Featured Post

Wake up Now ! جاگو ، جاگو ، جاگو

Wake up Pakistan ! Presently the Muslim societies are in a state of ideological confusion and flux. Materialism, terrorism,...

Sunday, June 26, 2016

Democracy’s woes


OVER 2,000 years ago, Plato was sceptical of democracy because he felt that voters, even though restricted to property-owning male citizens, were swayed easily by the rhetoric of politicians.
Democracy disappeared for over 1,500 years following its demise in Athens and it was only then that its slow evolution began in England and spread to other parts of the world. Doubts regarding its efficacy persisted but were countered by arguments that it was the worst form of government except for all others.
Not that this was considered universally applicable. During colonialism it was asserted that natives were not ready for democracy. Similar reservations regarding the developing world persisted beyond the end of colonialism. In the 1990s, the late Richard Hol­brooke was reported to have said: “Suppose elections are free and fair and those elected are racists, fascists, separatists — that is the dilemma.”
We rightly attribute these attitudes to the realpolitik that rationalised empire-building and later interventions to replace democratic governments with pliant authoritarian ones. They were just as self-serving as their more recent converse — regime-change with the professed aim of promoting democracy.
Nevertheless, the intellectual challenge to democracy was unaddressed — after all Hitler was popularly elected and voters have often elected leaders who they themselves condemn as thieves and rascals. Genuine doubts regarding the capacity of the electoral process to yield competent leadership remain and the democratic experiment is not old enough to argue unequivocally that the case is closed.
A review of the rules underpinning the poll process is needed.
The revival of this debate is due to the turmoil in the democratic homeland — governmental gridlock, the surge in extremist sentiment in Europe, and the emergence of Trump as a presidential candidate in the US. As one comment put it: “With a vain fool like Trump on the political stage in America and racist bigots and know-nothings voting all over the world it’s a good time to ponder the wisdom of the political systems that allow this to happen.”
In this context, political theorist Daniel Bell has made waves with his book, The China Model: 

The China Model: 
Political Meritocracy and the Limits of Democracy, in which he questions the article of faith that one-person-one-vote is the best way of selecting leaders. He offers as a credible alternative the still-evolving Chinese model based on democratic local elections and meritocratic selection of top national leaders. In this system, local leaders handling basic issues of service delivery remain accountable to voters but national leaders who need to make complex and unpopular decisions are chosen based on knowledge and experience.

Similar reservations about democratic decision-making have been expressed more recently by Richard Dawkins with reference to the UK referendum on EU membership.  Dawkins asks: “How should I know? I don’t have a degree in economics. Or history. How dare you entrust such an important decision to ignoramuses like me... You want your surgeon to know anatomy… Why would you entrust your country’s economic and political future to know-nothing voters like me?”
Heated exchanges on the relative merits of Western and Asian values erupted a few decades back in the wake of the East Asian crisis but the self-serving claims lacked objectivity. The challenge from scholars like Bell and Dawkins carries more legitimacy because they do not have political or economic interests at stake.
The point here is not to assert that democracy in Pakistan should be replaced by military dictatorship or monarchy. Rather, it is to urge a critical examination of the rules underpinning the electoral process by which leaders are selected and made accountable. Much has changed since the birth of democracy in England — corporations more powerful than many countries did not exist then and neither did the means of swaying voters now available. With the visible transition of democracy to plutocracy in the US and the dangerous manipulation of extremist sentiments, it is obvious that reforms are required to repair the systemic distortions that have accrued over time.
Electoral systems are nothing more than sets of rules. Consider some that exist in the US — primaries to select party candidates, first-past-the-post elections, super delegates with decisive power, the Electoral College, and treatment of corporations as individuals. Change any of these and the outcomes may be different. At the same time, failure to agree on rules can have tragic outcomes as witnessed in the Indian subcontinent in 1947.
Debates are structured around ideas and critical ideas are nurtured in schools and colleges that have failed to do an adequate job in Pakistan. It is no wonder that our popular discourse remains mired in a simplistic choice between democracy and dictatorship ignoring the hard work of assessing the set of electoral reforms that would improve governance and promote leaders that are more competent and accountable to citizens.
Democracy’s woes
by Anjum Altaf, dawn.com
The writer moderates the South Asian Idea, a learning resource for college students. http://www.dawn.com/news/1267272/democracys-woes

Democracy’s woes  by Anjum Altaf, dawn.com. The writer moderates the South Asian Idea, a learning resource for college students. http://www.dawn.com/news/1267272/democracys-woes


Read more by Plato:     
As a just and healthy person is governed by knowledge and reason, a just society must be under the control of society’s most cultivated and best informed minds, its “lovers of wisdom.” Just societies cannot be run by big money or armed forces with their too narrow agendas. Limitless desire for wealth and blind ambition must be watched and contained as potential public dangers. The most informed minds must determine objectively, with due consideration of all points of view, what the most healthy and practical goals for the commonwealth are.》》》》  http://faculty.frostburg.edu/phil/forum/PlatoRep.htm

Monday, June 13, 2016

Declining Political Role of Religion in the life of people now مذہبیت ، سیکولر ازم اور ترقی

Long shadow of the Enlightenment:

IN a recent survey, more people in the UK ticked the ‘none of the above’ box when asked about their faith than those who chose a belief from all those mentioned. For the first time, more Britons declared themselves to be non-believers than those who asserted their belief in Christianity. This is a significant shift in a country whose official faith is identified with the Church of England. Keep readinng >>>>>

برطانیہ میں کیے گئے ایک حالیہ سروے میں عوام نے دیے گئے تمام آپشنز کو مسترد کرتے ہوئے ''ان میں سے کوئی نہیں ‘‘ کے آپشن پر نشان لگایا۔ اُن سے پوچھا گیا سوال یہ تھا کہ وہ جس عقیدے پر ایمان رکھتے ہیں، اُسے مارک کریں۔ شاید تاریخ میں پہلی مرتبہ ایسا ہوا تھا کہ برطانوی افراد نے خو دکو مسیحی پیروکار ہونے کی بجائے ''بے دین ‘‘ قرار دیا تھا۔ یہ ایک ایسے ملک میں ہونے والی بہت بڑی پیش رفت ہے جس کے سرکاری مذہب کو چرچ آف انگلینڈ کے ساتھ وابستہ کیا گیا تھا۔ 
باعمل عیسائیوں کی تعداد میں کمی کا اظہار اتوار کو ملک بھر کے چرچوں میں خالی نشستوں سے بھی ہوتا ہے ۔ اورچرچ سروس میں شریک ہونے کے لیے آنے والے افراد بھی کسی مذہبی جذبے سے سرشار نہیں ہوتے، وہ محض ایک سماجی رسم نبھانے کے لیے چلے آتے ہیں۔ یہ درست ہے کہ ابھی تک شادیاں ، بچوں کا بپتسمہ اورمرحومین کے جنازے چرچ میں ہی ہوتے ہیں، لیکن یہ بھی حقیقت ہے کہ زیادہ تر پیدا ہونے والے بچوں کے والدین شادی شدہ نہیں ہوتے ۔نیز بہت سے جوڑے مذہبی رسومات کی بجائے سول میرج کو ترجیح دیتے ہیں۔ زیادہ تر جوڑے عمر بھر شادی کے بغیر ساتھ رہتے ہیں اور ''علیحدگی ‘‘ کی صورت میں اُن کے بھی وہی حقوق ہوتے ہیں جو روایتی طو رپر شادی شدہ جوڑوں کے ۔ 
اس سے یہ حقیقت واضح ہوتی ہے کہ برطانیہ بھی مذہب کے دور کو چھوڑ کر آگے بڑھ رہا ہے ۔ یہاں مذہب کا افراد کی روز مرہ 
کی زندگی یا اجتماعی مکالمے میں کوئی کردار نہیں رہا۔ اور یہ تبدیلی صرف برطانیہ میں ہی نہیں، مغربی یورپ اور سکینڈے نیویا کے بہت سے ممالک میں دکھائی دیتی ہے ۔ ایک سروے کے مطابق سویڈن میں، جس میں مسیحی افراد کل آبادی کا 80 فیصد ہیں، صرف 16.5 فیصد افراد نے کہا کہ اُن کی زندگی میں مذہب کا کچھ کردار ہے ۔ فن لینڈ، ناروے اور ڈنمارک میں ہونے والے سروے بھی ایسے ہی نتائج کے حامل ہیں۔ آسٹریلیا، نیوزی لینڈ اور برطانیہ جیسے ممالک میں یکساں رجحان دکھائی دیتا ہے ۔ یہاں نوجوان نسل کی ایک بڑی تعداد خود کو لادین قرار دیتی ہے ۔ تاہم مذہب سے دوری اور چرچ حاضری میں نمایاں کمی کے باوجود ان ممالک میں قانون کا نظام درہم برہم نہیں ہوا ، اور نہ ہی شخصی یا عوامی اخلاقیات میں کوئی کمی دیکھنے میں آئی ۔ بلکہ یورپ کے کچھ ممالک میں حالیہ برسوں میں جرائم اور الکحل کے استعمال میں کمی کی رپورٹس ملی ہیں۔ مندرجہ بالا ممالک ٹرانسپرنسی انٹر نیشنل کی بدعنوان ممالک کی فہرست میں بہت نیچے اور انسانی خوشی کی فہرست میں بہت بلند درجے پر ہیں۔ اس میں حیرت کی کوئی بات نہیں کہ ان ممالک کا جی ڈی پی بہت بلند ہے ؛ چنانچہ ایک بات برملا کہی جاسکتی ہے کہ اس وقت سیکولر ریاستیں دنیا میں ترقی اور خوشحالی کے سفر میں سب سے آگے ہیں۔ 
دوسری طرف وہ ریاستیں ، جو خود کو کسی نہ کسی عقیدے سے وابستہ قرار دیتی ہیں، اُن کا عالمی ترقی میں کوئی درجہ یا کردار نہیں۔ یہ ریاستیں خواہ مسلم ہوں یا ہندو، بدھ یا دیگر انتہا پسندانہ سوچ رکھنے والی، زیادہ تر پسماندہ، غریب ، جاہل اور کثیر آبادی رکھنے والی ہوںگی۔ گزشتہ چند عشروں کے دوران کچھ ایشیائی ریاستوں، جیسا کہ چین ، جاپان اور جنوبی کوریا نے بے پناہ ترقی کی ہے۔ ان میں کوئی ملک بھی متشدانہ نظریات کی آبیاری نہیں کرتا، جرائم کنٹرول میں ہیں اور عوام خوشحال۔ ان میں چین اعلانیہ طور پر خود کو ایک لادین ریاست قرار دیتا ہے ۔ اگرچہ تمام مذہب امن اورعدم تشدد کے داعی ہیں لیکن ستم ظریفی یہ ہے کہ ان مذاہب پر یقین رکھنے والے ان نظریات سے دور دکھائی دیتے ہیں۔ حتیٰ کہ بدھ مذہب کے پیروکار بھی،جنہیں انتہائی پرامن سمجھا جاتا ہے ، پرتشدد کارروائیوں میں ملو ث پائے گئے ہیں۔ سری لنکا میں ہونے والی ہولناک خاجہ جنگی کے دوران بدھ آرمی پر جنگی جرائم کے ارتکاب کا الزام لگا، میانمار میں بدھ راہب روہنگیاکے مسلمانوں کے خلاف وحشیانہ تحریک چلاتے دکھائی دیے، اورتھائی لینڈ کے جنوبی علاقوں میں بدھ فوج علیحدگی پسند مسلمانوں کے خلاف کم درجے کی خانہ جنگی میں مصروف ہے ۔ 
زیادہ تر مسلمان ریاستوں میں مسلمانوں کے ہاتھوں مسلمانوں کا قتل اتنا عام ہے کہ اسے دہرانے کی ضرورت نہیں۔ اگرچہ مسلمان اس بات کو دہراتے نہیں تھکتے کہ اسلام امن کا مذہب ہے لیکن دیگر دنیا اس بات کو تسلیم نہیں کرتی۔ شدت پسندانہ نظریات نے ہی القاعدہ سے لے کر داعش جیسے دہشت گروہوں کو تحریک دی ہے ۔انڈیا میں شدت پسند ہندوقوم پرستی نے معاشرے کو اس طرح جکڑ لیا ہے جس سے گزشتہ کئی صدیوں سے ہندو معاشرہ ناآشنا تھا۔ اس سے پہلے ہندو مذہب ، جو کئی ایک دیوتائوں پر یقین رکھتا ہے ، اپنے عقیدے پر سمجھوتہ کیے بغیر دیگر مذاہب کے لیے لچک رکھتا تھا ، لیکن آج ہندوتوا پر اس بات کا اطلاق نہیں ہوتا۔ آج اس عقیدے پر یقین رکھنے والے لاکھوں پیروکار شدت پسند جنگجو بن کر سامنے آرہے ہیں۔ 
یہ مثالیں سامنے رکھتے ہوئے کیا یہ سوال نہیں پیدا ہوتا کہ آخر سیکولرازم میں کیا حرج ہے ؟کیا مذہب کے نام پر جنونیت سے بھری دنیا میں یہی ایک جائے مفرباقی نہیں بچی؟مختلف نظریات کے ادغام سے وجود میں آنے والی 18ویں صدی کی روشن خیالی ایک سیکولر تصور کی بات کرتی تھی کہ انتہا پسند انہ چرچ کو ریاست سے الگ کردیا جائے ۔ 1789 ء کا امریکی دستور سیکولر ازم کا پہلا رہنما اصول تھا۔ اس کے بعد بہت سی جمہوری ریاستوں نے اس اصول کی اس طرح پیروی کی کہ مذہب کو عوامی زندگی میں کردار ادا کرنے سے روک دیا۔ اس کے نتیجے میں وہ ترقی یافتہ اور خوشحال ہوگئیں۔ آج دنیا ان کی ترقی کو رشک بھری نگاہ سے دیکھتی ہے ۔ ترقی پذیر دنیا میں اسی دوران ایک اور رجحان ابھرا۔ نوآبادیاتی دور اور دوسری جنگ ِ عظیم کے خاتمے کے بعد، جب مغربی طاقتیں واپس چلی گئیں تو آزاد ہونے والی ریاستوں میں جو اشرافیہ اقتدار میں آئی، وہ سیکولر ہی تھی لیکن اس کی بدعنوانی اور ناقص گورننس کی وجہ سے ایک خلا پیدا ہوا اور مذہبی جماعتوں کو اس میں پائوں جمائے کا موقع مل گیا۔ چنانچہ ان ریاستوں میں جیسے جیسے سیکولرازم دم توڑتا گیا، مذہبی انتہا پسندی اپنی جگہ بناتی گئی۔ ان معاشروں میں سیکولر ازم سے نفرت اتنی بڑھی کہ جدید تعلیم ، جدید ریاست کے تصورات اور سائنس اور منطق کو بھی لادینی علم قرار دے کر رد کردیا گیا۔ مختصر یہ کہ عقل اور روشن خیالی کو مغربیت اور رجعت پسندی کو مذہب کی پہچان مانا گیا۔ ہم نے اپنی آنکھوں سے دیکھا کہ ایسا کرنے والی ریاستیں ترقی کی شاہراہ پر چل نکلیں ، جبکہ مذہب کو ریاست کے ساتھ وابستہ کرنے والی ریاستیں بہت پیچھے رہ گئیں
Source: http://dunya.com.pk/index.php/author/irfan-hussain/2016-06-13/15783/66406580#tab2

Related:
~ ~ ~ ~ ~ ~ ~ ~ ~ ~ ~ ~ ~ ~ ~ ~ ~  ~ ~ ~  ~
Humanity, ReligionCultureSciencePeace
 A Project of 
Peace Forum Network
Peace Forum Network Mags
BooksArticles, BlogsMagazines,  VideosSocial Media
Overall 2 Million visits/hits