Featured Post

Wake up Now ! جاگو ، جاگو ، جاگو

Wake up Pakistan ! Presently the Muslim societies are in a state of ideological confusion and flux. Materialism, terrorism,...

Saturday, March 15, 2014

Madaris Reforms & Terrorism

سوال یہ ہے کہ کیا اس حوالے سے دینی مدارس کا کردار قابلِ اصلاح نہیں ہے؟ میرے نزدیک اس کا جواب اثبات میں ہے۔ میں چند امور کی یہاں نشان دہی کر رہا ہوں۔
1۔ پاکستان میں مدارس کی تنظیم مسلک کی بنیاد پر ہوئی۔ یہاں دین نہیں، مسلک کی تعلیم دی جا تی ہے۔ یوں سماج میں مسلکی تقسیم کا سب سے بڑا ماخذ دینی مدارس ہیں۔
2۔ پاکستان میں دوسرے مذہبی مسالک کے خلاف تکفیر سمیت جو بھی انتہا پسندانہ رحجانات اٹھے، اُن سب کا سرچشمہ دینی مدارس اور ان کے فارغ التحصیل لوگ ہیں۔
3۔ طالبان پاکستان میں جس دینی تعبیر کی بنیاد پر مسلح جدوجہد کر رہے ہیں، اس کا دینی استدلال بھی ان لوگوں نے فراہم کیا جن کا تعلق دینی مدارس سے تھا۔ تحریکِ طالبان پاکستان جس شوریٰ کے تابع ہے وہ انہی مدارس کے فارغ علما پر مشتمل ہے۔ طالبان اگر سماج کے کسی طبقے کا احترام کرتے ہیں تو وہ یہی علما ہیں۔ ظاہر ہے کہ یہ کسی اتفاق کی وجہ سے ہے نہ ذاتی تعلق کے سبب سے۔ 
4۔ مدارس کا یہ نظام ریاست کے قانون سے نہیں چلتا۔ اس کے نصاب میں حکومت کا کوئی حصہ ہے نہ انتظام میں۔ مثال کے طور پر سرکاری تعلیم کے اداروں میں اس وقت استاد کے انتخاب کے لیے ایک معیار ہے۔ اسی طرح اس کے عزل و نصب کا ایک قانون ہے۔ دینی مدارس میں مہتمم مختارِ کل ہے۔ تنخواہ کا کوئی نظام ہے نہ ملازمت کا کوئی تحفظ۔ اس کے معاشی معاملات بھی کسی سرکاری نظام کے تابع نہیں۔
دینی مدارس کے منتظمین اکثر یہ کہتے ہیں کہ پاکستان میں کوئی مدرسہ ایسا نہیں جہاں دہشت گردی کی تربیت دی جاتی ہو۔ یہ بات درست ہو گی لیکن اس امرِ واقعہ کا انکار محال ہے کہ ان مدارس میں جو مسلکی اور گروہی عصبیت پیدا کی جاتی ہے، وہ انتہا پسندی کو جنم دیتی ہے جو دہشت گردی کی جانب پہلا قدم ہے۔ اسی طرح ان مدارس سے فارغ التحصیل لوگ اس قوم کا حصہ ہوتے ہوئے بھی اپنے ظاہری حلیے اور سوچ میں عام آ دمی سے مختلف ہیں۔ کوئی شبہ نہیں کہ اس معاشرے کو جس طرح ڈاکٹرز، انجینئرز اور دیگر شعبوں کے ماہرین کی ضرورت ہے، اسی طرح دینی علوم کے ماہرین کی بھی ضرورت ہے۔ آج ڈاکٹر ہو یا انجینئرز، استاد ہو یا سرکاری اہلکار، سب ایک دوسرے سے مختلف نہیں لگتے۔ اگر وہ 
خود نہ بتائیں تو انہیں دیکھ کر یہ اندازہ نہیں کیا جا سکتا کہ وہ ڈاکٹر ہیں یا استاد۔ دینی مدارس سے متعلق لوگوں کا معاملہ یہ نہیں۔ قومی سطح پر یک رنگی پیدا کرنے کا ایک ہی طریقہ ہے۔ تمام بچوں کو ایک جیسی بنیادی تعلیم دی جائے۔ اس کے بعد جو ڈاکٹر بننا چاہے وہ ڈاکٹر بنے اور جو عالم بننا چاہے وہ عالم۔ اگرکوئی مدارس کو قومی دھارے میں لانے کی بات کرتا ہے تو اس کا مفہوم یہی ہوتا ہے۔
ہمارے ہاں ایک مسئلہ اور بھی ہے۔ ہم پیشہ ورانہ اور گروہی عصبیت کے حوالے سے سوچتے ہیں۔ دینی مدارس میں اصلاح کی بات کی جائے تو جواباً کہا جاتا ہے کہ صحافت کی بات کیوں نہیں کی جاتی؟ صحافیوں سے اصلاح کی درخواست کریں تو ان کا موقف ہوتا ہے، فوج کو کیوں نہیں کہتے؟ امرِ واقعہ یہ ہے کہ سب کو اصلاح کی ضرورت ہے۔ میں دینی مدارس پر کالم لکھوں گا تو ظاہر ہے کہ اہلِ صحافت زیرِ بحث نہیں آئیں گے۔۔۔۔۔ علیٰ ہٰذاالقیاس۔ میں نے مجلس صوت الاسلام کے جس اجتماع کا ذکر کیا، اس میں مو لانا زاہدالراشدی نے ایک دلچسپ نکتہ اٹھایا۔ ان کا کہنا تھا کہ جس کورس کی یہ اختتامی نشست ہے، اس کا عنوان بتا رہا ہے کہ علما کو بھی تربیت کی ضرورت ہوتی ہے۔ واقعہ یہ ہے کہ ہم سب کو تربیت کی ضرورت رہتی ہے اور اس کے لیے دل و دماغ کے دروازے کھلے رہنے چاہئیں۔ قومی سلامتی کی داخلی پالیسی میں مدارس کے خلاف کوئی بات نہیں کہی گئی۔ دیگر اداروں کے ساتھ ان کی اصلاح کا معاملہ بھی اٹھایا گیا ہے۔ پھر یہ کہ اس اصلاح کے لیے کوئی اقدام تجویز نہیں کیا گیا۔ اقدام سے پہلے دینی مدارس کے ذمہ داران سے مشاورت کی بات کی گئی ہے۔ میرا خیال ہے کہ اسے غوروفکر کی بنیاد بنانا چاہیے نہ کہ احتجاج کی۔ 
Khursheed Nadeem
Dunya.com.pk

* * * * * * * * * * * * * * * * * * *
Humanity, Religion, Culture, Ethics, Science, Spirituality & Peace
Peace Forum Network