Featured Post

Wake up Now ! جاگو ، جاگو ، جاگو

Wake up Pakistan ! Presently the Muslim societies are in a state of ideological confusion and flux. Materialism, terrorism,...

Tuesday, January 29, 2013

Gorbachev of Punjab- What Next: پنجاب کی تقسیم

Sharifs have failed to provide leadership, they have been outplayed by Zardari, who forced them to play on backfoot. They lack initiative playing reactive politics.  Punjab is being divided like a cake. NAP of KPK is eying on Mianwali & Bhakkar, advising on Bahawalnagar. People are reacting in Mianwali and other places while Sharifs are waiting for their turn to rule. They blame Musharaf for throwing them out, if they can't do politics should concentrate on their buisness. 
Shahbaz Sharif behaved like mayor of Lahore. The expensive Metro Bus project is the last nail to their misrule. 
They can sieze initiative by proposing more provinces in Punjab on administrative grounds 3, 4 or even 5. This will create demand &, chain reaction in other provinces for more manageable administrative units. 10 to 15 provinces in Pakistan on administrative grounds should be helpful.
~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~
Challenge of new provinces
THE debate on creating new provinces in Pakistan is gaining momentum with the proposal approved by the parliamentary commission to create a new province — ‘Bahawalpur Janoobi Punjab’.

But the fundamental question which needs to be addressed while considering the demand for new provinces is: should the new provinces be established on an administrative or ethnic basis? The existing four provinces are carved along ethnic lines though the option to redraw provincial boundaries along administrative lines has been presented.

It is not only the rationale behind demanding a change in Pakistan’s federal structure that needs to be addressed; the issue that must also be examined is the potential for violence and conflict if new provinces are created without taking into consideration the interests of ethnic minorities and other stakeholders.

This is especially true when the Pakistan Muslim League-Nawaz, which rules Punjab, is not on board. One can expect the deepening of political polarisation and the consequent impact on the election campaign.

While intolerance, extremism, radicalisation and terrorism shape the political landscape of Pakistan today, those demanding the recognition of their identities have threatened to follow a violent course if their right to a separate provincial identity is not granted.

Three contradictory factors which influenced the issue of creating new provinces in Pakistan were religion, nationalism and centralisation. The argument that the identity of Pakistan rested with Islam as a major unifying force was exploited by the bureaucratic-military establishment which wanted to suppress nationalistic forces and establish a unitary instead of federal state.

It was argued that the existence of Pakistan would be in jeopardy if ethnic and lingual identities were given legitimacy in the shape of new provincial units. The feudal-religious-bureaucratic-military nexus led to the creation of One Unit with the dissolution of the provinces in 1955 in West Pakistan as a counterweight to East Pakistan which had the demographic edge.

Although the provinces of Balochistan, North-West Frontier Province, Punjab and Sindh were restored according to the legal framework order proclaimed in 1970, since then no change in the federal map of Pakistan has taken place.

It was only in 2010 and after that the demand for new provinces gained impetus and became part of a serious political discourse. Renaming the NWFP (now Khyber Pakhtunkhwa) in the 18th Amendment was termed a major shift in the political landscape, and it immediately led to a reaction in the Hazara division of KP, with demands being made that a provincial status be granted to the division.

The tabling of the 20th Constitutional Amendment Bill by the Muttahida Qaumi Movement last year in the National Assembly, that sought the creation of new provinces in Punjab and KP, gave impetus to forces seeking recognition of distinct provincial identities.

The question is: why is the redrawing of provincial boundaries limited only to Punjab and KP and why not Sindh and Balochistan?

It is argued by some that when an initiative can be taken in parliament to debate the creation of Bahawalpur, Seraiki and Hazara provinces, a similar debate should be launched for redrawing the boundaries of Balochistan and Sindh. Why is the parliamentary commission only Punjab-specific and how can the constitutional requirements to create new provinces be met when the majority of Punjab Assembly members do not support the division of their province?

Constitutional ambiguity and impediments in the way of creating new provinces in Pakistan aside, perhaps the most important challenge in the process of redrawing the provincial boundaries is the potential for violence and conflict.

Three major demands for the creation of new provinces centre on Seraiki, Bahawalpur and Hazara provinces. But in all three cases, there is the likelihood of stakeholders — whether the ethnic majority or minority — not accepting the borders on historical, lingual, economic, political and ethnic grounds, thus increasing the possibility of conflict.

Even the name given to the new province — Bahawalpur Janoobi Punjab — may not pre-empt resistance from communities, particularly settlers, who may not feel comfortable in a new provincial set-up.

The case of the proposed Hazara province is further complicated because the bureaucracy in that division is Pakhtun-dominated whereas demographically there is an ethnic overlap. There is the threat of resistance on the part of the non-Hindko-speaking population of Hazara if minorities, namely the Pakhtuns, are marginalised in the proposed province.

In May 2012, PML-N members in the KP Assembly submitted a resolution in the provincial assembly secretariat asking the government to amend the constitution to create Hazara province composed of six districts of KP. Can those supporting the creation of a Hazara province get two-thirds majority in the assembly for the fulfilment of their demand?

There are two options to successfully deal with the potential outbreak of conflicts if new provinces are created or the status quo is maintained.

The first is to hold a referendum in areas where there is lack of consensus among the stakeholders — particularly in Hazara, Bahawalpur and Seraiki-speaking areas — to determine what the local people want. Second, instead of being created on an ethnic basis, new provinces could be established along administrative lines so that the threat of ethnic violence is averted.

The future parliament of Pakistan needs to seriously probe the fault lines when it comes to meeting the demand for new provinces.

The writer is a professor of International Relations, University of Karachi.
amoonis@hotmail.com


http://dunya.com.pk/news/authors/detail_image/1729_11510967.jpg
<<Free-eBooks Click here>>> 

Sunday, January 27, 2013

Democracy is the best Revenge? جمہوریت کا انتقام


 سلطنتِ روما کی داستانِ زوال میں ہرقوم کے لیے عبرت کا وافر سامان موجود ہے۔ ایک طرف 
عوام ناقابلِ برداشت مصائب و آلام میں گرفتار تھے اور دوسری طرف حکمران غفلت، بے وفائی، مفاد پرستی، ذاتی عیش و عشرت اور نام و نمود میں ایسے منہمک تھے، جیسے ملک و قوم کے اصل مسائل، مصائب اور مشکلات سے ان کو کوئی دل چسپی ہی نہ ہو۔ اس المیے کو ایک ضرب المثل میں اس طرح سمو دیا گیا ہے کہ ’’روم جل رہا تھا اور نیرو بانسری بجا رہا تھا‘‘۔
قائداعظمؒ کی ولولہ انگیز اور بے داغ قیادت میں اور ملت اسلامیہ پاک و ہند کی بیش بہا قربانیوں کے نتیجے میں قائم ہونے والے پاکستان کو صرف ۶۵سال کے عرصے میں خودغرض اور ناکام قیادتوں کے طفیل آج ایسی ہی کرب ناک صورت حال سے سابقہ ہے۔ ۲۰۰۸ء میں جمہوریت کے نام پر وجود میں آنے والی حکومت تو پاکستان پیپلزپارٹی کی ہے۔ لیکن اس کو سہارا دینے اور بیساکھیاں فراہم کرنے والوں میں عوامی نیشنل پارٹی، متحدہ قومی محاذ اور مسلم لیگ (ق) کا کردار بھی کچھ کم مجرمانہ نہیں۔ ستم ظریفی ہے کہ پاکستان مسلم لیگ (ن) بڑی حزبِ اختلاف ہونے کے باوجود محض ’جمہوریت کے تسلسل‘ کے نام پر حقیقی اور جان دار حزبِ اختلاف کا کردار ادا نہ کرسکی اور عوام کے حقوق کے دفاع، دستور اور قانون کی حکمرانی کے سلسلے میں اپنی ذمہ داریاں پوری کرنے سے قاصر رہی۔ پھر ایسی دینی قوتیں بھی ذمہ داری سے بری قرار نہیں دی جاسکتیں جو کبھی اندر اور کبھی باہر، اور جب مرکز سے باہر ہوں تب بھی صوبے میں شریکِ کار اور جہاں ممکن ہوسکے وہاں اقتدار کی کرسیوں پر براجمان۔
یہ منظر نامہ بڑا دل خراش اور عوام کو سیاسی قیادت سے مایوس کرنے والا ہے لیکن قوموں کی زندگی میں یہی وہ فیصلہ کن لمحہ ہوتا ہے جب مایوسی اور بے عملی، جو دراصل تباہی اور موت کا راستہ ہے، کے بادلوں کو چھانٹ کر تبدیلی، نئی زندگی اور مقصد کے حصول کے لیے نئی پُرعزم جدوجہد وقت کی ضرورت بن جاتے ہیں۔ مایوسی اور بے عملی تباہی کے گڑھے میں لے جاتے ہیں اور بیداری اور جدوجہد نئی صبح کا سامان فراہم کرتے ہیں۔ پاکستانی قوم اس وقت ایک ایسے ہی فیصلہ کن دوراہے پر کھڑی ہے۔
موجودہ حکومت کو بڑا تاریخی موقع ملا تھا۔ فوج کی قیادت نے ماضی کے تلخ تجربات اور فوجی مداخلت کے بار بار کے تجربات کی ناکامی کی روشنی میں بڑی حد تک اپنی دل چسپیوں کو اپنے ہی دستور میں طے کردہ اور منصبی دائروں تک محدود رکھا۔ اعلیٰ عدلیہ جو جسٹس محمد منیر کے چیف جسٹس بن جانے کے دور سے ہرآمر اور ظالم حکمران کی پشت پناہی کرتی رہی تھی، پہلی بار بڑی حد تک آزاد ہوئی اور اس نے دستور اور قانون کی بالادستی کے قیام کے بارے میں اپنی ذمہ داری کو ایک حد تک ادا کرنے کی کوشش مستعدی اور تسلسل کے ساتھ انجام دی جس پر اسے عدالتی فعالیت (Judicial activism)، حتیٰ کہ دوسرے اداروں کے معاملات میں مداخلت تک کا نام دیا گیا اور ان حلقوں کی طرف سے دیا گیا جنھیں اپنے لبرل اور جمہوری ہونے کا اِدعا ہے۔ ان میں سے کچھ بائیں بازوسے وابستہ اورترقی پسند ہونے کے بھی مدعی ہیں، حالانکہ اہلِ علم جانتے ہیں کہ بنیادی حقوق اور دستور پر عمل درآمد، دونوں کی آخری ذمہ داری عدلیہ پر ہے۔ دستور میں دفعہ ۱۸۴شامل ہی اس لیے کی گئی ہے کہ جب دستوری حقوق کو پامال کیا جائے تو عدالت مداخلت کرے، خواہ یہ مداخلت اسے کسی ستم زدہ کی فریاد پر کرنی پڑے یا ازخود توجہ کی بنیاد پر اسے انجام دیا جائے۔یہ وہ نازک مقام ہے جہاں ایک سیاسی مسئلہ دستور کے طے کردہ اصول کے نتیجے میں بنیادی حقوق کا مسئلہ بن جاتا ہے اور عدالت کے دائرۂ کار میں آجاتا ہے۔ اسی طرح پریس کی جزوی آزادی بھی ایک نعمت تھی جس کے نتیجے میں عوام کے مسائل اور مشکلات کے اخفا میں رہنے کے امکانات کم ہوگئے اور وہ سیاسی منظرنامے میں ایک مرکزی حیثیت اختیار کرگئے۔
ان سارے مثبت پہلوؤں کو اس حکومت نے خیر اور اصلاح احوال کے لیے مددگار عناصر سمجھنے کے بجاے اپنا مخالف اور ان دونوں ہی اداروں کو عملاً گردن زدنی سمجھا، اور ایک منفی رویہ اختیار کیا جسے مزید تباہ کاری کا ذریعہ بنانے میں بڑا دخل خود ان کی اپنی ٹیم کی نااہلی (جس کی بڑی وجہ دوست نوازی، اقربا پروری اور جیالا پرستی تھی)، وسیع تر پیمانے پر بدعنوانی (corruption) اور مفاد پرستی کی بلاروک ٹوک پرستش کا رہا جس کے نتیجے میں ملک تباہی کے دہانے پر لاکھڑا کیا گیا ہے۔ سپریم کورٹ کے ۵۰سے زیادہ احکام کی کھلی کھلی خلاف ورزی کی گئی ہے اور توہین عدالت کی باربار کی وارننگ اور چند مواقع پر سزاؤں کے باوجود اسی روش کو جاری رکھا گیا ہے۔ انتظامی مشینری کو سیاسی اور ذاتی مقاصد کے لیے بے دریغ استعمال کیا جا رہا ہے۔ معیشت کو اگر ایک طرف لوٹ کھسوٹ کے ذریعے تباہ کردیا گیا ہے تو دوسری طرف غلط پالیسیاں، توانائی کا فقدان، پیداوار میں کمی، تجارتی اور ادایگیوں کے خسارے میں بیش بہا اضافہ، مہنگائی کا طوفان، بے روزگاری کا سیلاب اور اس پر مستزاد حکمرانوں کی شاہ خرچیاں اور دل پسند عناصر کو لُوٹ مار کی کھلی چھوٹ نے کہیں کا نہیں چھوڑا۔ خود نیب کے سربراہ کے بقول روزانہ کرپشن ۱۰سے ۱۲؍ارب روپے کی ہورہی ہے جس کے معنی یہ ہیں کہ ملک کے سالانہ بجٹ سے بھی کچھ زیادہ قومی دولت کرپشن کی نذر ہورہی ہے۔ ملک کے عوام اپنی ہی دولت سے محروم کیے جارہے ہیں اور اس کا نتیجہ یہ ہے کہ ملک دیوالیہ ہونے کے کنارے پر کھڑا ہے۔ سارا کاروبارِ حکومت قرضوں پر چل رہا ہے جن کا حال یہ ہے کہ قیامِ      
 6 پاکستان سے ۲۰۰۸ء تک ملکی اور بیرونی قرضوں کا جو مجموعی بوجھ ملک و قوم پر تھا وہ ۶ٹریلین روپے کے لگ بھگ تھا جو ان پونے پانچ سالوں میں بڑھ کر اب 14  ۱۴ٹریلین کی حدیں چھو رہا ہے۔
ملک میں امن و امان کی زبوں حالی ہے اور جان، مال اور آبرو کا تحفظ کسی بھی علاقے میں حاصل نہیں لیکن سب سے زیادہ بُرا حال صوبہ خیبرپختونخوا، فاٹا، بلوچستان اور عروس البلاد کراچی کا ہے، جو پاکستانی معیشت کی ریڑھ کی ہڈی کی حیثیت رکھتا ہے۔ کراچی کا عالم یہ ہے کہ کوئی دن نہیں جاتا کہ دسیوں افراد لقمۂ اجل نہ بن جاتے ہوں۔ کروڑوں روپے کا روزانہ بھتہ وصول کیا جاتا ہے اور اربوں کا روزانہ نقصان معیشت کو پہنچ رہا ہے۔ Conflict Monitoring Centreکی تازہ ترین رپورٹ کے مطابق صرف ۲۰۱۲ء میں ملک میں تشدد اور دہشت گردی کے ۱۳۴۶واقعات میں ۲۴۹۳؍افراد ہلاک ہوئے ہیں۔ نیز صرف اس سال میں امریکی ڈرون حملوں سے جاں بحق ہونے والوں کی تعداد ۳۸۸ہے (دی نیوز، ۲۸دسمبر ۲۰۱۲ء)۔ ایک اور آزاد ادارہ (FAFEEN) حالات کو باقاعدگی سے مانٹیر کر رہا ہے۔ اس کی تازہ ترین رپورٹ بتاتی ہے کہ صرف دسمبر ۲۰۱۲ء کے تیسرے ہفتے میں ملک میں لاقانونیت کے رپورٹ ہونے والے واقعات ۲۴۱ہیں جن میں ۷۵؍افراد ہلاک ہوئے اور ۱۶۶زخمی (ایکسپریس ٹربیون، ۲۶دسمبر ۲۰۱۲ء)۔ اناللّٰہ وانا الیہ راجعون۔
ان تمام ناگفتہ بہ حالات کے ساتھ ملک کی سیاسی آزادی کی مخدوش صورت حال، ملک کے اندرونی معاملات میں امریکا کی بڑھتی ہوئی مداخلت اور پالیسی سازی پر فیصلہ کن اثراندازی نے محکومی اور غلامی کی ایک نئی مصیبت میں ملک کو جھونک دیا ہے۔ جمہوری حکومت کے کرنے کا پہلا کام مشرف دور میں اختیار کی جانے والی امریکی دہشت گردی کی جنگ سے نکلنا تھا، اور پارلیمنٹ نے اکتوبر ۲۰۰۸ء میں حکومت کے قیام کے چھے مہینے کے اندر واضح قرار داد کے ذریعے جنگ سے نکلنے، آزاد خارجہ پالیسی اختیار کرنے اور سیاسی مسائل کے سیاسی حل کے راستے کو اختیار کرنا کا حکم دیا تھا، لیکن حکومت نے پارلیمنٹ کے فیصلے اور عوام کے مطالبے کو درخور اعتنا نہ سمجھا اور امریکی غلامی کے جال میں اور بھی پھنستی چلی گئی۔ آج یہ کیفیت ہے کہ ۴۵ہزار سے زیادہ جانوں کی قربانی دینے ، ایک لاکھ سے زیادہ کے زخمی ہونے اور ۳۰لاکھ کے اپنے ملک میں بے گھر ہوجانے اور ۱۰۰؍ارب ڈالر سے زیادہ کے نقصانات اُٹھانے کے باوجود پاکستان امریکا کا ناقابلِ اعتماد دوست اورعلاقے کے دگرگوں حالات کے باب میں اس کا شمار بطور ’مسئلہ‘ (problem) کیا جارہا ہے، ’حل‘ (solution) میں معاون کے طور پر نہیں ۔ جس طرح خارجہ پالیسی ناکام ہے اسی طرح دہشت گردی کو ختم کرنے کے لیے عسکری حکمت عملی بھی بُری طرح ناکام رہی ہے اور عالم یہ ہے کہ مرض بڑھتا گیا جوں جوں دوا کی!
یہ وہ حالات ہیں جن کا تقاضا ہے کہ کسی تاخیر کے بغیر عوام کو نئی قیادت منتخب کرنے کا موقع دیا جائے تاکہ دلدل سے نکلنے کی کوئی راہ ہو اور جمہوری عمل آگے بڑھ سکے۔ ان حالات میں پانچ سال کی مدت پوری کرنے کی رَٹ ناقابلِ فہم ہے۔ دستور میں پانچ سال کی مدت محض مدت پوری کرنے کے لیے نہیں ہوتی، اچھی حکمرانی کے لیے ہوتی ہے۔ دنیا کے جمہوری ممالک کی تاریخ گواہ ہے کہ اصل مسئلہ اچھی حکمرانی ہے، مدت پوری کرنا نہیں۔ یہ کوئی ’عدت‘ کا مسئلہ نہیں ہے کہ شرعی اور قانونی اعتبار سے دن پورے کیے جائیں۔ دستور ہی میں لکھا ہے کہ وزیراعظم یا وزیراعلیٰ جب چاہیں نیا انتخاب کراسکتے ہیں۔ اسی طرح اگر ایوان اس پوزیشن میں نہ ہو کہ اکثریت سے قائد منتخب کرسکے تو اسمبلی تحلیل ہوجاتی ہے۔ برطانیہ میں گذشتہ ۶۵برس میں نو مواقع ایسے ہیں جب پارلیمنٹ کا انتخاب دستوری مدت پوری کرنے سے پہلے کیا گیا ہے۔ اٹلی اور یونان میں اس وقت بھی یہ مسئلہ درپیش ہے۔ خود بھارت میں آزادی کے بعد سے اب تک ۱۱بار میعاد سے پہلے انتخابات ہوئے ہیں اور ہمارے ملک میں تو اب پونے پانچ سال ہوچکے ہیں۔ ۱۶مارچ ۲۰۱۳ء کو یہ مدت بھی ختم ہونے والی ہے جس کے بعد ۶۰دن میں انتخاب لازمی ہیں۔ مئی کا مہینہ موسم کے اعتبار سے انتخاب کے لیے ناموزوں ہے۔ سیاسی اور معاشی اعتبار سے بھی یہ وقت اس لیے نامناسب ہے کہ ملک کا بجٹ ۳۰جون سے پہلے منظور ہوجانا چاہیے اور اگر مئی میں انتخابات ہوتے ہیں تو جون کے وسط تک حکومت بنے گی۔ اتنے کم وقت میں بجٹ سازی ممکن نہیں۔ اس لیے وقت کی ضرورت ہے کہ جنوری میں اسمبلیاں تحلیل کرکے ۶۰دن کے اندر 
انتخابات کا انعقاد کیا جائے۔ اس کے سوا کوئی راستہ نہیں۔

  پاکستان کا موجودہ سیاسی بحران 

پروفیسر خورشید احمد: http://tarjumanulquran.org/site/publication_detail/325

تبصرہ 
ایسا معلوم ہوتا ہے کہ ملک پر حکومت کرنے والے یا تو پاگل ہیں یا ملک کے دشمن جو کے عوام سے انتقام لے رہے ہیں جمہوریت بہترین انتقام ہے  

Friday, January 25, 2013

The Ethical Ideal - Legacy of Prophet (pbuh)

IT can be argued that the biggest dilemma confronting the Muslim world currently is a moral and ethical one. The root cause of all the major ills that plague Muslims — ignorance, poverty, intolerance, etc — is the fact that many of us have failed to apply the practical ethics taught by Islam in our everyday lives.

The Quran and Sunnah contain very clear guidelines regarding the construction of an ethical personality. The Almighty desires that each individual reach the exalted station of ashraf al-makhluqat, the pinnacle of creation. Yet most Muslims are content — out of either lack of direction or lack of effort — to be counted amongst the asfala safileen, or the lowest of the low. The disastrous results of such a course of action are clear for all to see.

But what is strange is that in a country like Pakistan, which is so full of religiosity and claims to be an ‘Islamic’ society, there is a huge moral and ethical vacuum. This either means that the majority of us are hypocrites, or we have not endeavoured far enough into the bottomless oceans of knowledge to seek out the pearls of truth — and act upon it. One would like to believe the latter is the case.

Considering that Rabiul Awwal, and particularly this day, is linked to the blessed birth of the Holy Prophet (PBUH) — that greatest of teachers and possessor of the most sublime morals — it would be in order to reacquaint ourselves with the examples of moral excellence found in the life of the Messenger. This is important for two reasons.

Firstly, in order to improve our own ethical situation we need to go beyond just professing love for the Prophet and try to apply his example to our own lives. Secondly, in the wake of crude attempts by some to malign his impeccable character, Muslims need to practically demonstrate to other communities what it means to be a follower of the Messenger. In other words, burning down our own cities to ‘protect’ his honour is light years away from the example he has set; building a compassionate, knowledgeable, egalitarian and indeed ethical society is in line with what the Prophet taught.

To get a proper idea about the personality of the Prophet, we must consult the traditional primary sources of Islam: the Quran and the authentic hadith. This is important for as Iranian scholar Prof Syed Hossein Nasr argues in his book Ideals and Realities of Islam, “In order to understand the significance of the Prophet it is not sufficient to study from the outside historical texts pertaining to his life. One must view him also from within the Islamic point of view. …”

However, it is also important to consider what those outside of Islam say about the Prophet, especially regarding his moral excellence. While there is much spurious material available in historical texts meant to malign the Prophet’s character — due partly to Orientalist biases against Islam and partly due to the early controversies regarding the recording of hadith within the Islamic realm — there are some truly remarkable and frank admissions from non-Muslim thinkers regarding the Messenger’s ethical excellence.

For example English historian Edward Gibbon says in History of the Saracen Empire, which he co-authored: “The greatest success of Muhammad’s (PBUH) life was effected by sheer moral force without the stroke of a sword.” On the other hand Mahatma Gandhi is quoted to have said: “I became more … convinced that it was not the sword that won a place for Islam. … It was the rigid simplicity, the utter self-effacement of the Prophet, the scrupulous regard for his pledges, his intense devotion to his friends and followers, his intrepidity, his fearlessness, his absolute trust in God and in his own mission.”

Aside from the words of such luminaries of history, most Muslims have — from childhood — heard traditions in which the moral excellence and outstanding character of the Prophet have been highlighted. Traditions which speak of his magnanimity towards adversaries, his tenderness towards the weak, the poor and the downtrodden of society, his love of knowledge, his dislike of arrogance and ostentation, his simplicity etc. Yet if we study our own society most of these values are completely absent, despite our claims of love for the Prophet.

Instead, what we find here and in most Muslim states is a vicious society steeped in ignorance, malice and exploitation. Justice — the foundation upon which an Islamic society is built — is completely absent. And those who talk of imposing Sharia present a frightening, mutilated version of Islam, one which is at complete odds with the Prophet’s Islam.

This disconnect between what we preach and what we practise must be urgently addressed in order to reform society. The pulpit must be at the forefront of this struggle: instead of focusing on relatively minor issues and fanning differences, society’s shortcomings (and their solutions) must be highlighted in mosques. This is admittedly a tall order, but until the pulpit — perhaps the most powerful of religious platforms — is used to construct a better society, change will not be forthcoming.

Going back to what Prof Nasr has written, in the Holy Quran the Almighty announces that He and the angels confer blessings upon the Prophet, going on to order those who believe to do the same (‘Surah Ahzab’). Such is the stature of the Noble Messenger that without conferring blessings upon him and his progeny the daily prayers are incomplete. These are clear signs for those who believe that there is no better an example to emulate in order to achieve excellence in this world and the next.
By  Qasim A Moini: http://dawn.com/2013/01/25/the-ethical-ideal
eBooks:

<<Free-eBooks Click here>>> 

Asma Jahangir: The Interim PM - Choice of Nawaz Sharif

Nawaz Sharif is a man of average intellect who lacks vision. He selected Parvez Musharaf as Army Chief by passing senior Generals who were much batter. This one error cost him and nation dearly. Now he wants Asma Jahangir a highly controversial  secular lady to be next Interim Prime Minister. It appears Nawaz Sharif have not learnt anything from his own follies...
aj
بہت کم لوگ جانتے ہوں گے اور بہت سے جاننے والے بھی شاید بھول چکے ہوں گےکہ 18مئی 1984 کو آقائے نامدار، نبیء آخر الزمان صلی اللہ علیہ وسلم کی شان میں سخت بے ادبی کرنے والی گستاخ رسالت خاتون کوئی عیسائی، یہودی یا ہندو کافرہ نہیں بلکہ انجہانی بال ٹھاکرے کی نام نہاد مسلمان داسی عاصمہ جہانگیرتھیں۔ احباب کو یاد دلاتا چلوں کہ اس حیا باختہ و ملعون   خاتون نےمعلم انسانیت اوربعد ازخدا بزرگ ہستی، تاجدارختم نبوت صلی اللہ علیہ وسلم کا ذکر(اس کےمنہ میں خاک) “تعلیم سے نابلد” اور” ان پڑھ” کہہ کرکیا تھا۔ یہ گستاخانہ کلمات امریکی سامراج، تل ابیب مافیہ اور بال ٹھاکرائی ہندوآتہ کی چہیتی عاصمہ جہانگیر نے مغرب رسیدہ، افرنگ زدہ، آوارگیء نسواں کی علمبردارعورتوں کے اسلام آباد میں منعقد کردہ سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے کہے تھے۔ اس حوالے سے روزنامہ جسارت کی رپورٹ کے مطابق ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔
‘خواتین محاذِ عمل اسلا م آباد کے ایک جلسے میں صورتِ حال اس وقت سنگین ہو گئی، جب ایک خاتون مقررعاصمہ جیلانی نے شریعت بل کیخلاف تقریر کرتے ہوئے سرورِ کائنات صلی اللہ علیہ وسلم کے بارے میں غیر محتاط زبان استعمال کی۔ اس پر ایک مقامی وکیل نے احتجاج کیا اورکہا کہ رسولِ خداکے بارے میں گفتگو کرتے ہوئے محتاط رہنا چاہیے۔جس پر دونوں کے درمیان تلخی ہو گئی اور جلسے کی فضا کشیدہ ہو گئی۔عاصمہ جہانگیر نے اپنی تقریر میں “تعلیم سے نابلد” اور” ان پڑھ ” کے الفاظ استعمال کیے تھے۔” (جسارت ،کراچی18مئی 1984ء)
aj2
مسلمز کے قاتل نریندر مودی کے ساتھ
این جی اوز کے کاروبارِ خدمتِ انسانیت کی آڑ میں روشن خیالی کا سیاہ سامراجی لبادہ اوڑھے  عاصمہ جہانگیر جیسے یہ لوگ انساینت کی نام نہاد خدمت کا فریضہ سرانجام دے رہے ہیں یا سامراجی آقاؤں کی آلہ کاری کے ساتھ ساتھ پاکستان کے بدترین دشمن بھارت اور اینٹی اسلام ھندوآتہ لابی کے گماشتے بن کر پاکستان کے سیاسی اور انتظامی اداروں کو تباہ و برباد کرنے کے دجالی مشن پرعمل پیرا ہیں۔ حیف صد حیف کہ ایسے عناصر کو مختاراں مائی جیسے وہ مغرب ساختہ مظلوم کردارنظر تو آتے ہیں جو اسلامی طرزمعاشرت پرعالم دہرکی تنقید اور پاکستانی معاشرے کی تذلیل کیلئے استعمال ہوں لیکن کشمور سے بدین تک سیلاب سے تباہ شدہ بستیوں میں وڈیروں کے ہاتھوں جنسی بربریت کا نشانہ بننے والی معصوم بچیاں نظر نہیں آتیں۔انسانیت اورحب المجبورکی علم بردار اس خاتون کیلئے ملالہ یوسف زئی کے مشکوک دکھوں سے اظہار یکجہتی کیلئے شمعیں جلانا توعین عبادت ہےمگر انسانیت کے قاتل سامراجی بھیڑیوں کے ڈرون حملوں میں مرنے والے معصومین کیلئے آواز اٹھانا کفر و دہشت گردی ہے۔ ملک و قوم کی بدقسمتی ہے کہ تمام اسلام دشمن اور پاکستان مخالف عناصر
aj1
ہنومان کی داسی احمد آباد مندر میں
لابیز کی آلہ کار یہ جوگیاتی محترمہ کبھی بدترین دجالی گروہ فتنہ ء قادیانیت کی سپورٹ کے گھوڑے پر سوار بار کونسل جیسے قانونی اداروں پر قابض ہو کر آزاد عدلیہ کو اپنے اشاروں پر نچانے کی کوششوں میں مصروف نظر آتی ہیں اور کبھی اسلام دشمن انجہانی بال ٹھاکرے کی مقدس یاترا اور قدم بوسی کیلئے ہنومانی جوگن کے لباس میں ان کے آستانہ مجوسیہ ممبئی میں جلوہ افروز ہوتی ہیں۔ کچھ حیرت نہیں کہ مسلمان کہلوانے والی یہ لادین ہستی ماتھے پر ہندوآتہ تلک لگائے مہا بھارت اور رامائن کے درس اور گنیش جی کی پوجا پاٹ میں بھی موجود ہوتی ہیں اورہندو رسومات کی ادائیگی بھی عین اسلامی رواداری اور انسان دوستی کا عظیم الشان مظاہرہ سمجھتی ہیں۔ یہی وہ خاتون ہیں جو قائد اعظم کے دیس اسلامی جمہوریہ پاکستان کی معزز شہری اور دانشور بھی ہیں مگر بھارتی ایوانوں میں مہاتمہ گاندھی جی کی تصویر کو پرنام کرتی بھی نظر آتی ہیں۔ اپنے مغربی آقاؤں کے ہر اسلام دشمن مہرے سے ان کی ازلی و ابدی وفا کا یہ عالم کہ احمد آباد گجرات میں بھارتی مسلمانوں کو زندہ جلا دینے والے سفاک قاتل نریندر مودی کو تحائف دینا بھی مہا پن گردانتی ہیں۔ یہ وہ عظیم خاتون ہیں جو بھارتی حکومت کو سکھوں کی لسٹیں فراہم کرنے والے ننگ آدم اعتزاز احسن کی طرح عدلیہ بحالی تحریک میں قومی دولت لوٹنے والوں کے احتساب کا نعرہ لگانے والوں میں بھی سب سے آگے ہوتی ہیں اور پھر قومی دولت لوٹنے والوں کی ہی کھلی حمایت میں آزاد عدلیہ کے خلاف محاذ آرائی میں بھی جدھردیکھیے یہی نظر آتی ہیں۔ اوجِ منافقت یہ کہ زرداری حکومتی کرپشن کے خلاف مظاہروں میں کرپشن مردہ باد کے نعرے بھی یہی لگاتیں ہیں  اور جناب راجہ رینٹل کی مصدقہ کرپشن کے خلاف سپریم کورٹ کے انصاف پر سب سے بڑھ کر سیخ پا بھی یہی نظرآتی ہیں۔ کمال حسن کارکردگی کہیے یا بدترین منافقت کہ یہی خاتون
aj3
روحانی پیشوا مہاتما گاندھی کو پرنام
امریکی سامراج کے خلاف نعرہ بھی لگا رہی ہوتی ہیں اور پھر اسی سامراج کے اشارے پردین اور دھرتی سےغداری کرنے والے امریکی ایجنٹ ڈاکٹرشکیل آفریدی کو بچانے کیلئے بھی میدان میں کود پڑتی ہیں۔۔۔۔۔ لیکن ہاں! ہرمیڈیا گروپ، ہر نیوز چینل اور پر ایک اینکر ہرایشو پرانکی”معتبر”رائےلینا اشدضروری اورسچی صحافت جانتا ہے، کرپشن کنگ زدراری ٹولہ ہو یا نون لیگ کے جمہوریت بردارسیاست دان، سونامی طوفان کےبازیگر ہوں یا مذہبی جماعتوں کے مومنین، کسی کو اس ننگ دین فتن کے خلاف بولنے کی جرات نہیں ہوتی۔ اکثر ٹاک شوز میں ان کے سیکولر اور کسی بھی پاکستانی کے تن من میں آگ لگا دینے والے نظریات کے جواب میں سیاسی و مذہبی کرداروں کی زبان سےعام طور پر صرف “میں عاصمہ صاحبہ کی بیحد عزت و احترام کرتا ہوں” جیسے روائتی الفاظ سن کر احساس ہوتا ہے کہ ہمارے ہاں سیاہ ست صرف منافقت کا نام ہے۔ سو سوائے لعنت اللہ علی الکاذبین والمنافقین اورکیا کہا جا سکتا ہے کہ۔۔۔ یہی ہے پیارا پاکستان ۔۔۔۔ منافقت زندہ باد۔۔۔ کفر دوستی زندہ باد۔۔۔ امن کی آشا زندہ باد۔۔ غریب عوام مردہ باد۔۔۔۔۔۔۔ دعا ہے کہ محترمہ عاصمہ جہانگیر کبھی بھی اپنے پیر بھائی سلمان تاثیر کی طرح روشن خیالوں کی نام نہاد”شہید” نہ بن پائیں لیکن ہاں فوزیہ وہاب جیسے دوسرے گستاخین قرآن و رسالت جیسا پراسرار انجام کون جانے کسے ملے۔۔۔۔۔۔۔ اللہ اکبر۔
aj4
بھگوان رام کی داسی کی احمد آباد مندر میں پوجا پاٹ ۔۔ سرپرست اعلی انجہانی بال ٹھاکرے کے ساتھ ممب
http://farooqdarwaish.com/blog/?p=2672
<<Free-eBooks Click here>>> 

Tuesday, January 22, 2013

Dr.Tahir ul Qadri vis Sharif Relationship - Myth & Reality

Qadri slams Sharif brothers for 'worst propaganda' against him



Fiery cleric Tahir-ul-Qadri, who led a massive protest against Pakistan government, has claimed that PML-N chief Nawaz Sharif and his brother Shahbaz Sharif, who had once "carried him on their shoulders" to show their love and respect for him, had now started the "worst propaganda" against him.

Qadri, who heads the Tehrik Minhaj-ul-Quran, said the incident had occurred some years ago when the Sharif brothers were living in self-exile in Saudi Arabia.

"Both brothers once carried me on their shoulders up to the Ghar-e-Hira (Holy Mountain) in Mecca just to express their love and devotion to my ideology. Now they have started the worst propaganda against me," said Qadri, who led a four-day sit-in by thousands of his supporters outside the Parliament here recently.
The cleric launched the protest to press the government to implement his charter of demands, including dissolution of Parliament and electoral reforms. The protest ended after Qadri and the government signed an agreement. 

Qadri was very close to the Sharifs in the 1990s but later fell out with them. He alleged at a news conference here yesterday that the Sharif brothers had allocated Rs three billion from the PML-N government fund in Punjab to launch a "character assassination" campaign against him in the media. "Both brothers are notorious for this," he added. 


Friday, January 18, 2013

Analysis of Long March Gains & Loss طاہر قادری کے لونگ مارچ کا اختتام


http://www.zemtv.com/2013/01/18/sawal-yeh-hai-we-leading-towards-real-democracy-18th-january-201
آزاد بے لاگ  تجزیہ ور تبصرہ  
 عامر خاکوانی کا تجزیہ
جمعہ کی شام اسلام آبادمیں جاری دھرنے کے خوشگوار اختتام نے جہاں ملک بھر کے عوام کی بے چینی اور اضطراب کو دور کر دیا ، وہاںاس غیرمعمولی اہم واقعے نے ہمارے سیاسی اور جمہوری نظام کو بھی کئی نئے سبق دیے ہیں۔ ہماری سیاسی جماعتیں لانگ مارچ اور دھرنے کے ہفتہ بھر کے تجربے سے بہت کچھ سیکھ سکتی ہیں۔پاکستان کے عوام، سیاسی اشرافیہ اور مقتدر قوتوں نے یہ بھی ثابت کر دیا ہے کہ ان میں کم عمر ہونے کے باوجود پختگی اور شعور موجود ہے، مشرق وسطیٰ میں عرب سپرنگ یا عرب بہار کے برعکس یہاں پرزیادہ سمجھداری اور ہوشمندی کے ساتھ معاملات سلجھائے گئے۔ حالات بظاہر بندگلی میں چلے جانے کی نشاندہی دے رہے تھے ، مگر اچانک ہی فریقین نے ہوشمندی کا مظاہرہ کیا اورخوبصورتی سے اس پورے قضیے کو نمٹا دیا۔ اس ایک ہفتے کے دوران مختلف سیاسی قوتوں، انٹیلی جنشیا، میڈیا اورمقتدر قوتوں نے کیا کیا کردار ادا کیا،اس کے نتیجے میں انہیں کیا ملا…، اس پر ایک نظر ڈالتے ہیں: علامہ طاہرالقادری کا کردار آغاز تحریک منہاج القرآن کے سربراہ علامہ طاہرالقادری سے کرتے ہیں۔ علامہ صاحب ایک معروف دینی سکالر اور خطیب ہونے کی شہرت رکھتے ہیں۔وہ اپنے بعض بیانات اور ماضی میں چند ایشوز پرموقف بدلتے رہنے کے باعث متنازع رہے ہیں۔ 80ء کی دہائی میں ان کی بشارتوں کے حوالے سے بیان کئے گئے بعض خواب اوراپنے اوپر قاتلانہ حملے کے دعوے کے حوالے سے لاہور ہائیکورٹ کے ٹریبونل کی رپورٹ ہمیشہ ان کے خلاف استعمال کی جاتی ہے۔پولیٹیکل سائنس کی اصطلاح میں وہ اچھے خاصے بوجھ(Baggage) کے ساتھ سیاست کی وادی خارزار میںسفر کر رہے تھے۔ چند برس قبل وہ جنرل پرویز مشرف کے دور میں اسمبلی کی رکنیت سے استعفا دے کر کینیڈا چلے گئے تھے، اس وقت کہا گیا کہ وہ اپنا زیادہ وقت علمی وتدریسی مشاغل کو دینا چاہتے ہیں۔ تین چار سال پہلے انہیں وہاں کی نیشنلٹی بھی مل گئی۔اس دوران علامہ صاحب سیاست سے قدرے دور رہے ،مگر ان کے پاکستان میں رابطے مسلسل قائم رہے، منہاج القرآن کا بڑا تعلیمی نیٹ ورک پچھلے چند برسوں میں بہت زیادہ بڑھا، یہ سب علامہ صاحب کی نگرانی میں ہوا۔ اس دوران ان کی تحریر کردہ کئی کتب بھی شائع ہوئیں، جن میں ترجمہ قرآن ’’عرفان القرآن‘‘، احادیث کا مجموعہ اور خودکش حملوں کے خلاف کئی سو صفحوں پر محیط ایک مبسوط فتویٰ قابل ذکر ہے۔ پاکستانی میڈیا لانگ مارچ کے دنوں میںقادری صاحب سے بار بار یہ کہتا رہا کہ آپ اچانک کیسے آ گئے؟ دراصل یہ ہمارے تجزیہ کاروں اور نیوز اینکرز کی روایتی لاعلمی اوربے خبری تھی۔ سیاست کو باریک بینی سے مانیٹر کرنے والے جانتے تھے کہ طاہرالقادری صاحب بتدریج سیاسی اعتبار سے فعال ہو رہے ہیں۔ سال ڈیڑھ پہلے سے لاہور کے بعض موٹر رکشوں کے پیچھے قادری صاحب کا یہ نعرہ نمودار ہوا،چہرے نہیں، نظام بدلو۔ نظام بدلو کے نام سے ایک ویب سائیٹ بھی بنا دی گئی تھی۔اس کے ساتھ ساتھ سوشل میڈیا پر قادری صاحب کے حامی اچانک ہی بہت متحرک ہوگئے تھے۔ نظام بدلنے اور قومی سیاست میں جوہری تبدیلیاں لانے کے حوالے سے قادری صاحب کی تقاریر کے ویڈیو کلپس اور تحریریں فیس بک پیجز پر لگائی جانے لگیں۔ رفتہ رفتہ یہ عمل بڑا تیز ہوگیا ۔ اس وقت بھی سوشل میڈیا پر دو تین سب سے متحرک گروپوں میں سے ایک تحریک منہاج القرآن ہے۔ تئیس دسمبر کے جلسے سے چار پانچ ماہ پہلے قادری صاحب نے لاہور کے تھنک ٹینک کونسل آف نیشنل افئیرز کے صحافیوں اور دانشوروں کو منہاج مرکز میں دعوت دی اور ویڈیو کانفرنس کے ذریعے انہیں بریفنگ دی، سوال جواب کا سیشن بھی ہوا۔ اس میں قادری صاحب نے بتایا کہ وہ پاکستان واپس آ رہے ہیں اور ایک بڑا جلسہ کریں گے۔ تاہم اخبار نویسوں نے قادری صاحب کو زیادہ سنجیدگی سے نہیں لیا۔پھر تئیس دسمبر کے جلسے کے لئے کمپین شروع ہوگئی، دسمبر کے اوائل میں میڈیا کو احساس ہوا کہ قادری صاحب کے حامی جس محنت سے مہم چلا رہے ہیں، وہ بڑا جلسہ کرنے میں کامیاب ہو جائیں گے۔ پھر ایسا ہی ہوا۔ قادری صاحب نے پہلے اپنے جلسے ، لانگ مارچ اور پھر چار پانچ دن کے دھرنے کے بعد اپنا امیج تبدیل کر لیا۔ ایک غیر اہم، مبالغہ آمیز تقاریر کرنے والے خطیب کے بجائے اب انہیں ایک اہم ، عوامی مقبولیت رکھنے والا طاقتور سیاستدان تصور کیا جائے گا۔ آئندہ میڈیا یا کوئی سیاسی جماعت انہیں Easy نہیں لے گی۔ ان کے کسی دعوے یا اعلان کو نظرانداز کرنا اب ممکن نہیں۔ بڑی مہارت اور دانشمندی سے انہوں نے اپنے پتے کھیلے اور اسلام آباد کے قلب میں پہنچنے میں کامیاب ہوگئے۔انہوں نے اپنے سیاسی حریفوں کو ایک طرح سے آئوٹ کلاس کر دیا۔ان کا اعتماد بھی دیدنی تھا، چودھری برادران کے پیچھے ہٹنے اور عین وقت پر ایم کیو ایم کے دغا دے جانے کے باوجود وہ اپنے پروگرام سے پیچھے نہیں ہٹے اور کامیابی حاصل کر لی۔ وہ ایک ایسے سیاستدان کے طور پر ابھرے ہیں، جن کی اب ہمارے سیاسی منظرنامے میں ایک خاص جگہ اور مستقبل ہے۔انہوں نے یہ بھی ثابت کیا ہے کہ وہ لاکھوں افراد کے لئے ایک روحانی رہنما کی حیثیت بھی رکھتے ہیں، ایسا لیڈر جس کے کہنے پر لوگ اپنے معصوم شیر خوار بچے ساتھ لے کر میدان میں کود سکتے ہیں۔ایک زمانے میں پیر پگارا کے حروں کو یہ حیثیت حاصل تھی۔ تحریک منہاج القرآن کا تاثر ایک خالصتاً علمی اور دعوتی تحریک کا تھا، اب اس نے یہ بھی ثابت کر دیا کہ ان کے پاس انتہائی منظم اور مشکل ترین حالات میں ڈسپلن قائم رکھنے والے کارکن موجود ہیں۔ ایسے کارکن جن پر کسی قسم کے پروپیگنڈہ کا کوئی اثر نہیںاور وہ رہنمائی کے لئے اپنے قائد کی جانب ہی دیکھتے ہیں۔ دھرنے کے سبق قادری صاحب کو بھی یہ سمجھنے کی ضرورت ہے کہ خطابت اپنی جگہ ،مگر مطالبے وہی مانے جاتے ہیں جو حقیقت پسندانہ ہوں اور جن کی وسیع پیمانے پر پزیرائی ہوسکے۔انہوں نے اسلام آباد پہنچنے کے بعد شروع میںغیر حقیقی مطالبے کئے، حکومت اور وزرا کو سابق اور پارلیمنٹ کی تحلیل اورالیکشن کمیشن کی فوری تشکیل نو کا کہا۔ یہ مطالبے مانے جانے والے نہیں تھے ، شائد وہ دبائو بڑھانے کے لئے ایسا کر رہے تھے ، مگر ان کا زیادہ مثبت اثر نہیں ہوا۔ بعد میںانہوں نے دانشمندی سے اپنے پرانے اور حقیقی نکات پر توجہ دی اور کم وبیش تمام مطالبے منوا لئے۔ اگلے روز اگرچہ میڈیا کے ایک حصے نے یہ تاثر دینے کی کوشش کی کہ قادری صاحب کے مطالبے نہ مانے گئے ، مگرحقیقت اس کے برعکس تھی۔ علامہ طاہرالقادری کا اصل مطالبہ آئین کے آرٹیکل باسٹھ ، تریسٹھ کے امیدواروں پر اطلاق، سکروٹنی کی مدت میں توسیع اور عوامی نمائندگی ایکٹ کی شق 77تا 82 میں تبدیلی لانا تھا۔ الیکشن کمیشن کے اختیارات میں اضافہ کامطالبہ بھی اس وجہ سے تھا۔ یہ تمام باتیں مانی گئی ہیں، نگران وزیراعظم کے لئے بھی انہیں ایک سٹیک ہولڈر کے طور پر مان لیا گیا ہے۔ اگر اس معاہدے پر عمل درآمد ہوا تو بڑی حد تک بدنام اور کرپٹ امیدواروں کا صفایا ہوجائے گا۔اس لحاظ سے بڑی کامیابی کہی جا سکتی ہے۔تحریک منہاج القرآن کو یقیناً یہ اندازہ ہو گیا ہو گا کہ دھرنے کے آخری روز بارش کے باعث ان کے لئے آپشنز محدود ہوگئی تھیں، اس سے پہلے بعض اپوزیشن جماعتوں نے میاں نواز شریف کی قیادت میں مشترکہ اعلامیہ جا ری کر کے قادری صاحب اور ان کے حامیوں کو سیاسی طور پر تنہا کر دیا تھا۔ یوں لگ رہا تھا کہ وہ بند گلی میں چلے گئے ہیں، اگر حکومت دانشمندی سے کام نہ لیتی ، مذاکرات نہ کرتی اور محفوظ راستہ نہ دیتی توصورتحال خاصی مشکل ہو گئی تھی۔ سیاست میں واپسی کے راستے کھلے رکھنے چاہیں، قادری صاحب نے ایسا نہیں کیا، وہ انتہا پر چلے گئے تھے۔ تیونس، مصر اور یمن وغیر ہ میں عرب سپرنگ کی کامیابی کی ایک وجہ ان ممالک کے دارالحکومت کی خاص پوزیشن تھی۔ مصر میں تحریر اسکوائر پر جمع ہونے والے لاکھوں افراد قاہرہ کے رہائشی تھے، اگرچہ دوسرے شہروں سے بھی لوگ آئے ،مگر بنیادی طور پر وہ مظاہرے ان شہروں کے اپنی آبادی نے کئے تھے۔ یہی تیونس اور یمن میں ہوا۔ لیبیا اور شام میں صورتحال مختلف تھی، وہاں دارالحکومت میں اپوزیشن کی گرفت مضبوط نہیں تھی، اس لئے ان مظاہروں کا اس طرح اثر نہ ہوسکا۔ کوئٹہ میں ہزارہ کمیونٹی کا دھرنا بھی وہاں کے مقامی آبادی کا اجتماع تھا، جن کے لئے گھروں سے ساز وسامان لانا بھی آسان تھا اور لوگ اپنی پوزیشنیں بھی بدل سکتے تھے۔ ایک دو راتوں کے بعد ضرورت پڑنے پر چند گھنٹوں کے لئے اپنے گھروں میں سستایا جا سکتا تھا۔ قادری صاحب کے لانگ مارچ میں ایسی کوئی سہولت موجود نہیں تھی۔ اس کا تمام تر دارومدار شرکا کے عزم وایثار پر تھا۔ اگر چہ قادری صاحب خوش قسمتی سے اس بار کامیاب ہوئے ،مگر شرکا کا اس قدر سخت امتحان لینا رسک ہوتا ہے، اگر ایسی بارش دو دن پہلے ہوجاتی ، تب کیا ہوتا؟اس وقت تک تو دھرنے کا ٹیمپو بھی نہیں بنا تھا۔ حکومتی اتحادکی سیاسی کامیابی پیپلز پارٹی کی حکومت پر بہت سے حوالوں سے سخت تنقید کی جاتی ہے، جو یکسر بے وزن بھی نہیں، ایک بات مگر اس نے یہ ثابت کر دی ہے کہ وہ ایک سیاسی جماعت ہے اور سیاسی انداز سے سوچتی ہے۔ ایک وقت میں وفاقی حکومت سخت مشکلات کا شکار تھی، پنجاب حکومت لانگ مارچ کو پنڈی پہنچا کر سکون سے تماشا دیکھ رہی تھی،تمام تر دبائو مرکز پر تھا۔ اس مشکل وقت میں پیپلز پارٹی نے اپنے اتحادیوں کو ساتھ ملایا اوراعلیٰ سطحی وفد کے ذریعے مذاکرات کئے ،یوں ڈیڈلاک بھی ختم کیا اوراس معاہدے پر عمل درآمد کرا کر وہ الیکشن کے عمل کا شفاف بنانے کا کریڈٹ بھی لے سکتی ہے۔ پیپلز پارٹی نے اپنے سخت گیر سوچ رکھنے والوں کو سائیڈ پر کیا اور اس کے ثمرات بھی انہیں مل گئے۔ اگر خدانخواستہ تصادم ہوجاتا تو اس کے خوفناک نتائج نکلتے۔ لال مسجد کے سانحے کے اثرات سے ہم ابھی تک نہیں نکل سکے، ملک کسی اور ہولناک واقعہ کا متحمل نہیں ہوسکتا۔پیپلز پارٹی کا اصل امتحان لانگ مارچ ڈیکلئریشن پر عمل کرانا ہے۔ انہیں یہ سمجھنا ہوگا کہ صرف منہاج القرآن ہی نہیں بلکہ ملک بھر میں انتخابی اصلاحات کی خواہش موجود ہے۔ یہ اچھا موقعہ ہے کہ ہمارے سیاستدان جمہوری نظام کی تطہیر کریں، اس سے جمہوریت دشمن قوتوں کو شدید حوصلہ شکنی ہوگی۔ میڈیا اور تجزیہ کار اب یہ مان لینا چاہیے کہ میڈیا اور ہمارے تجزیہ کاروں نے علامہ طاہرالقادری کو انڈر اسٹیمیٹ کیا۔ وہ علامہ صاحب کے شخصی اثر اور قوت کا اندازہ نہ لگا سکے۔ میڈیا کے بیشتر حصے کو یقین تھا کہ لانگ مارچ ہو ہی نہیں سکے گا۔دھرنے کے دوران بھی کوریج کرتے ہوئے انہیں شرکا ء کے موڈکا اندازہ نہیں ہوسکا۔ کئی اینکر خواتین چیختی رہیں کہ آپ لوگوں کو سردی کیوں نہیں لگ رہی، بچے بیمار ہوجائیں گے وغیرہ وغیرہ۔ انہیںسمجھنا چاہیے تھا کہ لوگ کسی جذبے اور کمٹمنٹ کے ساتھ ہی یہاں تک آئے ہیں اور یہ یوں واپس نہیں جائیں گے۔ ہمارے اہل دانش اور تجزیہ کاروں نے سب سے اہم غلطی یہ کی کہ انہوں نے طاہرالقادری کی شخصیت کو بے رحمی سے نشانہ بنایا ،مگر ان کے ایجنڈے کو نظر انداز کر گئے۔ انہیں یہ ادراک نہ ہوسکا کہ انتخابی اصلاحات کرنا اور تبدیلی لانے کے ایجنڈے کی عوام میں زبردست کشش موجود ہے۔ قادری صاحب نے اس خلا میں قدم رکھا ،جو ہماری دوسری سیاسی جماعتیں پر کرنے میں ناکام رہیں۔ جیسا کہ شرکا کے انٹرویوز سے ظاہر بھی ہوا کہ ان میں تمام لوگ منہاج القرآن کے نہیں تھے، بہت سے لوگوں نے بتایا کہ وہ عمران خان کے ووٹر ہیں، بعض دوسری جماعتوں کے حامی بھی تھے۔ ایجنڈے پر زیادہ بات ہونا چاہیے تھی، وہ نہ ہوسکی اور تمسخر،پیروڈی،طنز وتشنیع ہمارے میڈیا پر حاوی رہے۔ یہی وجہ ہے کہ جمعہ کو دھرنے کی کامیابی کے بعد بہت سے اینکروں اور تجزیہ کاروں کو سمجھ نہیں آ رہی تھی کہ کیا ردعمل دیں۔ جن باتوں کا وہ مذاق اڑاتے رہے، وہ تقریباً سب مان لی گئیں۔ جہاں تک اسمبلیوں کی تحلیل اور الیکشن کمیشن کی فوری تشکیل کی بات تھی، یہ دبائو بڑھانے کا حربہ تھا، حقیقی مطالبہ نہیں تھا۔میڈیا اور انٹیلی جنشیا کو آنے والے دنوں میں زیادہ محتاط اور باریک بین ہونا پڑے گا۔ الیکشن میں اصلاحات کے عمل پر بھی نظر رکھنے کی ضرورت پڑے گی۔ مسلم لیگ ن مسلم لیگ ن نے بظاہر بڑی عقل مندی اور ہوشیاری سے چالیں چلیں۔ انہوں نے لانگ مارچ کو روکنے کی کوئی کوشش نہیں کی کہ اس کا رخ اسلام آباد کی جانب تھا۔ جب انہوں نے محسوس کیا کہ دھرنے میں خاصے لو گ آگئے ہیں اور یہ اجتماع خطرناک ثابت ہوسکتا ہے تووہ متحرک ہوئے۔ میاں صاحب نے کمال مہارت سے کئی اہم جماعتوںسے رابطے کئے۔ بلوچستان سے اچکزئی صاحب اور حاصل بزنجو کے ساتھ ساتھ مولانا فضل الرحمن اورجماعت اسلامی کو ساتھ ملا لینا ان کی بڑی کامیابی تھی۔ انہوں نے اپنے مشترکہ اعلامیہ سے علامہ طاہرالقادری کو بالکل تنہا کر دیا۔ یہ جمہوریت کے لئے اچھا شگون تھا کہ ہماری سیاسی جماعتیں ہر قسم کی تبدیلی کے لئے انتخابات کی جانب ہی دیکھنے لگی ہیں۔ میاں صاحب نے دانستہ یا نا دانستہ ایک بڑی غلطی یہ کی کہ انہوں نے قادری صاحب کو محفوظ راستہ نہیں دیا۔اے پی سی کے شرکا میں سے کسی نے یہ نہیں سوچا کہ اسلام آباد میںکئی روز سے ہزاروں افراد کا دھرنا جاری ہے۔دھرنے کے شرکا اور ان کے لیڈر قادری صاحب اتنا آگے جا چکے ہیں کہ ان کے لئے کچھ حاصل کئے بغیر واپس لوٹنا شرمندگی کے مترادف ہے۔ انہیں محفوظ راستہ دینا (Face saving)دینا ضروری تھا۔ دوسری صورت میں شرکاء فرسٹریٹ ہو کر تصادم کی طرف جا سکتے تھے، ایسا ہو جاتا تو پھر کچھ بھی نہ بچ پاتا۔ جس طرح کا اعلیٰ سطحی وفد حکومت نے مذاکرات کے لئے بھیجا، ویسا کام پہلے نواز شریف صاحب بھی کر سکتے تھے۔ اگر ایسا کرتے تو وہ محاورے کے مطابق میلہ لوٹ لیتے۔ انہوں نے ایسا نہیں کیا، شائد وہ اپنی مخالف وفاقی حکومت کو ٹف ٹائم دینا چاہتے تھے، مگر اختتام میں اس کا تمام تر نقصان انہیں ہی ہوا۔ ٹی وی چینلز پر ن لیگ کے رہنمائوں کی تلخی دیکھ کر انہیں پہنچنے والے دھچکے کی شدت کا اندازہ کیا جا سکتا ہے۔ اسٹیبلشمنٹ ؟ ہمارے اہل دانش اور تجزیہ کاروں کو ہر ایشو میں اسٹیبلشمنٹ کا کردار دیکھنے کا رویہ بھی بدلنا ہوگا۔ یوں لگتا ہے کہ اسٹیبلشمنٹ کا آسیب ان کی دانش کے گرد لپٹ گیا ہے۔ اسٹیبلشمنٹ کے حوالے سے ویسے بھی دو تین باتیں سمجھنی چاہیں۔ دنیا بھر میں اسٹیبلشمنٹ ہمیشہ پر و’’ سٹیٹس کو‘‘ ہوتی ہے۔ نظام بدلنے یا تبدیلی لانے کا نعرہ کبھی انہیں راس نہیں ہوتا۔ ایسا نعرہ لگانے والوں کو ہمیشہ اسٹیبلشمنٹ کی مخالفت کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔ قادری صاحب والے معاملے کو زیادہ غور سے دیکھنا چاہیے تھا۔ اگر اس میں اسٹیبلشمنٹ شامل ہوتی تو معروف اسٹیبلشمنٹ نواز جماعتیں اس سے دور نہ رہتیں اور وعدہ کر کے واپس نہ چلی جاتیں۔ جو مارچ یا دھرنا اسٹیبلشمنٹ کے کہنے پر کیا جاتا ہے ، اس کے تیور ہی الگ ہوتے ہیں، اس کے شرکا شروع ہی سے ڈنڈے لے کر چلتے ہیں اور تباہی ان کا مشن ہوتی ہے۔ ایسے جلوسوں میں لوگ خود اپنی خوشی سے اپنی بیویوں، بہنوں اور شیر خوار بچوں کو نہیں لاتے۔ پیسے خواہ جتنے ملیں، اولاد آدمی کو اپنی جان سے بھی زیادہ پیاری ہوتی ہے۔ اس دھرنے کے پرامن اختتام نے یہ ثابت کر دیا کہ اسٹیبلشمنٹ کی رٹ لگانے والے تجزیہ کاروں نے ٹھوکر کھائی، اصولاً تو انہیں اپنے قارئین اور ناظرین سے معذرت کرنی چاہیے، مگرافسوس کہ ہمارے ہاں ایسی اچھی روایتیں موجود نہیں۔ ویسے اس حوالے سے فورسز کا رویہ مثبت رہا۔ کورکمانڈرز کانفرنس کو بعض حلقوں نے معنی خیز نظروں سے دیکھا ،مگر آئی ایس پی آر نے بروقت وضاحت کر دی۔ ہماری مقتدرہ قوتوں کو یہ یاد رکھناچاہیے کہ سیاست صرف سیاستدانوں کے کھیلنے کا میدان ہے۔ عسکری قوتوںکو اپنے پروفیشنل فرائض ہی انجام دینے چاہیں۔ ایسا کرنا ہی ان کے وقاراور عزت میں اضافہ کرے گا۔ اس دھرنے کا پرامن انجام یہ ثابت کرتا ہے کہ ملک میں جمہوریت پنپ رہی ہے اورہمارا بظاہر کمزور جمہوری سسٹم اس قسم کے بڑے دھچکوں کو برداشت کرنے کی سکت اور قوت رکھتا ہے۔اس سے ہمارے سیاستدانوں اور جمہوری قوتوں نے خاصا کچھ سیکھا ہوگا۔ تحریک انصاف عمران خان اور ان کے بعض حامیوں کو ممکن ہے اب اندازہ ہو رہا ہو کہ انہوں نے ملنے والے ایک بڑے موقع سے فائدہ نہیں اٹھایا۔ تحریک انصاف میں لانگ مارچ کے حمایت میں ایک مضبوط لابی موجود تھی،ان کے کئی اہم سیاسی لیڈروں کا خیال تھا کہ ہمیں قادری صاحب کے ساتھ شامل ہونا چاہیے، ان کی جماعت کا سیاسی نیٹ ورک موجود نہیں ،ا س لئے سیاسی کامیابی کے تمام تر ثمرات تحریک انصاف کو پہنچیں گے۔ اس لابی کی بات نہیں مانی گئی، عمران خان اور ان کے بعض غیر سیاسی مگر پارٹی کے لئے تھنک ٹینک کا درجہ رکھنے والے لوگوں کی بات مانی گئی۔ تاہم عمران خان نے لانگ مارچ اور دھرنے پر تنقید بالکل نہیں کی، وہ اسے بڑی احیتاط سے دیکھتے رہے، جائزہ لیتے رہے ،مگر شامل نہیں ہوئے۔ ممکن ہے انہیں خطرہ ہو کہ یہ دھرنا کسی اور جانب جا سکتا ہے۔ انہوں نے اپنی تمام تر توجہ انتخابات کی جانب مبذول کی اور اس حوالے سے دبائو بڑھانے کی کوشش کی ،مگر تحریک انصاف کے بہت سے نوجوان کارکنوں کو اب یقیناً مایوسی ہو رہی ہوگی۔پی ٹی آئی نے اس معاملے میں اگرچہ کھویا بھی زیادہ نہیں۔ ان کے لئے انتخابات کے حوالے سے قادری صاحب کے ساتھ ہاتھ ملانے کی آپشن موجود ہے۔دیکھنا یہ ہے کہ تحریک انصاف آنے والے دنوں میں کیسے پتے چلتی ہے؟


http://www.geo.tv/important_events/2013/TahirulQadri/pages/urdu_news.asp
.
<<Free-eBooks Click here>>> 

Saturday, January 12, 2013

Open Dialogue Needed on Qadri's Charter of Demands اب کھل کر بات ہونی چاہیے

لاہور:ڈاکٹر طاہر القادری نے چارٹرڈ آف ڈیمانڈ پیش کردیا ہے جس میں‌ پہلا مطالبہ الیکشن کمیشن کو تحلیل کرکے اس کی دوبارہ سے تشکیل نو کرنا ہے ,دوسرے مطالبے میں‌ نگران حکومت کو مک مکا کی بجائے سیاسی مشاورت سے بنانے پر زور دیا گیا ہے .تیسرا مطالبہ الیکشن آرٹیکل 62,63,68اور218 کے مطابق نہ ہوئے تو قبول نہیں‌ کیے جائیں‌ گے.انتخابی امیدواروں‌ کی مکمل چھان بین ہونی چاہئے .ادارے الیکشن کمیشن کو ہر طرح‌ کی معلومات فراہم کرنے کے پابند ہوں‌ گے .چیف الیکشن کمشنر کے ہاتھ میں‌ کچھ نہیں .انھوں‌ نے کہا ہے کہ لانگ مارچ سے پہلے یہ میری آخری پریس کانفرنس ہے،پاکستان کی تاریخ کا سب سے بڑا عوامی مارچ کل صبح 9 بجے شروع ہوگا۔لانگ مارچ کا آغاز داتا دربار اور اختتام بری امام پر ہوگا.پریس کانفرنس کے دوران انھوں نے کہا کہ مائوزے تنگ کے بعد یہ تاریخ کا سب سے بڑا لانگ مارچ ہوگا۔بعض صوبوں سے مارچ گزشتہ روز روانہ ہو چکا ہے ۔انھوں نے کہا کہ رحمن ملک نے براہ راست مجھے دھمکی دی ،چیف جسٹس رحمن ملک کے خلاف ازخود نوٹس لیں ۔انھوں‌ نے کہا کہ بند کمرے میں‌ کوئی فیصلہ نہیں‌ ہوگا. مذاکرات پارلیمنٹ‌ ہائوس کے سامنے ہوں‌ گے .مژاکرات کے زریعے لانگ مارچ کو نہیں‌ روکا جا سکتا .تحریک انصاف کی قیادت اور کارکن تبدیلی چاہتے ہیں‌.انھوں‌ نے کہ ایک نہیں‌ سو افراد میرے پاس مژاکرات کے لیے آئیں‌,یہ دروازہ میں‌ بند نہیں‌ کرتا.انھوں‌ نے کہا کہ لانگ مارچ زندگی اور موت کا فیصلہ ہے .انھوں‌ نے کہا کہ نگران حکومت مک مکائو سے نہیں‌ بنے گی .میرا پہلا مطالبہ ہے کہ الیکشن کمیشن کو تحلیل کر کے اس کی تشکیل نو کی جائے .انھوں‌ نے کہا کہ کوئی بات دستور یا سپریم کورٹ کے خلاف نہیں‌ کی .انھوں‌ نے کہا کہ دستور اور قانون کو بڑے ہاتھیوں‌ نے کچل ڈالا ہے .سپریم کورٹ نے انتخابی اصلاحات کا روڈ میپ دے دیا ہے .
-------------------------------------------------------------
~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~


http://dunya.com.pk/news/authors/detail_image/1541_12089119.jpg
http://dunya.com.pk/news/authors/detail_image/1516_19688905.jpg
<<Free-eBooks Click here>>> 

Wednesday, January 9, 2013

The women from Kohistan


Personal liberty & privacy:
Islam granted the basic human right of individual privacy, 1400 ago once   such freedom and personal liberty was unthinkable in any society, but extremists ignore it, Allah says:  
“O believers! Avoid immoderate suspicion (guesswork), for in some cases suspicion is a sin. Do not spy on one another, nor backbite one another (to say something about another behind ones back that if one hears it, dislikes it). Would any of you like to eat the flesh of his dead brother? Surely you would abhor it. Fear Allah; for Allah is the Accepter of repentance, Merciful.”(49:12). 
The implementation of these injunction by Caliph Umar is a good example of moderation in implementation of rule of law. On night Umar, the second Caliph, during his routine night watch hear some singing sound form a house. He climbed up the wall and found a man with wine and a woman. He asked him that how he could hide such immoral violation of commands of Allah? The man replied that the Caliph has already violated three command of Allah; 
  1. first by spying on a believer (Qur’an;49:12), 
  2. secondly, by not entering a house through door (Qur’an;2:189), and 
  3. thirdly by entering the house without permission of the owner (Qur’an;24:27-28). 
The Caliph had no answer and had to leave quietly however he took a promise from him not to indulge in such immoral activates in future. Not even the most civilized governments can grant such a freedom to their citizens even in this present era of civil liberties and human rights.
Adornments
“Say: Who hath forbidden the adornment of God which He has brought forth for His devotees, and the good things of His providing? Say: "All these things are for the enjoyment of the believers in the life of this world though shared by others; but these shall be exclusively theirs on the Day of Resurrection. Thus do We make Our revelations clear for those who understand. Say: The things that my Lord hath indeed forbidden are: shameful deeds whether open or secret; sins and trespasses against truth or reason; assigning of partners to God for which he hath given no authority; and saying things about God of which you have no knowledge.”(Qur’an;7:32-33).

-------------------------------------------------------- 

FOUR women clapping and two men dancing appeared in a grainy cellphone video from a remote village said to be in Kohistan.

The ill-fated gathering was said to have occurred somewhere at the end of May 2012. A few days later, a television channel reported that all four women had been killed, having been sentenced by a jirga for the crime of dancing, clapping and mixing with men of another tribe.

No one knows if the incident in the video actually took place. No one knows if the four women in the muted wedding finery of a village celebration were even present in the same room as the men. No one knows if they are alive now.

The two men in the video, Bin Yasir and Gul Nazar, who had also been sentenced to death by the jirga, were nominated in a police report for the crime of filming women in a conservative region. They fled from the village but were eventually apprehended and put in prison.

In the days immediately after, the video and its sordid aftermath were splashed across television screens all over Pakistan, the women and their naïve claps all underscoring the tragedy that every viewer knew was about to befall.

There were many stories about each step of the incident. The men and women in the video belonged to different tribes, the Azadkhel and the Salekhel. It was the Azadkhel tribe, to which the women belonged, that condemned all six to death. Mohammad Afzal, whose younger brothers had appeared in and been accused of having taken the video, alleged that the four women had been killed in May last year according to the writ of the tribal jirga and that he had himself seen their fresh graves in the forest.In June, a commission sent to the village on the orders of the Supreme Court, which took suo moto notice of the issue, found otherwise. Farzana Bari, who headed the fact-finding inquiry team, confirmed that the four women were alive. However, she also said that she had met only two of them and that it was not possible for any of them to be produced in court.

Mohammad Afzal continued to insist that the women were in fact dead. The court believed the fact-finding commission and the case of the girls from Kohistan was closed.

Rumours of the women being alive or dead were not the only confusion on the issue; reports have also accumulated that assert that the video was fake, with the boys having edited it together as an ill-thought prank.

Regardless of the truth of that matter, the video was not done with taking the lives of Kohistani villagers. Just a few days ago, three brothers of the men in the video were also killed and several women of the tribe injured when men seeking to avenge the dishonour of their women being videotaped surrounded the house of the accused men and opened fire.

According to one of the survivors, the men who came to kill said that they would not rest until the entire family was eliminated. The day after, the Supreme Court issued a statement saying that it was considering reopening the case of the women from Kohistan.

In a country where the murders of prime ministers and presidents go unsolved for decades, it is uncertain whether the truth about the girls from Kohistan will ever be known. To hope for DNA analysis of the buried bodies or any sort of examination of the video itself to see if it is authentic seems, within the given context, a fantastic scheme.

It is, however, important to look at the case of the girls from Kohistan as an expression of just how modern technology collides with tribal mores in an explosive and deadly mix. The secret video camera, with its sinister ability to capture unwitting and perhaps unwilling subjects in acts of spying, represents a new tool for moral policing that far outdoes the human eye in surveillance.

The case of the women from Kohistan is hardly the first expression of this collision of the never-seen with the always-present. A year before the Kohistan case, a man of the Madakhel tribe in a district of Khyber Pakhtunkhwa was killed allegedly for having a picture of a girl on his cellphone.

Mohammad Yasin had fled to Karachi but was apprehended by men of the tribe who killed him.

Unsurprisingly, no one knows what happened to the girl but a jirga met a few weeks after his death to ban cellular phones with cameras within their region. In other cases in the past year, blasphemy charges have also been levelled using cellphone text messages as a basis for accusations.

The point underscored by all of these cases is the same: in a country where public shame remains the backbone of morality and what is visible is the basis of sin and accusation, the arrival of the cellphone camera poses a big threat. As can be seen in the case of the Kohistan women, the very existence of the video indicts before a trial, shames before analysis and convicts without further evidence.

What it represents, however, is the constriction of private space even further and an extension of moral policing into realms that were never before visible — and experiments (such as the piecing together of this image with that) suddenly possible.

In the coming days, the court might take the case up again. But the real question, likely to go unanswered in the morass of legalities, is the issue of privacy for the woman or the citizen or the wedding guest whose simple, helpless presence can be transformed, taped and broadcast with the cheap, sly surveillance of a camera on a phone.

The writer is an attorney teaching constitutional law and political philosophy.
rafia.zakaria@gmail.com
http://dawn.com/2013/01/09/the-women-from-kohistan/

Tahir ul Qadri- Pakistan's Annahazarey


.http://jang.com.pk/jang/jan2013-daily/09-01-2013/editorial/col3.gif
<<Free-eBooks Click here>>> 

Monday, January 7, 2013

Political Reforms-Lessons from History


Past present: About-face

By Mubarak Ali 


Institutions and traditions are products of time and space. Before they deteriorate and become irrelevant by losing their utility with the passage of time, they should either be reformed or abolished.

It is the responsibility of the politicians, intellectuals and the ruling classes to understand the degeneration of a system and hence introduce reforms to reconstruct institutions on fresh lines relevant to time.
Machiavelli, the scholar of Renaissance, in one of his books, The Discourse also referred to as The Discourses on the First Ten Books of Titus Livy, advised that the political system should be reformed every 10 years.
Following his advice, Thomas Jefferson, the American president suggested that the American constitution should be redrafted after 20 years.
Both Machiavelli and Jefferson believed in change as every new generation has its own aspirations and ambitions to fulfill. Therefore, traditions and institutions which have become obsolete should be reformed in order to confront new challenges.
However, each society has conservatives who are beneficiaries of the existing system and oppose any change or reform. On the other hand, the progressives who are not radical or revolutionary but capable of dealing with new challenges wish to see a workable system.
The industrial revolution transformed the English society and the middle and working classes emerged powerful and ambitious to play a political role in the society. Previously the privileged English aristocracy dominated the political structure and refused to share political space with the middle class. They opposed the Great Reform Act in 1832 which was a law that changed the British electoral system. At this stage Wellington and Disraeli, both aristocrats who belonged to the Conservative party, warned the House of Lords not to oppose as any hurdle would cause resentment and anger in the middle classes. The members of the House of Lords decided not to attend the deliberation and the bill was passed which opened the gates for reform.
The 1867 Reform Act was the second major attempt to reform Britain’s electoral process. This extended the right to vote still further down the class ladder, adding just short of a million voters — including many workingmen — and doubling the electorate, to almost two million in England and Wales.
In France, the privileged classes including the aristocracy and clergy refused to change the structure of the traditional society. A bloody revolution followed that shook the society and disconnected it from the past.
In Russia, after the death of Stalin in 1954, when his successor Nikita Khrushchev disclosed Stalin’s abuses and crimes, some people were thrilled and others disappointed and disillusioned. However, Stalin’s diehard party leaders made Khrushchev’s efforts unsuccessful and the result of their conservative policy was that the system remained corrupt until Mikhail Gorbachev introduced reforms.
In the 19th century, revolutionary movements threatened European powers. Bismarck, the chancellor of Germany beleived that before becoming the victim of a revolution, it was advisable to implement reforms to economically improve the working class. It was a successful policy that prevented bloodshed and upheaval and yet protected the old system. Most European powers introduced constitutional governments which enfranchised more people.
In the case of Pakistan, now is the time to realise that our feudal, tribal and bureaucratic institutions have lost their utility as indicated by the chaos and disorder in our society. As no attempt is being made to revamp the institutions, they are on the verge of collapse. The only alternative is to abolish them and build new institutions to fulfil the need of the time. It requires a creative minority with a vision to initiate the process of building a new system. The question is: do we have a creative minority? For without one, there is no hope to bring about a change in the society.
http://dawn.com/2013/01/06/past-present-about-face/
Here a solution Italian style: 

The Monti option of Italy- A possible solution for Pakistan





<<Free-eBooks Click here>>>