سے اظہار محبت کے لئے غیر اخلاقی، مشکوک پس منظر والے کسی دن کی ضرورت نہیں۔ اول تو مقدس رشتوں کے ساتھ اظہار محبت کو الگ دن کی ضرورت نہیں۔ ہمارا مذہب، ہماری روایات ہمیں یہ سکھاتی ہیں کہ اپنے ان عزیز رشتوں کے ساتھ محبت ہمیں ہر لمحہ اپنے دل میں زندہ رکھنی اور اپنے عمل سے اسے ثابت کرنا ہے۔ کسی فرماں بردار اولاد کو اپنی سعادت مندی اور محبت ثابت کرنے کے لئے سرخ پھولوں کی ضرورت نہیں۔ اسے صبح سے شام تک کے عمل سے جھلکنا چاہیے۔ اگر ایسا نہیں تو پھر خواہ کتنے پیسے پھولوں، چاکلیٹوں پر خرچ کر دئیے جائیں، وہ سب بیکار ہیں۔ 
ایک اور اہم نکتہ سمجھنا ضروری ہے کہ محبت کا جذبہ قدرت کا تحفہ ہے، مرد اور عورت کے درمیان محبت ہونا فطری چیز ہے، مخالف جنس کے لئے کشش رکھنابھی ایک حقیقت ہے۔ اس کشش، محبت اور تعلق کو دیرپا بنیادوں پر استوار کرنے اور پھر قائم رکھنے کا ایک طریقہ، قرینہ اور سلیقہ ہے۔ ہماری اسلامی اور مشرقی روایات میں مرد اور عورت ایک خاص اسلوب اور طریقے سے رشتے میں بندھتے ہیں۔ ہمارا مذہب اور سماج اس کی اجازت دیتا ہے، بلکہ حوصلہ افزائی کرتا ہے۔ یہ صرف اسلام کا معاملہ نہیں بلکہ مشرقی تہذیب میں رچے بسے غیر مسلموں کی بھی یہی روایات اور آداب ہیں۔ اس خطے میں رہنے والے ہندو گھرانے ہوں، سکھ یا عیسائی... ہر ایک میںبزرگوں کا احترام کیا جاتا ہے، والدین کی رضامندی سے معاملات آگے بڑھائے جاتے اور اپنی محبت کے جذبوں کو نفاست اور شائستگی کا لبادہ پہنا کر مزید خوبصورت بنایا جاتا ہے۔ اپنی انہی روایات کا احترام کرنا چاہیے، ہر معاشرے کے کچھ بنیادی اجزا ہوتے ہیں، سماج کا فیبرک جن سے جڑا ہوتا ہے، انہیں ادھیڑنے کی کوشش پورے سماج کو درہم برہم کر دیتی ہے۔ 
ویلنٹائن ڈے کی مخالفت کرنے والے جنونی ، متشدد یا محبت کے مخالف نہیں۔ ان کے دلوں میں بھی بہاریں آتی، جذبے مہکتے اور آنکھیں سپنے دیکھتی ہیں۔ یہ لوگ مگر اپنے جذبات کے کھلے، بے لگام اظہار کو حیوانی فعل گردانتے ہیں۔ یہ چاہتے ہیں کہ محبت جیسے حسین ترین جذبے کی توہین نہ کی جائے۔ عامیانہ، سطحی اور بازاری انداز سے اس کے اظہار کے بجائے مہذب، شائستہ انداز میں رشتوں کے تقدس اور نزاکتیں ملحوظ خاطررکھی جائیں۔ خواہشات کی اس انداز میں تکمیل محبت کو نہ صرف مقدس اور پاکیزہ بنا دیتی ہے بلکہ رب تعالیٰ کے بتائے ہوئے طریقے پر عمل کرنے سے رحمتیں اور برکات بھی شامل ہو جاتی ہیں۔ 
Source: http://dunya.com.pk/index.php/author/amir-khakwani/2016-02-13/14364/56620965#tab2