Featured Post

Wake up Now ! جاگو ، جاگو ، جاگو

Wake up Pakistan ! Presently the Muslim societies are in a state of ideological confusion and flux. Materialism, terrorism,...

Thursday, November 27, 2014

Tuesday, November 25, 2014

Four things Imran Khan did right at the Larkana rally

Imran Khan's rhetoric of change and his withering invective against the ruling PPP has struck the right chord with the Sindhi populace. PHOTO: NNI/FILE
With success of the massive public gathering in Larkana, Imran Khan has made a knock-on effect on Pakistan Peoples Party (PPP).

Whilst everyone in the political arena was waiting for the outcome of this rally, many said it would be difficult for the cricketer-turned-politician to gain a foothold in Sindh – often considered the political backyard of the PPP; others were counting on his failure, hoping that this jalsa would be the cause of Imran’s fall.

However, on the contrary, Imran made a very strong statement; a show of strength, attracting a healthy crowd at the Larkana rally and, therefore, creating a serious stir in PPP’s heartland. One really has to admire his homework on the rally and how he related to the crowd, concerning issues that plague the masses of Sindh. The rally truly marked his first foray into Sindhi politics, where he talked about liberating Sindh with rudimentary reforms and actions, including a tirade on the ruling PPP.

But what were those prescient points that made his gathering a success?

Here is an assessment:

1. He struck the right chord with the Sindhi masses

Imran’s rhetoric of change and his withering invective against the ruling PPP has struck the right chord with the Sindhi populace. He emphasised on PPP’s failures to make reforms in the province.

In censuring the ruling PPP, he criticised saying that despite being in consecutive governing tenures in Sindh for the past 40 years the province lagged behind in almost every walk of life. Amid corruption, ill-governance and lack of public healthcare, the local populace is frustrated with the countless false promises made to them on Bhutto’s name.

Imran indicated that the PPP is no longer Bhutto’s party and is in fact a Zardari-clique, one that has no care for the sufferings of the masses and is only interested in looting and plundering. He also took the opportunity to unleash his tirade against Prime Minister Nawaz Sharif for his plutocratic rule and nepotism.

2. The division of Sindh

Imran wouldn’t have done so well, had he not addressed the issue of the division of Sindh during his rally – an issue very sensitive to many Sindhis. To his credit, he was very tactful, as he realised that the establishment of new provinces is not a public demand, especially in rural Sindh. The emotional attachment of the local population signifies that they consider Sindh their motherland and would never willingly allow its division.

Imran’s promise that he would never allow the division has raised his public perception and this stance could prove to be vital for his progress in the province.

3. The Kalabagh Dam

This has always been considered a contentious subject within Sindh. It is one which has only been met with contempt and fear, the fear that Sindh will be robbed of its water by other provinces, especially Punjab, and the drought, which has already gripped the province, could make things even worse.

Here too, Imran made the right call. He stated that he would never allow the construction of Kalabagh Dam without Sindh’s consent. This statement holds much importance because even past leaders from the PPP have avoided commenting on this issue leaving the people with no one to rely on.

4. Bad governance and corruption

Another issue rightly pointed, in his invective against the PPP, was governance and corruption. Quoting on the state of Larkana’s roads as a reminder of Mohenjo-Daro, Imran pointed out the sorry state of such a historic city.

He further stated that bad governance and corruption have reached epidemic proportions with the ruling PPP. Despite having large reservoirs of minerals and natural gas, the province is poverty stricken and has one of highest ratios of economic inequality. He added that Sindhis were not getting proper health facilities and jobs were not given on merit but on favouritism, evident in transfers and postings.

Imran didn’t just paint the right picture of himself and his party, but also showed the people that he could relate himself to issues concerning Sindh in a way that the people themselves do – a more Bhutto-esque way than Bhutto’s own prodigal grandson ever could. He pointed out the problems faced by the local population, promised to fix them from the grass-root level and censured the ruling of PPP making his rally a real success in Larkana.

It remains to be seen whether he can make sweeping victories in Sindh during the coming elections. But one thing is for certain: Imran Khan is now a worthy opponent knocking at PPP’s door.

Maqsood Ahmed Soomro
The writer is an English literature aficionado, who likes to write on politics. He tweets as @Maqsood_Soomro1 (twitter.com/@Maqsood_Soomro1)

Sunday, November 23, 2014

Ten point agenda to urgently resolve chronic problems of Pakistan

Importance of being earnest

THE title of Oscar Wilde’s novel about late 19th-century British society also aptly sums up the most essential requirement for the effective governance of nations and states. History testifies that peoples, nations and empires rose to greatness when they were well governed and decayed and declined when they were not.

By this yardstick, Pakistan is in dire straits. The evidence of its serial mis-governance almost since its birth are palpable. Today, Pakistan’s democracy is dysfunctional, its economy stagnant, its society divided between the few rich and the mass poor. Justice, jobs and security are unavailable for a growing population of uneducated and alienated youth.

Meanwhile, Pakistan’s leaders, caught in petty power plays, have no vision or plan for national development. Pakistan — the world’s sixth most populous country — was not invited to any of the three summits held in Asia earlier this month, illustrating its decline and marginalisation.

The demands for reform made in the recent protest movement led by Imran Khan and Tahirul Qadri have been lost in the political melee. The commission of inquiry into electoral fraud will only scratch the surface. It is unfortunate that the opportunity was not seized to promote wider and more essential governance reform to ensure that Pakistan can survive and prosper as a modern state. There are at least 10 areas that need to be addressed urgently.

One, politics. The feudal and unequal structure of Pakistan’s society is a major obstacle to representative democracy and economic development. Repeatedly, elections have thrown up political leaders who are mostly ignorant, arrogant and corrupt. Rules and mechanisms can be created to set high standards for political office and ensure that decent and qualified people of modest means can be elected to political office.

Pakistan’s leaders have no vision or plan for national development.
Two, law and order. Pakistan has become a violent place, afflicted by terrorism, criminal gangs and political thuggery. The state must re-establish its monopoly of coercive power. The armed forces have a self-evident but not solitary role. Given honest purpose and adequate resources, the country’s security apparatus can be cleansed and modernised to reassert state authority.

Three, the judicial system. The concept of an independent judiciary acting as a check on executive power has either failed at critical moments in Pakistan’s history or been perverted to individual or political purpose. Without hope of securing fair or timely justice, ordinary people have had increasing recourse to illegal and extra-legal, often violent, means for the settlement of disputes. A simpler system for the dispensation of justice and a modality for oversight of the judiciary would help in restoring the rule of law.

Four, local government. The daily lives of most people are deeply affected by the quality and responsiveness of local governments. The present system is custom-made for corruption. Emulating successful examples, such as the Swiss communes and the panchayats of yore, and adhering to the rule of ‘subsidiarity’ — allowing as many decisions as possible to be taken at the lowest possible level — can simplify the administration of the entire country.

Five, the bureaucracy. Pakistan inherited a fairly good bureaucratic system from the British but has proceeded to politicise, corrupt and destroy it. It should be discarded and a new one created. A modern state needs a functionally qualified, impartial and decisive bureaucracy, free of avarice and political fear or favour, to ensure its efficient administration and development. There is no dearth of Pakistanis within and outside the country who can form the core of such a new bureaucracy.

Six, government finances. The government is broke because only a small fraction of income earners — mostly the salaried class — pay their taxes. Successive governments have shied away from broadening the tax base and utilising coercive measures of tax collection because the delinquents either belong to the political class or have political connections. A fair and effective system must be quickly implemented. Likewise, huge savings can be made by restructuring or privatising the 20-plus loss-making state corporations that are bleeding amounts equal to the country’s entire budget deficit each year.

Seven, human development. Pakistan’s growing population of the young, uneducated and unskilled is an economic and social liability, feeding radicalism and crime. A skilled population would be its greatest asset, generating income and consumption and accelerating economic growth. Education and skill creation should be Pakistan’s highest priority and deserve vastly expanded budget support.

Eight, infrastructure. Most of Pakistan’s physical infrastructure — transport, energy, irrigation — is over 50 years old. Economic growth and investment will continue to be constrained without modern infrastructure. The greatest impediment to infrastructure development, apart from the paucity of resources and long-range planning, is the system of kickbacks and corruption surrounding public projects. An investment authority, free of political affiliation, should be constituted to oversee the effective and planned execution of infrastructure projects.

Nine, agriculture. Pakistan’s vast potential in food and agricultural production has been neglected. With its large population, agricultural production in Pakistan can be enlarged significantly by small farmers, not large conglomerates. This would also ease the unemployment and urbanisation challenges. What is required? Land reform, to entitle small farmers, and technological and financial support to enable them to succeed.

Ten, industrialisation. Local manufacturing industries are essential to create jobs, substitute imports, enlarge exports and propel growth and general prosperity. For once, we should follow Mr Modi by proclaiming a ‘make in Pakistan’ slogan. To succeed, it will be necessary to review Pakistan’s trade and investment regime which does not offer sufficient incentives and protections to domestic producers.

The ten tasks outlined here may appear too daunting at first sight. Yet, with serious and bold leadership, a planned and sequenced endeavour can be launched to implement the governance reforms that are vitally needed to save Pakistan from further decline and eventual political and social collapse.

To start, agreement should be reached to establish a high-level commission to identify the reform agenda. It could set up committees composed of reputable experts in each area to propose the reforms and the modalities for their implementation.

Unfortunately, it is not evident who can convince Pakistan’s political establishment of the importance of being earnest.

By MUNIR Akram: The writer is a former Pakistan ambassador to the UN.
Dawn.Com

Why Imran Khan in KPK?

Tuesday, November 11, 2014

Real solution to load shedding لوڈ لوٹ شیڈنگ

چین کے ساتھ کل 45ارب ڈالر کے انیس معاہدوں پر دستخط ہوئے۔ ان میں سے 34ارب ڈالر توانائی جبکہ 11ارب ڈالر ترقیاتی منصوبوں سے متعلق ہیں۔ توانائی کے معاہدوں میں کوئلے ‘ ہوا اور شمسی توانائی کے منصوبے شامل ہیں۔

معاہدوں کے بعد وزیراعظم کاکہنا تھا کہ بجلی آ گئی تو سمجھو سب کچھ آ گیا‘
یہاں سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ معاہدے تو ہو گئے‘ لیکن اس کے بعد کیا ہو گا؟ فرض کریں ان معاہدوں پر من و عن عمل بھی ہو جاتا ہے‘ مظفر گڑھ میں 660میگا واٹ کا پلانٹ لگ اور چل جاتا ہے‘
قائداعظم سولر پارک 900میگا واٹ بجلی دینا شروع کر دیتا ہے ‘
اسی طرح تھر کول فیلڈ میں 330میگا واٹ بجلی کا پلانٹ اپنے وقت پر پیداوار شروع کر دیتا ہے تب کیا ہو گا؟

کیا وزیراعظم کے تمام دعوے پورے ہو جائیں گے؟

اگر آپ اس کا جواب جاننا چاہتے ہیں تو آپ بجلی کی موجودہ پیداوار ‘ اسے چلانے والے سسٹم اور افسران کا جائزہ لے لیجئے‘ حقیقت واضح ہو جائے گی۔

آج چین کے ساتھ جو معاہدے ہوئے‘ یہ کوئی نئے معاہدے نہ تھے‘ ایسے ہی درجنوں معاہدے گزشتہ ادوار حکومت میں بھی ہوتے رہے لیکن ہوا کیا؟
جتنی بجلی سسٹم میں آئی ‘ اس وقت تک اتنی ہی ڈیمانڈ بڑھ گئی اور اس سے بھی زیادہ بجلی چوری‘ لائن لاسز اور کرپشن بڑھ گئی۔
گھروں میں بجلی کے میٹر لگانے سے لے کر رینٹل پاور منصوبوں تک میں کرپشن ہونے لگی۔ واپڈا‘ این ٹی ڈی سی اور بجلی کی ضلعی ڈسٹری بیوشن کمپنیوں میں نیچے سے اوپر تک ہر کوئی اپنے ہی اداروں کو نوچنے میں لگ گیا۔

نیلم جہلم پراجیکٹ جو 130ارب میں مکمل کیا جانا تھا‘ اس کی لاگت 276ارب روپے تک پہنچ گئی۔ اسی طرح نندی پور پراجیکٹ کی لاگت 27ارب سے بڑھ کر 84ارب تک جا پہنچی۔

وزیراعظم نے اس بارے میں تحقیقات کا حکم بھی دیا‘ لیکن ہوا کیا؟
جس معاملے میں بھی ہاتھ ڈالا گیا‘ سامنے سے پیپلزپارٹی نکل آئی۔ اب مسئلہ یہ تھا کہ معاملے کو کسی پار لگایا جاتا تو پیپلزپارٹی نون لیگ کے
خلاف کرپشن کی فائلیں کھول دیتی‘ دونوں جماعتیں ایک دوسرے کی ''کانی‘‘ تھیں‘ چنانچہ کسی بھی مسئلے میں کوئی بھی ایکشن نہ لیا گیا۔
نتیجہ ملک اور اس کے عوام کو بھگتنا پڑا۔ کبھی اووربلنگ کے 70ارب کے ڈاکے کی صورت میں تو کبھی آئے دن بجلی کی بڑھتی ہوئی قیمتوں کی صورت میں ۔
آپ چین کے ساتھ پاکستان کے حالیہ معاہدے کو یہ ساری صورتحال سامنے رکھ کر دیکھیں اور دل پر ہاتھ رکھ کر بتائیں کہ جو لوگ سسٹم میں موجود بجلی کو نہیں سنبھال پا رہے‘ جو لائن لاسز اور بجلی چوری کو اس وقت کنٹرول نہیں کر رہے اور جو بجلی کے محکمے چلانے والے ہزاروں افسران اور اہلکاروں کا قبلہ درست نہیں کر سکے‘ وہ چین کے ساتھ حالیہ معاہدوں سے کیا تیر مار لیں گے؟

مزید بجلی سسٹم میں لے بھی آئے تو کیا بجلی کے ان محکموں کو بھی چینی آ کر کنٹرول کریں گے؟

بجلی چوری کے چھاپے چینی وزیر اعظم ماریں گے؟
ہمارے وزیراعظم ہائوس سے لے کر پوش مارکیٹوں میں بجلی کی بچت چینی حکومت آ کر کروائے گی؟
یہ جو بجلی کے میٹر پینتیس فیصد تیز چل رہے ہیں ‘ انہیں چینی وزرا آ کر ٹھیک کریں گے؟
اووربلنگ کے ڈاکوں کی تحقیقات چین کرے گا؟
جب یہ سب کچھ ایسے ہی چلتا رہے گا تو پھر آپ چین کے ساتھ 19چھوڑ کے 19ہزار معاہدے بھی کر لیں‘ یہاں بجلی نہیں آئے گی‘ اور بجلی نہ آئی اور وہ بھی سستی بجلی‘ تو پھر کچھ بھی ٹھیک نہیں ہو گا۔خالی ڈھکوسلوںسے کام نہیں چلنے والا‘ کاش حکمرانوں کو سمجھ آ سکت
عمار چودھری dunya. Com

Tuesday, November 4, 2014

پاکستان کی تعمیر نو Political reforms


بلاشبہ فرد کی طرح قوم بھی نامیاتی وجود ہے‘ جو پیدائ اور عہد طفولیت سے لے کر لڑکپن کی عمر میں شناخت کے بحران اور پھر پختہ عمری و بلوغت کے مراحل سے گزرتی ہے؛ تاہم اگر سیاسی، معاشی، معاشرتی اور اخلاقی استواری و مضبوطی سے مملو ادارہ جاتی قوت کے ذریعے اس کی نشوونما اور پرورش و پرداخت درست طور سے نہ ہو تو یہ معذور و مفلوج انسانی جسم کے مانند پہلے جمود اور بے مقصدیت سے دوچار اور پھر زوال کا شکار ہو جاتی ہے۔ جس طرح انسانی جسم کا ایک عضو پورے جسم کی معمول کی کارکردگی پر اثر انداز ہوتا ہے‘ بالکل اسی طرح ایک ریاست کی صحت اور آسودگی کا دار و مدار بھی اس کے مختلف اجزا کے درست کام کرنے پر ہوتا ہے۔ ہمارے معاملے میں بدقسمتی یہ ہوئی کہ پاکستان ،بانی کی جلد وفات سے اپنے عہدِ طفولیت ہی میں یتیم ہو گیا اور اس کی مربوط و منظم فطری نشوونما کو مسدود کرنے والے نظام کی بدترین خامیوں اور اصول و ضوابط سے انحراف نے اسے صحت مند شباب سے محروم کر دیا۔ یہ ایسی سیاسی و آئینی لغزشوں اور معاشی ناکامیوں سے دوچار ہوا‘ جن کی مثال دنیا بھر میں نہیں ملتی۔ قائد اعظم ؒ کے بعد پاکستان سمت کے شعور سے محروم اور سیاسی دیوالیہ پن‘ نیز اخلاقی بنجر پن سے دوچار ہو گیا۔ یہ اپنے آپ کو ٹکڑوں میں منقسم کرنے لگا، ربع صدی سے بھی کم عرصے میں نہ صرف اپنا نصف حصہ گنوا دیا‘ بلکہ اپنی تخلیق کا جواز ہی کھو دیا۔
اپنی الم انگیز تقسیم سے حقیقی پاکستان غائب ہو گیا اور باقی ماندہ کو اس کے خود غرض، بدعنوان اور نااہل حکمرانوں نے سیاسی کھیل تماشوں کی سرزمین بنا ڈالا۔ کیسی ستم ظریفی ہے کہ جس ملک کو اس کے وجود میں آنے کے وقت ''بیسویں صدی کا معجزہ‘‘ قرار دیا گیا تھا اور جو مکمل طور پر جمہوری و آئینی جدوجہد کے ذریعے تخلیق ہوا تھا، اسے اب بھی حقیقی جمہوریت، معاشرتی انصاف اور تمام شہریوں کے مساوی حقوق کے لیے جدوجہد کرنا ہے۔ ہماری داستاں ایک ایسے معاشرے کی داستاں ہے جو گزشتہ 67 برس سے بے مقصد دائروں میں گھوم رہا ہے۔ ہم اپنے مستقبل کے حوالے سے عدم تیقن کے عالم میں یکے بعد دیگرے بحرانوں سے دوچار ہو کر تاریکی میں ٹامک ٹوئیاں مار رہے ہیں اور ایک قوم کی حیثیت سے ہم نے ایک مشترک مقصد کا شعور ،ہنوز حاصل کرنا ہے۔
ملک قومی تشخص کی تعین اور اپنی نسلی و لسانی اعتبار سے متنوع آبادی کے لیے ایک سیاسی نظام وضع کرنے کی پراگندہ کوششوں میں لگا ہوا ہے۔ پاکستان ایک ایسا ملک ہے جہاں بیس سے زیادہ زبانیں اور تقریباً 300 مختلف بولیاں بولی جاتی ہیں۔ یہ تنوع مزمن علاقائی تنائو اور صوبائی عدم ہم آہنگی کا باعث بنا‘ جس کے نتیجے میں قوم سازی کا عمل رکاوٹوں سے دوچار ہو گیا۔ دوسرے ترقی یافتہ اور ترقی پذیر ملکوں کے نظاموں کا جائزہ لیں‘ تو ہمیں معلوم ہوتا ہے کہ ہم وفاق کی ایک ایسی انوکھی مثال ہیں جس کا ثانی پوری دنیا میں کہیں نہیں۔ دنیا کے بیشتر بڑے اور درمیانی جسامت کے ملکوں میں انتظامی اکائیوں کے طور سے چھوٹے چھوٹے صوبے یا ریاستیں بنائی گئی ہیں۔ شاید پاکستان دنیا کا واحد ملک ہے جہاں نسل اور زبان کی بنیاد پر صوبے بنائے گئے ۔
پاکستان جیسی جغرافیائی جسامت اور آبادی والا کوئی بھی ملک اتنے کم اور اتنے بڑے صوبوں کا حامل نہیں ۔ حکمرانی کا کوئی بھی طریقہ غیر مساویانہ دروبست میں کارگر نہیں ہو سکتا۔ ہمیں اپنے وجودِ سیاسی کو خلقی خامیوں سے لازماً پاک کرنا ہو گا اور اس کے لیے ہمیں اپنے وفاقی ڈھانچے کو از سر نو تشکیل دینے کے علاوہ انتظامی اعتبار سے اتنے صوبے بنانا ہوں گے‘ جتنے کہ حکمرانی کے مقاصد کے لیے ضروری ہوں۔ ہمارا موجودہ صوبائی دروبست طویل عرصے سے عدم استحکام کی وجہ بنا ہوا ہے۔ یہ نہ صرف ملک میں ناقص حکمرانی اور بدعنوانی کو فزوں تر کر رہا ہے بلکہ وفاق کی تشکیلی اکائیوں میں عدم مساوات اور محرومی کا احساس بھی بڑھا رہا ہے۔ بلوچستان اور دوسرے نسبتاً چھوٹے صوبوں میں مسلسل ''پنجابی غلبہ‘‘ تصور کی جانے والی صورت حال نیز اختیارات اور وسائل کی غیر مساوی تقسیم کے خلاف زیر سطح شدید کبیدہ خاطری موجود ہے۔ ماضی قریب میں نسلی یا لسانی بنیادوں پر مزید صوبے بنانے کے مطالبے کیے جا چکے ہیں۔ اگر یہ رجحان برقرار رہا تو ہمارے پاس ایک ایسا ڈھیلا ڈھالا وفاقی ڈھانچہ بچ رہے گا‘ جہاں خود غرض، نامطمئن اور بدعنوان سیاست دان ملک میں تباہی برپا کیے رکھیں گے۔ یہ نظام بے بسی اور بے اختیاری کی کیفیت پیدا کرنے کے لیے وضع کیا گیا تھا، جس سے ہم دوچار ہو چکے ہیں۔ زمینی سرحدیں از سر نو کھینچنے اور آبپاشی کی نہروں اور معاون نہروں کے رخ از سر نو متعین کرنے سے بچنے کی غرض سے بہترین حل یہ ہو گا کہ موجودہ ڈویژنل کمشنریوں کو صوبوں میں بدل دیا جائے‘ جن کی سربراہی کسی موزوں خطاب کے حامل منتخب انتظام کاروں کو سونپ دی جائے۔ ملک کو صوبوں کی شکل میں چھوٹی انتظامی اکائیوں میں بانٹنے سے ہم نہ صرف علاقائی تلخیاں اور بے اطمینانی مٹا دیں گے بلکہ مقامی اور موثر اور اہل حکمرانی کو بھی یقینی بنا دیں گے۔ نئے صوبوں کی انتظامیہ کو منتخب کونسلوں پر مشتمل ہونا چاہیے جن کا سربراہ عوام کا منتخب کردہ ہو جس کی معاونت کے لیے پیشہ ور افسر شاہی موجود ہو۔ صوبائی اسمبلیاں، وزراء اعلیٰ، کابینائیں اور صوبوں میں اس وقت موجود بڑے سیکرٹریٹ جیسے سیکرٹریٹ نہیں ہونا چاہئیں۔ اس طرح ہمارے سیاسی نظام کے معروف فالتو حصے کی کم از کم ایک بڑی پرت ختم ہو جائے گی‘ جس سے ہونے والی بہت بڑی بچت عوام کی بہتری کے لیے براہ راست دستیاب ہو جائے گی۔
وفاقی حکومت کو چاہیے کہ صرف دس بارہ وزراء رکھے جو دفاع ، معیشت، تعلیم، خارجہ امور، قومی سلامتی، تجارت، مواصلات، انصاف اور قانون جیسے اہم شعبوں کے لیے قومی پالیسیاں بنانے کے ذمہ دار ہوں۔ باقی تمام امور و معاملات نئی صوبائی اکائیوں کو سونپ دیے جانے چاہئیں‘ جو اپنی حدود میں واقع اضلاع کی مدد کرتے ہوئے ،عدالتی اور بجٹ سے متعلق امداد سمیت پالیسی معاملات پر مرکزی حکومت سے رابطے میں رہتے ہوئے براہ راست نگرانی اور رابطے کا کردار ادا کرنے کی ذمہ دار ہوں گی۔
حکمرانی کی بنیادی اکائی موجودہ اضلاع ہونا چاہئیں۔ ہر ضلع کا سربراہ اہلیت کے مجوزہ معیار پر پورا اترنے والے عوام کے منتخب کردہ شخص کو ہونا چاہیے، جو تمام مقامی سطحوں پر چھوٹے منتخب اداروں کی مدد سے کام کرے۔ ہمیں بیوروکریسی کے دیو قامت ڈھانچوں کی ضرورت نہیں۔ اس کی بجائے مقامی سطح پر غذا، رہائش، تعلیم، صحت، سلامتی اور انصاف جیسی شہریوں کی بنیادی ضروریات پوری کرنے کے لیے کافی وسائل مہیا کر کے ''ضلعی حکومتوں‘‘ کو مضبوط بنایا جانا چاہیے اور ان کی اچھی کارکردگی یقینی بنانے کے لیے نگرانی کا ایک موثر میکانزم وضع کرکے انہیں جواب دہ بنایا جانا چاہیے۔
ہم ''مزاجاً‘‘ ایسی قوم ہیں‘ جو صدارتی نظام پسند کرتی ہے؛ چنانچہ پارلیمانی نظام لازماً ترک کر دیا جانا چاہیے‘ جسے ہم کبھی اس کی روح کے مطابق نافذ کر ہی نہیں سکے۔ بالغ رائے دہی کی اساس پر استوار ایسا ''صدارتی‘‘ نظام ہمارے لیے موزوں ہے‘ جسے پاکستان کی ضرورتوں کے پیش نظر وضع کیا گیا ہو۔ ہمارے لیے متناسب نمائندگی کا نظام بھی بہتر ہو گا جو سیاسی جماعتوں کو حاصل ہونے والے عوام کے ووٹوں کے تناسب سے قومی مقننہ میں ان کی نمائندگی یقینی بنائے۔ اس طرح غیر جاگیردارانہ، غیر اشرافیہ تعلیم یافتہ درمیانے طبقے کے لوگوں کو منتخب اسمبلیوں تک رسائی حاصل ہو گی۔ ملک میں حقیقی جمہوری کلچر پروان چڑھانے کے لیے ہماری سیاسی جماعتوں کو بھی لازماً جمہوری قالب میں ڈھلنا چاہیے۔ سیاسی جماعتوں میں نسل در نسل موروثی قیادت پر لازماً امتناع عاید ہونا چاہیے اور سیاسی جماعتوں میں خفیہ رائے شماری کے تحت انتخابات کو بھی قانوناً لازمی قرار دیا جانا چاہیے۔ اختیار و اقتدار ناجائز طریقوں سے ہتھیا لینے والے پرانے غاصبوں سے چھٹکارا پانے کے لیے موجودہ فرسودہ نظام میں بلاتاخیر مؤثرتبدیلی لائی جانی چاہیے۔ عقل و خرد اور بے غرضی کو ہمارے لیے معیار ہونا چاہیے۔ یہی وقت ہے کہ ہم خود غرضی اور تنگ نظری پر مبنی سوچوں سے بالاتر ہو کر حقیقی سیاسی، معاشی، عدالتی، تعلیمی، انتظامی اور زرعی اصلاحات کے ذریعے نظام میں تبدیلیاں لائیں۔ نئے پاکستان کے لیے خواب غفلت سے جگانے والی ایک واضح اور اونچی آواز پہلے ہی بلند کی جا چکی ہے۔ نہ تو چہرے بدلنے کا کچھ فائدہ ہو گا اور نہ ہی محض انتخابات کے انعقاد سے کوئی فرق پڑے گا۔ نظام کو لازماً بدلنا ہو گا۔ حقیقت میں ضرورت اس امر کی ہے کہ پاکستان کی تشکیل نو اس طرح کی جائے جس طرح قائد اعظم ؒ نے سوچا تھا یعنی نسلی اور لسانی لیبلوں اور فرقہ وارانہ و علاقائی عدم ہم آہنگی سے آزاد پاکستان۔
(شمشاد احمد سابق سیکرٹری خارجہ )dunya. com

Ex CJ. Ch Iftikhar Rebuttal & allegations on Imran Khan کون فائدے میں رہا ؟


سابق چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری نے میڈیا کی طرف سے عمران خان بارے پوچھے جانے والے ایک سوال کے جواب میں اپنے ارد گرد کھڑے ساتھیوں کے ہمراہ ایک زور دار قہقہے کی گونج کے ساتھ فرمایا کہ ''عمران خان دو نمبر آدمی ہے جو اپنے علا وہ کسی اور کو عزت دار نہیں سمجھتا۔ سب سے پہلے آپ عمران خان سے جا کر پوچھیں کہ وہ جنرل مشرف کے ہاتھوں کتنے میں بکاتھا؟‘‘ اپنے ایک کرم فرما وکیل کے گھر جس شاندار مرسیڈیز میں بیٹھ کر وہ تعزیت کیلئے آئے تھے‘ حیران کن طور پر اس پر کسی بھی قسم کی نمبر پلیٹ نصب نہیں تھی۔ میڈیا نے قانون کی اس سنگین خلاف ورزی پر ان سے جب سوال کیا تو وہ یہ کہہ کر چلتے بنے کہ یہ سوال مجھ سے نہیں سکیورٹی والوں سے پوچھا جائے‘ کیونکہ نمبر پلیٹ لگانا ان کا کام ہے میرا نہیں۔ چوہدری صاحب! اگر آپ کو اپنے لیے گارڈ آف آنر کا خیال آ سکتا ہے‘ تو وہ گاڑی جو آپ کے گھر کے گیراج میں کھڑی رہتی ہے‘ اسے بغیر نمبر پلیٹ دیکھتے اور اس میں اپنے اور خاندان کے افراد کے ساتھ کہیں بھی آتے جاتے ہوئے کیا آپ اپنے ڈرائیور یا سکیورٹی سٹاف کی جواب طلبی نہیں کر سکتے؟ 
افتخار چوہدری صاحب فرماتے ہیں کہ عمران خان بتائے کہ وہ جنرل مشرف کے ہاتھوں کتنے میں بکا ہے؟ عمران خان اور افتخار چوہدری چونکہ پبلک پراپرٹی ہیں‘ اس لیے دونوں کا فرض بنتا ہے کہ وہ سچ سچ بتائیں جو انہوں نے اب تک کیا ہے۔ عمران خان نے جنرل مشرف کے ریفرنڈم کی حمایت کی۔ جبکہ افتخارچوہدری صاحب نے بلوچستان ہائیکورٹ کے جج کی حیثیت سے جنرل مشرف کے پی سی او کے تحت حلف لیا۔ پھر بلوچستان ہائیکورٹ سے سپریم کورٹ کے جج بنائے گئے۔ ظفر علی شاہ کیس میں بارہ اکتوبر1999ء کے فوجی اقدام کو جائز قرار دیتے ہوئے جنرل مشرف کو تین سال تک ملک کا فوجی اور سویلین چیف ایگزیکٹو رہنے کی قانونی سند عطا کرنے کے علا وہ یہ فیصلہ بھی دیا کہ جنرل مشرف آئین میں جس قسم کی بھی چاہیں‘ ترامیم کرنے مجازہوں گے‘ گویا جنرل مشرف کے ہاتھ میں فرد واحد کی حاکمیت کا ڈنڈا تھمادیا۔ جب قاضی حسین احمد اور لایئرزفورم کی جانب سے31 دسمبر2004ء کے بعد جنرل مشرف کے فوجی وردی میں رہنے کے خلاف دائر کی گئی پٹیشن میں چوہدری صاحب نے فیصلہ دیا کہ وہ آرمی چیف اور ملک کے صدر کی حیثیت سے دونوں عہدے رکھنے کے مجاز ہیں تو یہ عجیب و غریب فیصلہ انہوں نے کیوں دیا؟ سپریم کورٹ PLD 2005 میں جنرل مشرف کے دو عہدوں کے خلاف دائر کردہ پٹیشن نمبر13,14,39,40/2004اورپٹیشن نمبر2/2005اورCPLA 927-l‘ کا 13 اپریل2005ء کو فیصلہ سناتے ہوئے جنرل مشرف کو ان دو عہدوں کی قانونی اور آئینی اجازت کیوں دی؟ ہمیں شیشے کے گھروں میں بیٹھ کر دوسروں پر پتھر برسانے سے پہلے دیکھ لینا چاہئے کہ کہیں اس سے بھی بڑا جرم ہم سے تو سر زد نہیں ہوا؟ اور وہ جرم جس کے ہم دوسروں کو طعنے دے رہے ہیں‘ کہیں اس کے محرک اور مصور ہم خود تو نہیں؟ اس ملک میں اس سے پیشتر بھی بہت سے افراد چیف جسٹس کے عہدے پر فائز رہے۔ ان کا ریکارڈ اٹھا کر ایک نظر دیکھ لیں تو اندازہ ہو جائے گا کہ ان میں سے کسی کو بھی جاہ و جلال کی تمنا نہیں تھی لیکن آپ کا دور تو یہی ثابت کرتا رہا کہ ملک میں چیف ایگزیکٹو آپ کے سوا اور کوئی نہیں تھا۔ اگر آپ جنرل مشرف کے بارہ اکتوبر کے اقدام کی اجازت نہ دیتے تو بقول آپ کے ساتھیوں اور ہمدردوں کے ملک کی یہ حالت کبھی نہ ہوتی؟ 
چودھری صاحب! کیا پاکستان میں کسی بھی چیف جسٹس نے اپنے ساتھ سرکاری پروٹوکول کو اس طرح استعمال کیا ؟ آپ کی خدمت میں بھارت کی مدراس ہائیکورٹ کے ایک سابق جسٹس کے چندرکا واقعہ پیش ہے۔ جب وہ اپنی مدت ملازمت پوری ہونے پر ریٹائر ہوئے تو اس وقت مدراس ہائیکورٹ کے قائم مقام چیف جسٹس آر کے اگروال کو لکھے جانے والے اپنے ایک خط کہا ''جیسا کہ آپ جانتے ہیں میں8 مارچ2013ء کو ریٹائر ہو رہا ہوں۔ آپ سے میری درخواست ہے کہ میرے اعزاز میں ہونے والے الوداعی ریفرنس اور ساتھی ججوں‘ بار کے وکلاء اور ایڈوو کیٹ جنرل کے ساتھ دیئے جانے والے رات کے رسمی عشایئے کا کوئی انتظام نہ کیا جائے کیونکہ میں نہیں چاہتا کہ ملک کے عوام کے ٹیکسوں اور دوسری لازمی ضروریات کا پیسہ ضائع ہو‘‘۔ جناب افتخار چوہدری صاحب آپ کی اطلاع کے لیے عرض ہے کہ مدراس ہائیکورٹ کے جج کے چندرنے اپنے اعزا ز میں ہونے والی تمام سرکاری تقریبات منسوخ کرا دیں۔ انہوں نے کہا کہ ''ہندوستان کی تاریخ میں 1929ء میں مدراس ہائیکورٹ سے ریٹائر ہونے والے انگریز جج جی ایچ جیکسن نے اپنے اعزاز میں منعقد کی جانے والی تمام خیر سگالی کی تقریبات میں شرکت سے معذوری ظاہر کی تھی‘ اس لیے آج میں بھی کہتا ہوں کہ میں نے اپنی عدلیہ کی سروس کے دوران جو کچھ بھی کیا‘ وہ میرے فرائض میں شامل تھا جس کا میں نے حلف اٹھاتے ہوئے اپنے بھگوان سے وعدہ کیا تھا۔ اپنے فرائض کی ادائیگی کے بعد پر تعیش عشایئے اور شاندار الوداعی تقریبات کس لیے؟
جسٹس کے چندر نے 9 نومبر2011ء کو جب مدراس ہائیکورٹ کے جج کی حیثیت سے حلف لیا تو رسم حلف برداری کے بعد انہوں نے ایک مہر بند لفافہ اس وقت کے چیف جسٹس ایچ ایل گھوکھلے کے حوالے کرتے ہوئے کہا کہ جناب اس میں میرے اور میرے خاندان کے اس وقت تک کے تمام اثاثہ جات کی تفصیل درج ہے۔ اپنی ریٹائر منٹ سے دو دن پہلے اس نے اپنے موجودہ اثاثہ جات کی مکمل تفصیلات قائم مقام چیف جسٹس اگر وال کے حوالے کر دیں اور سات سال تک بحیثیت جج اپنے فرائض انجام دیتے ہوئے جسٹس چندر نے 96000 مقدمات کے فیصلے کیے اور ان کی عدالت کا ریکارڈ بتاتا ہے کہ وہ ہر ماہ اوسطاََ 1500 مقدمات کے فیصلے کرتے تھے۔کیا آپ بتانا پسند کریں گے کہ اپنی دس گیارہ سالہ مدت ملازمت میں آپ نے کتنے مقدمات نمٹائے؟ اور کیا آپ نے بھی آتے ا ور جاتے ہوئے اپنے اثاثہ جات کی تفصیل دی تھی؟ 
جناب افتخار چوہدری صاحب! آپ کہتے ہیں کہ عمران سے پوچھو کہ میں نے مشرف کو کیسا جواب دیا تھا اور اس کے ساتھ کیا سلوک کیا؟ حضور اگر آپ اپنے دائیں بائیں دیکھنے کی کوشش کرتے تو آپ کی بحالی اور عدلیہ کی سربلندی کیلئے عمران خان آپ سے بھی زیا دہ متحرک تھا اور جنرل مشرف کے ہاتھوں اس نے ڈیرہ غازی خان کی جیل کاٹی اور اس کے حصے میں یہی قیمت آئی‘ جبکہ آپ نے کیا حاصل کیا‘ یہ آپ بہتر بتا سکتے ہیں۔ آپ خود ہی بتا دیں‘ فائدے میں کون رہا؟ 

Munir Baloch:  Dunya.com

* * * * * * * * * * * * * * * * * * *
Humanity, Religion, Culture, Ethics, Science, Spirituality & Peace
Peace Forum Magazines
Over 1,000,000 Visits
* * * * * * * * * * * * * * * * * * *

Revising Education Syllabus نصابِ تعلیم کی تشکیلِ نو


ایک اچھا فیصلہ، خدشہ ہے کہ عجلت پسندی کی نذر ہو جا ئے گا۔
نصاب کی تشکیلِ نوجس مشاورت اورغور وفکر کی متقاضی ہے،اس کے لیے دو ماہ کافی نہیں۔کابینہ میں بیٹھے احسن اقبال تو یہ بات جا نتے تھے۔کیا انہوں نے وزیر اعظم کو بتا یا نہیں؟پھر یہ کہ اس کام کی راہ میں چند قانونی اور سماجی رکاوٹیں بھی ہیں۔اٹھارویں آئینی ترمیم کے بعد،تعلیم اب صوبائی مسئلہ ہے۔نصاب سازی، اسلامی تعلیم،تعلیمی منصوبہ بندی ،یہ اب صوبوں کی ذمہ داری ہے۔ مزید یہ کہ،پاکستان میں اس وقت ایک نہیں، کئی نظام ہائے تعلیم رائج ہیں۔اس تنوع کو کسی ہم آہنگی میں تبدیل کیے بغیربھی کوئی قدم نتیجہ خیز نہیں ہو گا۔اچھا ہو تا اگر کوئی فرمان جاری کر نے سے پہلے، اس مسئلے پرماہرین سے مشاورت کرلی جاتی۔
اٹھارویں ترمیم کے بعد وفاق نے اپنے ہاتھ کاٹ ڈالے ہیں۔اب وہ صوبوں کو مشورہ دے سکتا ہے یا کسی ہم آہنگی کے لیے معاونت کر سکتا ہے،حکم نہیں دے سکتا۔اس ترمیم میں سب مذہبی وسیاسی جماعتیں شریک تھیں۔ مذہبی تعلیم میں پہلے ہی ریاست کا کوئی عمل دخل نہیں۔ان کے اپنے وفاق ہیں اور اپنے نصاب۔وزیراعظم اس اقدام سے جونتیجہ نکالنا چاہتے ہیں، وہ ممکن نہیں جب تک مذہبی تعلیم بھی نئے خطوط پر استوار نہ ہو۔ایک اور پہلو بھی قابلِ غور ہے۔سول سوسائٹی کے چند ادارے بھی اس باب میں متحرک ہیں۔ان کی رسائی نجی تعلیمی اداروں تک ہے جو دینی مدارس کی طرح ریاست سے بے نیاز ہیں۔اس پراگندگی میں،اس بات کا امکان بہت کم ہے کہ وزیر اعظم کا خواب تعبیر آ شناہو ۔اس کی نتیجہ خیزی کے لیے، ضروری ہے کہ ان حقیقتوں کے اعتراف کے ساتھ کوئی حکمتِ عملی اختیار کی جا ئے۔
کے پی میں جو تنازع کھڑا ہوا، وہ ایک صوبے کا مسئلہ نہیں ہے۔اگر کسی اور صوبے میں نصاب کو اس طرح تبدیل کیا جا تا توبھی ردِ عمل یہی ہو نا تھا۔پاکستان میں مو جود نظری تقسیم جس طرح عصبیت میں ڈھل چکی، اس کے بعدکسی اتفاقِ رائے کی تو قع رکھنا مشکل ہے۔اختلاف کایہ دائرہ تین سوالات پر محیط ہے:
1۔ مذہبی تعلیمات کو کیا عمومی نصاب کا حصہ ہو نا چاہیے؟اگر اس کا جواب اثبات میں ہے تو اس پر مذہبی اقلیتوں کو اعتراض ہے۔ہمارے نصاب میں مذہبی تعلیمات پر مشتمل ابواب میں عام طور پر ایجابی کے بجائے سلبی انداز اختیار کیا جاتا ہے۔ایجابی انداز یہ ہے کہ ہم اسلام کی مثبت تعلیمات کو نمایاں کریں۔سلبی انداز یہ ہے کہ دوسرے ادیان کی نفی کی اساس پر اپنا مقدمہ قائم کریں۔اس کا ایک نتیجہ یہ بھی نکلتا ہے کہ دوسرے مذاہب کے ماننے والوں کے ساتھ تحقیراور عداوت کے جذبات پیدا ہوتے ہیں جو پاکستان کی قومی سلامتی کے لیے نقصان دہ ہیں۔اس کا دوسرا پہلوبھی ہے۔آئین ریاست کو اس بات کا پابند بنا تا ہے کہ وہ سماج کی اسلامی تشکیل اور تشخص کے لیے اقدام کرے۔اس کے لیے تعلیم کی اسلامی تشکیل بدرجہ اتم ضروری ہے۔اب اس تضاد کو کیسے دور کیا جا ئے؟
2۔ ہماری تاریخ کب سے شروع ہوتی ہے؟محمد بن قاسم کی آمد سے یا 'ہمارا‘ وجود اس سے پہلے بھی ثابت ہے؟اس سوال کا تعلق شناخت کے بنیادی مسئلے سے ہے۔اگر ہم اجتماعی طور پر اپنی مسلم شناخت پر اصرار کرتے ہیں توپھر اس کا آغاز محمد بن قاسم سے ہو تا ہے۔اگرہماری شناخت ہندی ہے تو پھر ظاہر ہے کہ ہندوستان کی تاریخ کہیں زیادہ قدیم ہے۔مسئلہ وہی قدیم ہے:قومیت کی اساس نظریہ ہے یا وطن؟ہمیں تسلیم کر نا چاہیے کہ پاکستان کو نظریاتی ریاست تسلیم کرنے کے بعدہم اسے بیسویں صدی میں فروغ پانے والے قومی ریاست کے تصور سے ہم آہنگ بنا نے میں کامیاب نہیں ہو سکے۔نظریاتی شناخت پر اصراراقلیتوں میں بھی بے چینی کی لہر دوڑا دیتا ہے۔وہ پھر قائد اعظم کی 11اگست کی تقریر میں پناہ تلاش کر تے ہیں۔اکثریت اس تقریر کو قائد اعظم کی اجتماعی تعلیمات کی روشنی میں سمجھنے پر اصرار کرتی ہے۔ دوسرے گروہ کا کہنا ہے کہ قانون ساز اسمبلی کے خطاب کو کسی عوامی اجتماع کی تقریر پر قیاس نہیںکیا جا سکتا۔اس کی سنجیدگی متقاضی ہے کہ اسے دستور اور اجتماعی شناخت کے حوالے سے دیکھا جائے۔یہ گروہ اس مقدمے کے حق میں قائد اعظم کے بعض عملی اقدامات کاذکر کرتا ہے جن میں اہم وزارتوں پر غیر مسلموں کاتقرر بھی شامل ہے۔اس کا اب ایک جواب یہ آیا ہے کہ قائداعظم نے کوئی ایسی تقریر کی ہی نہیں۔ظاہر ہے کہ یہ اب ایک نہ ختم ہو نے والی بحث ہے۔
3۔اگر نصاب کو مذہبی تعلیم کے زیر اثرتشکیل پانا ہے تویہ کس تعبیر پر مبنی ہوگا؟ سماج میں اسلام کی بہت سے تعبیرات رائج ہیں۔ریاست کون سی تعبیر اختیار کرے گی؟ مسلمان مسالک، بالخصوص ایک دو مسالک میں تعبیر کی لکیر گہری ہے۔ اس لیے یہ مسئلہ بہت عرصے سے زیر بحث ہے۔ بھٹو صاحب کے دور میں اسلامیات بھی دو ہو گئی تھیں۔ کئی ریاستوں نے تو اس مسئلے کو حل کر لیا۔پاکستان کے لیے ممکن نہیں کہ یہاں ہر مسلک خود کو' سٹیک ہو لڈر‘ سمجھتا ہے اور ریاست کی 'اونرشپ‘ میں شرکت کا دعوے دار ہے۔یہاں ریاست جبر نہیں کر سکتی۔اسلامیات کو دو خانوں میں تقسیم کر نا زبانِ حال سے اس بات کا اقرار ہے کہ مذہب قومی وحدت کی اساس نہیں بن سکتا۔ہم اس با ت کو تسلیم نہیں کرتے۔یوں مسئلے کا یہ پہلوبھی تعلیمی نصاب کی تشکیلِ نو میں مانع ہے۔
ان سوالات کے چند سادہ جواب دیے جاسکتے ہیں۔جیسے مذہبی تعلیمات کو عمومی نصاب کا حصہ نہیں ہو نا چاہیے۔ اگر ہم نے بچوں کو اردو سکھانی ہے تو یہ لازم نہیں کہ اس میں مذہبی اسباق کو شامل کیا جائے۔ہم اردوکا مضمون کسی مذہبی حوالے کے بغیربھی پڑھا سکتے ہیں۔جہاں تک مذہبی تعلیم کا معاملہ ہے تومسلمان طالب علموں کے لیے اسلامیات کا مضمون نصاب کا حصہ ہے۔وہ اس سے اپنے مذہب سے واقف ہو سکتے ہیں۔ غیر مسلم طلبا و طالبات کے لیے 'اخلاقیات‘ کا مضمون شامل کیا جا سکتاہے۔ اسی طرح مسلکی تفریق سے بچنے کے لیے اسلامیات کی تعلیم کو قرآن مجید کی تعلیم سے بدل دیا جائے۔اگر پہلی جماعت سے یہ نصاب اس طرح ترتیب دیا جائے کہ عربی زبان کی تدریس سے اس کا آ غاز ہو یہاں تک کہ بارہ سال کی تعلیم کے بعد ایک طالب علم میں یہ استطاعت پیدا ہو جائے کہ وہ قرآن مجید کے متن سے براہ راست وابستہ ہو سکے۔اس میں قرآن مجیدکی آیات کو بچے کی صلاحیت اور ضرورت کے مطابق شاملِ نصاب کیا جائے۔ جیسے پانچویں جماعت تک بنیادی اخلاقیات، اس کے بعد سماج اور باہمی تعلقات۔ میٹرک میں ریاست و سیاست سے متعلق تعلیمات۔ اسی طرح تاریخ کو بھی دوحصوں میں پڑھایا جا سکتاہے۔ایک قبل از اسلام اور ایک اسلام کی آ مد کے بعد۔اگر اسلام کے آنے سے پہلے مو جود حکمرانوں میں کوئی خوبی تھی تو اس کے بیان میں کیا حرج ہے یا کسی مسلمان حکمران میں کوئی کمزوری تھی تو اس کا اسلام سے کیا تعلق؟تاریخ تو افراد کا نامۂ اعمال ہے۔ اس کی ذمہ داری مذہب پر نہیں ہے۔
یہ معاملہ،تاہم اتنا سادہ نہیں ہے۔اس کے لیے قومی سطح پر مشاورت ہونی چاہیے۔ علما، ماہرینِ تعلیم،سیاسی راہنما،پالیسی ساز، سول سوسائٹی، سب کو مل کراتفاقِ رائے تلاش کر نا چاہیے۔ میرا مشورہ ہو گا کہ وزیر اعظم تعلیم کو اس کے وسیع تر تناظر میں دیکھیں۔اس میں نصاب ہائے تعلیم کا تنوع اور مذہبی تعلیم کو بھی شامل کرتے ہوئے ایک اصلاح کی حکمتِ عملی ترتیب دینی چاہیے۔ اس کاآغاز نصاب کی تشکیلِ نو سے ہو سکتا ہے۔یہ کام مگر عجلت کا نہیں۔تعلیم میٹروبس کی طرح کا 
منصوبہ نہیں جو دس ماہ کی'ریکارڈ مدت‘ میں مکمل ہو جائے۔ 
Khursheed Nadem Dunya.Com



* * * * * * * * * * * * * * * * * * *
Humanity, Religion, Culture, Ethics, Science, Spirituality & Peace
Peace Forum Magazines
Over 1,000,000 Visits
* * * * * * * * * * * * * * * * * * *

Sunday, November 2, 2014

Sweden recognise Pelistine

IN recognising the State of Palestine on Thursday, the Swedish government has taken an important step that confirms the right of the Palestinian people to self-determination.

Sweden’s traditionally close ties with the State of Israel are now complemented by an equivalent relationship with the other party in the two-state solution that Israelis, Palestinians and a united international community see as the path to lasting Middle East peace. Keep reading....  http://www.dawn.com/news/1141883/showing-the-way

Election inquiry

Poll inquiry talks are deadlocked on minor issues. Logically, PML-N should accept PTI’s demands about a comprehensive inquiry and opening of constituencies given how contested its mandate has become.

But this may require constitutional amendments allowing a commission to conduct such inquiries since the apex court has recently rejected three election petitions. This is because Article 225 designates tribunals as the primary fora for poll disputes.

The party should also agree to dissolve assemblies if massive rigging is proved, even if not carried out by PML-N, since its mandate would still be non-authentic. These issues are diverting attention from bigger problems.

The first relates to whether the Supreme Court should get involved given that three senior judges have headed the ECP since August 2013.

Also read: Justice Nasirul Mulk resigns as acting CEC

The chief justice recently eschewed an election case given this. But could even other (junior) judges unbiasedly evaluate the post-poll performance of an ECP headed by fellow senior judges? It seems a case of institutional conflict of interest.

A probe into alleged poll rigging can be problematic.
This politically charged case is so complex that the commission may fail to provide watertight justifications for its judgments, thus exposing the court to bias allegations.

A one-time commission of respected Pakistani or UN experts makes more sense, though finding such Pakistanis may be difficult while UN involvement may lead to sovereignty concerns.

Secondly, sound legal grounds must be established for the inquiry to avoid setting bad precedents. Statistics show no party submitted petitions against more than 8pc of the contested seats, thus suggesting none had rigging proof against 92pc seats.

Tribunals have to date adjudicated on 80pc of the petitions. Few appeals have been made against tribunal decisions. So, it must be shown that new evidence has emerged after the relevant deadlines passed.

The most vexing issue is about how to undertake such a vast inquiry, in a short space of time. Few countries have conducted investigations of entire elections. Afghanistan merely recounted around eight million votes, that too inconclusively.

Also read: ECP tests biometric system for voter verification

The demands here, eg, biometrically checking fingerprints, are more complex. Investigations must cover three types of rigging (vote fraud, suppression and miscounting) and determine whether its actual levels justify re-election. There are five main inquiry options, all rife with complications.

The most time-consuming option is verifying thumbprints. While opening constituencies, statistical standards must be followed which dictate random and sufficiently large samples, not PTI-style hand-picked, small samples.

Going by statistical confidence and probability levels which even most routine surveys use, some 150 constituencies must be opened just for the National Assembly.

This could take months. While further vote-level sampling could be done within constituencies to reduce time, such multi-level sampling must be done with expert input.

Complications could arise if most of the votes everywhere remain unverifiable. Automatically considering unverifiable votes as fraudulent is unreasonable.

At current percentages, that would mean millions of fraudulent votes were cast, which seems impossible.

Thus, evidence of widespread election-day voter identity fraud is needed to consider unverifiable votes fraudulent.

Physically retaking thumbprints from around 20,000 random voters and comparing them with Nadra records could remove confusion about unverifiable votes.

The second option is reviewing whether electoral irregularities’ levels documented by observers (eg Fafen) justify nullifying results. However, this will be highly judgmental since for most irregularities it is difficult to quantify the extent of rigging they caused.

Observers have not tabulated or analysed their irregularity data strategically, making such review difficult.

The third option is reviewing ECP vote tabulation forms, as Fafen suggests, though this will only cover vote miscounting, not suppression and fraud.

Fafen suggests nullifying elections in constituencies where major forms are missing. But in such cases, physical recounting of votes should be done before ordering re-elections.

The fourth option is reviewing tribunal decisions. Again, random sampling and adequate sample sizes will be needed, which could prolong this exercise.

The fifth option is interrogating returning officers, candidates, voters and other stakeholders. The issue here is the extent of admissible evidence they could provide.

Would commission findings be appealable and how many rigged constituencies would be required in each assembly to justify its dissolution: numbers that make the majority a minority?

It may be wise to leave most such decisions to the commission while recognising that it would have no magic wand to resolve all complications fully and issue widely acceptable judgments. Both parties must recognise these complexities to ensure a smooth inquiry and ready acceptance of inquiry results.

The writer is a governance specialist.

murtazaniaz@yahoo.com

Published in Dawn, November 2nd, 2014