Featured Post

Wake up Now ! جاگو ، جاگو ، جاگو

Wake up Pakistan ! Presently the Muslim societies are in a state of ideological confusion and flux. Materialism, terrorism,...

Saturday, May 10, 2014

نائیجیریا میں انتہاپسندی Violence in Nigeria by "Boko Haram" NOT Islamic, apathy of religious parties?

Free%20Books%20%26%20Articles

YOU don’t have to be living abroad to get a sense of the white-hot anger people around the world are feeling towards Boko Haram, the Nigerian equivalent of the Pakistani and Afghan Taliban.

Just go to Twitter and watch the stream of abuse directed at the kidnappers of nearly 300 girls in the remote Nigerian town of Chibok. The hashtag #BringBackOurGirls is so active that you can barely read a post before another hurtles along.

But in Pakistan, we are so busy contemplating our collective navel that the event has barely registered. Apart from an eloquent op-ed comment from Mahir Ali, and a Dawn editorial demanding condemnation of this brutal act by the Muslim world, I have not found much else. Our private TV channels are too busy bashing each other, or discussing the crisis of the day, to bother their viewers with distant tragedies.

But preoccupied as we are by local events, even we should understand that there is a world outside, and there are events that lay a certain moral responsibility on all of us. Malala Yousafzai is a case in point: millions of Pakistanis keep asking why people around the world have been making such a fuss about her.

In a country where the innocent suffer violence every day, perhaps this is a legitimate question. But Malala has attained her iconic position because she has come to stand for the right of girls to get an education. Similarly, the plight of hundreds of young Nigerian schoolgirls kidnapped — with many probably sold as sex slaves — has horrified the world.

One sign of the anger and the wish to do something is the American and British offer to dispatch teams to Nigeria to help the government trace the kidnap victims. There are reports that intelligence officers have already reached Nigeria. Other countries, including China, have also offered to help.

Apart from the hatred of Muslim extremists towards modern education, Nigeria and Pakistan have other similarities. Our tribal areas and Nigeria’s dense forests in its porous north-eastern border near Cameroon offer insurgents perfect cover, while also being very difficult terrain for regular forces to operate in.

What has been puzzling and infuriating in equal measure has been the casual approach taken by President Goodluck Jonathan. It has taken his government three weeks to announce a reward for information about the kidnapped girls’ whereabouts.

Ironically, the same day saw a 12-hour Boko Haram attack on a market town near the Cameroon border that left over 300 dead. This audacious assault is yet another reminder of the reign of terror this criminal gang has unleashed across large swathes of Nigeria.

Currently, the country’s capital of Abuja is hosting the World Economic Forum. Recently, Nigeria was hailed as being Africa’s biggest economy. So Nigerians ask, with some justification, why the state is unable to protect them: last year, the country spent $6 billion on defence.

Certainly, poor governance and massive corruption have contributed to the failure of the state in its largely Muslim northern provinces. Here, Boko Haram has carried out the most brazen attacks with scarcely any serious challenge from the Nigerian defence forces.

Now that Western security teams will be assisting Nigeria in search and rescue operations, I have little doubt many liberals will join Islamist groups in a chorus to condemn Obama and Cameron for their interference in a sovereign country’s affairs. In all this, Muslim states have not uttered a squeak, mostly for fear of upsetting their own extremists.

But by their silence, as the recent Dawn editorial rightly noted, they risk being viewed as giving ‘tacit approval’ to the crimes Boko Haram is committing in the name of Islam. We constantly repeat the mantra of Islam being a religion of peace. But an increasing number of non-Muslims disagree.

Whether we like it or not — and most of us don’t — the grim reality is that Muslim extremist groups have killed and maimed across the world, shouting Allah-o-Akbar. Some of these are waging war for their rights, and just happen to be Muslim. But others are using the cover of Islam to satisfy their bloodlust and to grab power.

These elements have tainted the reputation of Islam, and yet the Muslim ummah has remained a silent spectator. Small wonder that increasingly, non-Muslims are becoming convinced that the problem is with Islam itself, and not with a few Muslims.

In our misplaced desire not to criticise groups that fight under the banner of Islam, we refuse to examine closely the cause they say they are fighting for. Boko Haram, led by a madman who wants to sell the girls he has kidnapped, is surely not worth defending, and must be condemned in the most forthright language.
By Irfan Hussain Dawn.com , irfan.husain@gmail.com
  • Boko Haram - Wikipedia, the free encyclopedia

    en.wikipedia.org/wiki/Boko_Haram
    The Congregation of the People of Tradition for Proselytism and Jihad, known by its Hausa name Boko Haram (pronounced [bōːkòː hàrâm]), is an Islamic ...
  • BBC News - Who are Nigeria's Boko Haram Islamists?

    www.bbc.com/news/world-africa-13809501
    3 days ago - Nigeria's militant Islamist group Boko Haram - which has caused havoc in Africa's most populous country through a wave of bombings, ...
  • Nigeria military 'ignored warning of Boko Haram kidnap ...

    news.yahoo.com/nigeria-ignored-warning-boko-hara...
    16 hours ago
    From Yahoo News: Nigeria's military had advanced warning of the April 14 attack by Boko Haram that led to ...
  • Boko Haram attack kills hundreds in Nigeria - Al Jazeera

    www.aljazeera.com/.../boko-haram-attack-kills-hundre...
    3 days ago
    Boko Haram attack has killed hundreds in Nigeria's northeast, multiple sources have said, as police offered ...
  • Nigerian army were warned Boko Haram planned to kidnap ...

    www.dailymail.co.uk/.../British-US-anti-terror-specialis...
    18 hours ago
    The news came as intelligence emerged suggesting the kidnappers, from Al Qaeda-linked group Boko Haram ...
  • نائیجیریا میں انتہاپسندی

    آپ کو اُس اشتعال اور غم و غصے کا اندازہ لگانے کے لیے یورپ یا دنیا کے کسی دوسرے حصے میں رہنے کی ضرورت نہیں جو مہذب دنیا 'باکوحرام‘ کے بارے میں رکھتی ہے۔ نائیجیریا سے تعلق رکھنے والا یہ انتہا پسند گروہ دقیانوسیت، سفاکیت اور درندگی میں افغان طالبان سے مشابہت رکھتا ہے۔ اگر ٹویٹر یا دوسرا سوشل میڈیا استعمال کریں تو آپ کو اندازہ ہو جائے گا کہ لوگوں کے جذبات نائیجیریا کے ایک قصبے چی بوک (Chibok) سے تین سو لڑکیوںکے اغوا پر کس قدر بپھرے ہوئے ہیں۔ آن لائن تبصروں کا سلسلہ جاری ہے اور زندہ ضمیر رکھنے والی دنیا انتہا پسندوں کی مذمت کر رہی ہے؛ تاہم پاکستان میں ہم کنویں کے مینڈکوں کی طرح پانی سے باہر آنے اور پھر نہایت چابکدستی سے واپس اس میں کود جانے کی مشق پر نازاں، ایسے واقعات پر بمشکل اپنا احتجاج ریکارڈ کرانے کی ضرورت محسوس کرتے ہیں۔ ایک دو انگریزی اخبارات میں اسلامی دنیا پر زور دیا گیا کہ وہ مل کر اس گھنائونے فعل کی مذمت کرے، اس کے سوا پاکستانی میڈیا بالعموم خاموش رہا۔ جہاں تک ہمارے پرائیویٹ ٹی وی چینلز کا تعلق ہے تو ان کی اپنی مصروفیات ہیں۔ وقت بچ جائے تو وہ عمران خان، عدالتی معاملات اور انواع و اقسام کے ملائوں کے بیانات کی نذر ہو جاتا ہے۔ 
    اپنے داخلی معاملات کی دلدل میں ہم جتنے بھی دھنسے ہوئے ہوں، یہ بات فراموش نہیںکرنی چاہیے کہ ہم خلا میں نہیں بلکہ انسانوںکی دنیا میں رہتے ہیں۔ اس میں ہونے والے تمام نہیں تو کچھ واقعات ہم پر اخلاقی ذمہ داری کا بوجھ ڈالتے ہیں۔ آج بھی پاکستان میں بہت سے لوگ یہ سوال اٹھاتے ہیں کہ آخر دنیا نے ملالہ یوسف زئی کو اتنی اہمیت کیوں دی۔ ایک ایسے ملک میں‘ جہاں بے گناہ شہری ہر روز سفاکیت کا نشانہ بنتے ہوں‘ اس سوال کا جواز نکلتا ہے، لیکن ملالہ کو یہ شہرت اس لیے ملی (اور اس میں کوئی سازش نہیں) کہ اس نے لڑکیوں کی تعلیم کے لیے آواز بلند کی۔ اسی طرح نائیجیریا میں سکول کی تین سو طالبات‘ جنہیں اغوا کیا گیا اور اب جن میں سے متعدد کو جنسی غلام کے طور پر فروخت کر دیا جائے گا، کے ساتھ پیش آنے والی درندگی نے دنیا کو لرزا کر رکھ دیا ہے۔ 
    امریکہ اور برطانیہ نے اپنے غصے کو مثبت اور عملی شکل میں ڈھالتے ہوئے ان لڑکیوں کا کھوج لگانے اور انہیں رہائی دلانے کے لیے نائیجیریا کی حکومت کی مددکرنے کے لیے امدادی ٹیمیں بھیجنے کی پیش کش کی ہے۔ ایک رپورٹ کے مطابق ان ممالک کے انٹیلی جنس آفیسرز اس افریقی ملک میں پہنچ بھی چکے ہیں۔ اس کے علاوہ چین سمیت دیگر ممالک نے بھی مدد کی پیش کش کی ہے۔ نائیجیریا اور پاکستان میں بہت سی مشترکہ قدریں موجود ہیں۔ دونوں ممالک کے انتہا پسند جدید تعلیم سے نفرت کرتے ہیں۔ کیمرون کی سرحد تک نائیجیریا کے شمال مشرقی علاقوں میں پھیلا ہوا گھنے جنگلات کا سلسلہ انتہا پسندوںکو محفوظ ٹھکانے فراہم کرتا ہے جہاں باقاعدہ فورسز کو ان کے خلاف کارروائی کرنے میں دشواری پیش آتی ہے‘ بالکل ہمارے قبائلی علاقوں کے دشوار گزار پہاڑوں کی طرح جو طالبان کے علاوہ دنیا بھر کے انتہا پسندوں کے لیے جنت بنے ہوئے ہیں۔ 
    اس موقع پر نائیجیریا کے صدر گڈلک جوناتھن کا رویہ بھی انتہائی پریشان کن اور اشتعال انگیز رہا کیونکہ اُن کی حکومت نے اغوا کے تین ہفتے بعد اعلان کیا کہ جو بھی اغوا ہونے والی لڑکیوں کے بارے میں اطلاع دے گا‘ اُسے انعام دیا جائے گا۔ اُسی دن 'باکوحرام‘ نے کیمرون کی سرحد کے نزدیک حملہ کیا اور تین سو افراد کو ہلاک کر دیا۔ اس سے اندازہ ہوتا ہے کہ نائیجریا میں اس گروہ کی کتنی دہشت ہو گی۔ حال ہی میں ملک کے دارالحکومت ابوجا (Abuja) میں ورلڈ اکنامک فورم کا اجلاس ہو رہا ہے۔ نائیجیریا کو افریقہ کی سب سے بڑی معاشی قوت ہونے کا درجہ بھی حاصل ہے؛ چنانچہ اس کے باشندے اپنی حکومت سے سوال کرنے میں حق بجانب ہیں کہ وہ ان کا تحفظ کرنے سے قاصر کیوں ہے؟ گزشتہ سال نائیجیریا نے دفاعی بجٹ کی مد میں چھ بلین ڈالر خرچ کیے۔ دراصل اس کے مسلم آبادی کے اکثریتی صوبوں میں ہونے والی بدعنوانی اور مجموعی طور پر ناقص نظم و نسق کی وجہ سے حکومت 'باکو حرام‘ کے سامنے عملی طور پر کوئی موثر کارروائی کرنے کی پوزیشن میں نہیں۔ 
    اب جبکہ مغربی ممالک کی سکیورٹی ٹیمیں نائیجیریا کی حکومت کی معاونت کے لیے آپریشن کا آغاز کرنے والی ہیں، مجھے یقین ہے کہ تمام اسلامی دنیا میں انتہا پسند مذہبی جماعتوں کے ساتھ ساتھ لبرل آوازیں بھی صدر اوباما اور ڈیوڈ کیمرون کی مذمت شروع کر دیں گی کہ وہ ایک آزاد ملک کی خود مختاری کو پامال کر رہے ہیں۔ کسی مسلم ریاست نے سرکاری طور پر لڑکیوںکے اغوا کی مذمت نہیں کی، مبادا وہ اپنے مقامی انتہا پسندوں کو ناراض کر بیٹھیں، کیونکہ اکثر ریاستوں کے حکمران ان گروہوں سے جان کی امان پا کر ہی اقتدار کے مزے لوٹ رہے ہیں۔ ایک انگریزی اخبار کے اداریے کے مطابق ان ریاستوںکی خاموشی دراصل باکو حرام کے جرائم کی خاموش حمایت کے مترادف ہے کیونکہ یہ گروہ تمام جرائم مذہب کے نام پر کر رہا ہے۔ 
    اس حقیقت سے انکار ممکن نہیں کہ اسلام ایک امن پسند مذہب ہے لیکن ہمارا رویہ غیر مسلموںکو اس سے اختلاف کرنے کا جواز فراہم کرتا ہے۔ ہم اس حقیقت کا سامنا کرنا پسند کریں یا شتر مرغ کی طرح ریت میں سر چھپا لیں، حقیقت یہی ہے کہ انتہا پسندوں نے دنیا بھر میں قتل و غارت کا بازار گرم کر رکھا ہے۔ جب وہ اپنے مخالفین کو گولیوں سے بھونتے ہیں یا ان کے سر قلم کرتے ہیں تو مغربی دنیا کو اس کی تشریح سے نہیں روکا جا سکتا۔ دوسری طرف یہ بھی حقیقت ہے کہ ان میں سے زیادہ تر گروہوں کا اسلام سے کوئی تعلق نہیں، وہ اپنے مخصوص ایجنڈے کی تکمیل کے لیے مذہب کا نام استعمال کرتے ہیں۔ یہ ان کی عسکری حکمت عملی ہے لیکن افسوس کہ ہمارے ملک کا ایک بڑا طبقہ انہیں مجاہدین سمجھتا ہے۔ زیادہ عرصہ نہیں گزرا جب ہمارے گلی بازار ڈرون حملوں کی مذمت کے نعروں سے گونج رہے تھے۔ افسوس، جس دوران امت مجموعی طور پر خاموش بلکہ خوفزدہ تماشائی بنی ہوئی ہے، مغربی حلقے اس بات پر قائل ہوتے جا رہے ہیںکہ اصل خرابی چند مسلمان گروہوں (انتہا پسندوں) میں نہیں بلکہ مجموعی طور پر ہے۔ افسوس، ہمارے رویے نے اُنہیں اس بات کا جواز فراہم کیا ہے۔ جب بھی کوئی گروہ اسلام کا نام لے کر ظلم و ستم کا بازار گرم کرتا ہے، ہم اس کے افعال کا جواز گھڑنے میں لگ جاتے ہیں۔ باکو حرام کے درندہ صفت جنگجوئوںکی طرف سے لڑکیوں کے اغوا کا جہادیوں کے حامی کیا جواز فراہم کریں گے؟ کیا اس فعل کی سخت ترین الفاظ میں مذمت نہیں کی جانی چاہیے؟ یا پھر ان لڑکیوں کا اغوا اور آبروریزی بھی کسی ڈرون حملوں کا ہی رد ِعمل ہے؟
    http://dunya.com.pk/index.php/author/irfan-hussain/2014-05-10/7034/49109606#tab2
    By Irfan Hussain


    * * * * * * * * * * * * * * * * * * *
    Humanity, Religion, Culture, Ethics, Science, Spirituality & Peace
    Peace Forum Network
    Over 1,000,000 Visits
    * * * * * * * * * * * * * * * * * * *