Featured Post

Wake up Now ! جاگو ، جاگو ، جاگو

Wake up Pakistan ! Presently the Muslim societies are in a state of ideological confusion and flux. Materialism, terrorism,...

Friday, October 26, 2012

حج عید ظہا تمام دنیا میں ؟ Hajj and Eid on one day?

Unfortunately it is very difficult for Muslims all over the world to celebrate Eid one day though science has progressed. What to talk of world we can not agree on one Eid day in Pakistan. The development of modern science should be taken to advantage, keeping in view the Islamic traditions and Islamic law [fiqh] the scholars may consider   اجتہاد Ijtihad. The goal is not to put any new innovation 
or division to create sects.
 The Islamic scholars should consider that Hajj is the only single pillar of Islam which is related with the holy place Makkah in the month of Zilhajj. While Salah, Zakah and Fasting can be performed any where . Hajj can only be performed at Makkah. It appears strange that Hajj is performed at Arafat on 25 October 2012 and in Pakistan later, followed by animal sacrifice on Eid ul Adha. 

Hence the Hajj and Eid ul Hajj can be celebrated by Muslims the world over on the day it is performed at Makkah. This will display unity of Ummh.
As far as sacrificial offering is concerned the 3 days flexibility is adequate. 
Again It is cautioned that it is not intended to introduce a new innovation or sects among Muslims. Ijtihad is the job of expert scholars only..


بدقسمتی سے ہم مسلمانوں کے لیے بہت مشکل ہے کہ تمام دنیا میں 
ایک دن عید الفطر منا سکیں اگرچہ سائنس بہت   ترقی  کر چکی ہے . دنیا تو دور کی بات ہم پاکستان میں ایک دن عید پر متفق نہیں ہو سکتے . ضرورت ہے کہ جدید سائنس ور مواصلاتی روابط  کی ترقی  کا فائدہ اٹھاتے ھوے کوشش کی جاۓ کہ اسلامی احکام ور روایات کو مد نظر رکھتے ھوے علماء اکرام اجتہاد  کرنے کا   سوچیں .   واضح رہے کہ کسی نئی بدعت یا تفرقہ ڈالنا مقصد نہیں ہونا چا ہے . اس بات کا خاص خیال رکھنا ضروری ہے .  

علماء اکرام سوچیں کہ حج,  اسلام کے پانچ بنیادی ارکان کا ایک واحد ستون ہے جو کہ صرف اور   صرف مکّہ مکرمہ میں زلحج کے ماہ میں مخصوص طریقے سے ادا کیا جا سکتا ہے . جبکہ نماز، زکات ، روزہ کے لیے مکّہ مکرمہ جانا ضروری نہیں . لہٰذا حج اور عید الاظہا تمام دنیا کے مسلمان مکّہ مکرمہ میں حج کے ساتھ منا سکتے ہیں . یہ عجیب ہے کہ مکّہ مکرمہ میں حج ٢٥ اکتوبر کو ہوتا ہے اور پاکستان میں بعد میں اور ہم کہتے ہیں کہ آج حج  ہے جبکہ مکّہ مکرمہ میں حج گزر چکا ہےعلماء اکرام اجتہاد کرتے ہوائی تمام فقہ کے معاملات کو نظر میں رکھیں اور یہ بھی کہ جدید مواصلاتی روابط کی وجہ سے ایسا ہونا ممکن ہے. جہاں تک قربانی کا تعلق ہے قربانی کے تین دن ہوتے ہیں جو کافی حد تک گنجائش دیتے ہیں .ایک مرتبہ پھر واضح رہے کہ کسی نئی بدعت یا تفرقہ ڈالنا مقصد ہیں ہونا چا ہے. 
اجتہاد
 کرنا صرف 
علماء اکرام کا کام ہے

Read more: Free-Books  <<Click here>>>