Featured Post

Wake up Now ! جاگو ، جاگو ، جاگو

Wake up Pakistan ! Presently the Muslim societies are in a state of ideological confusion and flux. Materialism, terrorism,...

Monday, November 28, 2011

Very Simple but Effective Chinese Exercise to keep Fit, young, prevent Dementia !! "Jin Ji Du Li"


People  around 40 years ago should start this exercise. It is simple and not time consuming. The benefits given below are amazing. The essence of the exercise is that your "Eyes Must be Closed" when you are doing this exercise. You must practise the "Jin Ji Du Li" exercise with the eyes closed. ["Jin Ji Du Li", translated as “golden rooster stands on one leg,” is popularly known as the crane stance, used heavily in karate. It is formed by raising one knee to its maximum height. The facing can be either to the front or the side, relative to the opponent. As with karate, Jin Ji Du Li is used as a platform for frontal kicks, as well as side kicks. It is also frequently employed defensively to deflect low to middle height kicks. Lastly, it is used in Northern styles for Tiao Bu (“jump step”) and Dan Tiao (“single-jump”), two techniques of movement for advance or retreat. it is also known as the crane stance in shaolin wushu kung fu]. 
This exercise was so simple and amazing: 
Stand on one leg while your eyes are closed.That is all. Just try it right now, stop reading and stand up, close your eyes and try standing on one foot.  If you are not able to stand for less than 10 seconds, it means that your body has degenerated to 60 to 70 years old level in other words, you may be only 40 years old, but your body has aged a lot faster. 


While you could stand easily on one foot with eyes open, trying the same thing with eyes closed ia another story! You just may not keep my balance for more than two to three seconds before you startwobbling and hopping around.

You do not need to lift your leg high, if your internal organs are out of synch, even lifting your leg this bit will make you wobble.  Now this was quite scary because it tells you that your body is lmost 60 years old and here are you, barely into forties! These Chinese are really very advanced in their knowledge of the human body. It was very heartening to know that frequent and regular practice can help you recover your sense of balance. In fact Chinese specialists suggest daily practice of "Jin Ji Du Li" for 1 minute, this helps prevent dementia. 

EXERCISES FOR ALL SEASONS: Stand On One Leg Video



 One leg support Exercise 



You can try slightly closing both eyes while practicing "Jin Ji Du Li", instead of completely closing them; in fact this is what the health specialist Zhong Li Ba Ren recommends. Daily practice of "Jin Ji Du Li", can help in healing many illnesses or diseases like:-
  • Hypertension,
  • High Blood Sugar or diabetes,
  • Neck and Spinal diseases,
  • it can also prevent you from getting dementia.  
Zhong Li Ba Ren has written a book titled "Self Help is Better than Seeking Doctors' Help", which is a bestselling book that has been the best seller health book in China since it was first published last year. Its success can be measured by the fact that it has been reprinted 12 times within 6 months, with more than 1 million copies sold. The book is a hot seller because is it teaches many simple practical health tips. 


It is said that according to the understanding of Chinese physicians, diseases appear in the body because the coordination between the various internal organs encounter problems and that causes the body to lose its balance. "Jin Ji Du Li" can readjust this inter-relationship of the organs and how they function with each other. Zhong Li Ba Ren statedthat many people can't stand on one foot with their eyes closed for even 5 seconds, but later on as they practice it daily, are able to stand for more than 2 minutes. 


As you gain ability to stand for longer time, the feeling of "head heavy, light feet” disappears. As benefits or practising "Jin Ji Du Li", you will experience that the quality of sleep improves, the mind clears up and memory improves significantly. Most importantly if you can practice Jin Ji Du Li with your eyes closed for 1 minute every day, you will not get dementia. (this also may mean the brain will remain healthy). 


Zhong Li Ba Ren explained that there are 6 important meridians passing through our legs. When you stand on a single leg, the weak meridian will feel sore while getting the necessary exercise and as this happens, the corresponding organs of these meridians and their path-ways, start getting the necessary tuning. This method can focus or concentrate the awareness, and channel the body's qi to the foot. The beneficial effects of practising Jin Ji Du Li on various illnesses associated with hypertension, diabetes, neck and spinal diseases are quick to be seen and felt. Jin Ji Du Li can also prevent gout. 


Jin Ji Du Li helps to Strengthen body Immunity rapidly Jin Ji Du Li it is suitable for everyone generally. It is the basic cure for "Cold Feet Disease” and it can also strengthen the body’s immunity. You do not have to wait until you have any illness to start practising Jin Ji Du Li. It is especially beneficial for young people, when they practice it daily while they are healthy, so that their chances of contracting the various illness associated with agingis comparative lower.
Please note that it is not suitable for people over 70 years old, or those old people whose legs are not strong and cannot stand.


http://www.philcheung.com/Health/SO1L_e.htm
http://www.google.com.pk/search?aq=2&oq=Zhong+Li+Ba+Ren&gcx=w&sourceid=chrome&ie=UTF-8&q=zhong+li+ba+ren+english


Political Terminologies: لغتِ حکمرانی کی اصطلاحات!

.

لغتِ حکمرانی کی اصطلاحات!


ایسے کئی فقرے اور اصطلاحات ہیں جن کا مطلب و مفہوم ایک عام سی ڈکشنری میں کچھ اور ہے لیکن لغتِ حکمرانی میں کچھ اور ۔جیسے ،
(قوم کو اعتماد میں لینا)
یعنی جب کوئی معاملہ ہاتھ سے نکل جائے تو معاملے کی جڑ بتائے بغیر عوام کی تائید و حمایت حاصل کرنے کی کوشش کرنا ۔مثلاً جب بلوچستان میں شمشی ایئر بیس متحدہ عرب امارات کے توسط سے امریکی ڈرونز کے استعمال کے لئے دیا گیا تب قوم کو اعتماد میں نہیں لیا گیا لیکن اب چوبیس پاکستانی فوجیوں کی ہلاکت کے بعد یہ اڈہ امریکیوں سے خالی کرانے کی بابت قوم کو اعتماد میں لیا جارہا ہے۔
( مثبت سوچ )
مراد یہ کہ حکمرانوں کی پالیسیوں پر بے جا تنقید نہ کی جائے اور غلطیوں سے درگذر کیا جائے۔ لغتِ حکمرانی کے مطابق تنقید کا صرف ایک مطلب ہے یعنی بے جا تنقید۔
( پاکستانیت)
ایک مضبوط وفاق، مضبوط فوج ، اچکن ، اردو اور قائدِ اعظم کے وہ فرمودات ، اقبال کے وہ اشعار اور اسلام کی وہ تعلیمات جنہیں اسٹیبلشمنٹ نے بہت احتیاط سے منتخب کیا ہے۔ پاکستانیت کے لازمی اجزائے ترکیبی ہیں۔اس سے ہٹ کر کوئی بھی تصور ، لباس ، زبان یا نظریہ علاقائی ، قومیتی یا انفرادی سوچ کے دائرے میں تو آتا ہے پاکستانیت کے دائرے میں نہیں ۔
( قومی مفاد )
اس اصطلاح کا کوئی جامد مفہوم نہیں بلکہ حکمرانوں کی طبیعت و مفادات کے تحت بدلتا رہتا ہے۔جیسے کل طالبان کی حمایت قومی مفاد تھی۔آج طالبان کی مخالفت قومی مفاد میں ہے۔ ہوسکتا ہے کل پھر طالبان کی حمایت قومی مفاد بن جائے۔ لہذا مشورہ یہی ہے کہ قومی مفاد کی ازخود تشریح سے پرہیز کرتے ہوئے حکومتِ وقت کے مزاج پر نگاہ رکھیں۔ تاکہ آپ کو بروقت علم ہوسکے کہ بینگن کس دور میں اچھا ہے اور کس دور میں محض ایک گھٹیا سبزی۔
( اصولوں پر سودے بازی نہیں کی جائے گی )
یہ جملہ عموماً بے اصولی پر ہونے والی سودے بازی پوشیدہ رکھنے کے کام آتا ہے۔اپنے طور پر اس جملے کا کوئی مفہوم نہیں۔
( مملکتِ خدادا )
عام طور پر اس کا مطلب ہے وہ ملک جو خدا نے عطا کیا۔ لیکنِ لغتِ حکمرانی کے حساب سے مراد ایک ایسا ملک جو خدا نے دیا۔خدا ہی اسے چلا رہا ہے اور وہی چلاتا رہے گا۔ ہم تو صرف اس کے عاجز بندے ہیں۔ لہذا خدا کے واسطے ہمارے آسرے پر مت رہنا۔۔
( عوام )
یہ اصطلاح ایسے ریوڑ کے لئے استعمال ہوتی ہے جس پر بوجھ بھی لادا جا سکتا ہے، بوقتِ ضرورت کمیلے میں بھی لایا جاسکتا ہے۔سینگ پھنسوا کر تماشا بھی دیکھا جاسکتا ہے۔ کبھی کبھار پولنگ سٹیشنوں تک بھی ہنکالا جاسکتا ہے۔ یہ ریوڑ چارے کا بھی محتاج نہیں۔ خود ہی گھاس پھونس تلاش کرکے پیٹ بھر لیتا ہے۔ اسے بہت زیادہ چوکیداری کی ضرورت بھی نہیں کیونکہ اگر بھاگے گا بھی تو کہاں تک کتنا بھاگے گا اور کس کے پاس بھاگےگا۔پھر بھی اسے باڑوں میں کھروں کے پاس سے زنجیر گذار کر رکھا جاتا ہے ۔جانے کیوں ؟
( فلاح و بہبود کے عوامی منصوبے )
عام لغت میں بھلے اس کا کوئی بھی مطلب ہو مگر لغتِ حکمرانی میں اس سے مراد عوام کے پیسے سے بنائے جانے والے وہ منصوبے ہیں جو منصوبہ سازوں اور انہیں عملی جامہ پہنانے والوں کی فلاح و بہبود کی ضمانت دے سکیں۔
میرا خیال ہے کہ آج کے لئے لغتِ حکمرانی کی اتنی تشریح ہی کافی ہے۔ویسے بھی لغت ایک بور مضمون ہے ۔اب آپ چاہیں تو کسی بھی چینل پر کوئی گرما گرم ٹاک شو دیکھ کر وقت گذار سکتے ہیں۔
ایک وقت ہی تو ہے گذارنے کے لئے ۔اور ہے بھی کیا !


Saturday, November 26, 2011

Which Revolution you talk about? کس انقلاب کی بات کرتے ہو


Shareکس انقلاب کی بات کرتے ہو...صبح بخیر…ڈاکٹر صفدر محمود
ایک بار پھر کہہ رہا ہوں کہ میں نہ عمران خان کو جانتا ہوں اور نہ ہی اقتدار کی راہداریوں میں کسی عہدے کا امیدوار ہوں۔ عہدے بہت دیکھ لئے اب تو فقط بخشش کی تمنا ہے اور اسی تمنا کا تقاضا ہے کہ نہ قلم گروی رکھا جائے نہ ذہین نوٹوں یا عہدوں کے عوض بیچا جائے اور نہ کسی سیاستدان کا قلمی مزارعہ بنا جائے۔ رضا صرف اپنے رب کی اور خدمت قوم کی اپنا ماٹو(Motto) ہو تو شاید بیڑہ پار ہوجائے۔ سچی بات یہ ہے کہ میں جہاں بھی جاتا ہوں عمران کے ووٹر پاتا ہوں۔ اس کی مقبولیت تیزی سے پھیل رہی ہے۔ جوں جوں اس کے مخالفین اس پر ایجنسیوں کی حمایت، آئی ایس آئی کی سرپرستی، امریکی سازش وغیرہ وغیرہ کے الزامات لگاتے ہیں۔ اس کی جائیداد کا پوسٹ مارٹم کیا جاتا ہے تو لوگ پوچھتے ہیں کیا اس نے یہ جائیداد حکومت میں رہ کر ملکی خزانہ لوٹ کر بنائی؟کیا اس نے بنکوں کے قرضے ہضم کئے؟ کیا اس نے منی لانڈرنگ کی؟ اس کا دعویٰ ہے کہ اس نے سارے کام قانون کے مطابق کئے اور پورا ٹیکس ادا کیا ۔ سچی بات یہ ہے کہ میں عام محفلوں اور نوجوانوں سے یہ باتیں سن کرمحسوس کرتا ہوں کہ لوگ آزمائی ہوئی قیادت سے نجات چاہتے ہیں۔
یہی وجہ ہے کہ جب دانشور عمران خان کے انقلاب کے بخیے ادھیڑتے ہیں اس کے دعوؤں کا تمسخر اڑاتے ہیں تو میں مسکرائے بغیر نہیں رہ سکتا کیونکہ میں نے گزشتہ دہائیوں میں تبدیلی لانے کا وعدہ کرنے والوں کے ساتھ یہی ہوتے دیکھا ہے جو طبقہ تبدیلی سے خوفزدہ ہوتا ہے دراصل وہ ”اسٹیٹس کو“ کا حامی ہوتا ہے ۔ میں نہیں جانتا عمران کس انقلاب کی بات کرتا ہے کیونکہ یہاں ایک انقلاب کی گنجائش تھی اور وہ پندرہ اگست 1947ء کو آچکا۔ آج کل تجزیہ نگار عمران کے انقلاب کا پوسٹ مارٹم کررہے ہیں۔ سوال یہ ہے کہ عوام اس انقلاب سے کیا مراد لیتے ہیں؟ میرے مشاہدے کے مطابق عوام کی انقلاب سے مراد سیاسی تبدیلی ہے وہ سمجھتے ہیں کہ اگر اس ملک کو قدرے ایماندار، محنتی اور اہل قیادت مل جائے تو پاکستان میں انقلاب آجائے گا ۔ وہ سمجھتے ہیں کہ صرف ایماندار اور اہل قیادت ہی ملک میں امن بحال کرسکتی ہے، صنعتی اور زرعی شعبوں کی کارکردگی شاندار بنا سکتی ہے۔ خسارے میں جانے والی قومی اداروں کو منافع بخش بناسکتی ہے۔ قومی لیٹروں کا محاسبہ کرسکتی ہے اور عام شہریوں کے مسائل حل کرسکتی ہے۔ ایک محفل میں ایک نوجوان نے مجھ سے پوچھا” سر کیا ہماری روایتی اور آموزہ قیادت میں کوئی لیڈر کیمرج آکسفورڈ کا گریجویٹ ہے؟ میں سوچنے لگا تو وہ فوراً بولا پھر یہ حضرات عمران کو نااہلیت کا طعنہ کیوں دیتے ہیں وہ آکسفورڈ کا گریجویٹ ہے اور وہ ہی ملکی حالات بدلنے کی اہلیت رکھتا ہے۔ ہم روایتی سیاستدانوں کو آزما چکے ہیں، آخر ہم کب تک انہی سوراخوں سے ڈسے جاتے رہیں گے…“ میں اس کی باتیں سن رہا تھا اور محسوس کررہا تھا کہ یہی انقلاب ہے بھلا اور انقلاب کیا ہوگا؟

Sunday, November 20, 2011

Don't believe these myths about diabetes

As part of American Diabetes Month and raising awareness about preventing and treating diabetes, Anath Shalev, director of the University of Alabama at Birmingham Diabetes Center, debunks common and costly diabetes myths:
Video: http://youtu.be/ohzBHBv874k

Sweets cause diabetes.

False. OK, this one's a "gimme." Most people know the right answer, but there are still some who think sugary foods actually cause diabetes. (The real culprits are obesity and too little exercise.)

There are no thin diabetics.

Wrong. Obesity is a risk factor for type 2 diabetes, but people with type 1 or other less common forms of diabetes are typically lean.

Diabetics cannot play sports.

Not true. With proper management, diabetics can have active lives and can even be triathletes.

Juvenile, or type 1, diabetes doesn't affect adults.

False. Type 1 is more common in the young but can occur at any age.

Type 2 diabetics should avoid insulin shots for as long as possible.

False. Some think taking insulin injections means "the beginning of the end." The truth is, injections are no biggie — they're just another way of helping your body cope with diabetes.

Kids who have type 1 diabetes should never eat anything sweet.

False. In the past, that was the prevailing belief, but now, with the right diabetes-management modifications, even type 1 kids can enjoy a slice of birthday cake or some Halloween candy.

You're doomed to develop diabetes if type 2 runs in your family and you're getting fat.

False. You may have the "constellation of genes" that puts you at higher risk, Shalev says, but lifestyle modifications, monitoring and early intervention can delay or even prevent type 2 diabetes.

MYTH DIABETES-"ONE OF MY FAMILY MEMBERS HAS DIABETES SO I TOO WILL CERTAINLY GET IT" Hindi Dr Anup

Dr. Anup, MD discusses some myths about diabetes. Very interesting. This is one part of a series of 8 parts on Myths about diabetyes.

T2 Diabetes-The Myths Answered, Pt. 5.mov

Reversing T2 Diabetes through Clinically Proven Methods

MYTH DIABETES - "INSULIN IS BAD FOR THE BODY SO I WILL NOT TAKE IT" - Hindi - By Dr. Anup, MD

Dr. Anup, MD discusses a few myths about diabetes. Very interesting. This is one part of a series of 8 parts.



BY PEGGY NOONA, Read more:
 http://www.theprovince.com/health/believe+these+myths+about+diabetes/5763143/story.html#ixzz1ek42J8kE

Saturday, November 19, 2011

Zionist West versus Islam

Islam bashing has become part of a well organised move in the West. This is nothing new, such acts are spread over the entire history of Islam. The notorious crusades were initiated in by Pope Urban 2nd in 1096 when the Church was losing its hold on Christians, this ploy was used by them to bring the Christians back under the yoke of the Church.  As a reaction to these invasions, a warrior in the person of Sultan Salahuddin Ayubi, a Kurd emerged and fought out these crusades against Islam.Now on 9/11, Bush assumed the role of Pope Urban 2nd and declared it a crusade in his State of the Union address against Islam after the 9/11 event. The magnitude of this false flag has been so intense that its ripples are being felt even now. Its splinter effects have spread across not only the US but Western Europe as well. Read full .... http://goo.gl/6FxaM

Friday, November 18, 2011

The Sincere Advice to Imran Khan by Hasan Nisar

.
بن مانگے مفت مشورے... چوراہا …حسن نثار
میں پاکستان کے سب سے بڑے اور مقبول ترین ہفت روزہ ”اخبار جہاں“ کے لئے بھی لکھتا ہوں۔ اس کالم کا عنوان ”بادبان“ ہے۔ تازہ ترین ”بادبان“ کی چند آخری سطریں آپ کے ساتھ شیئر کرنا چاہتا ہوں …
”لیکن یہاں عمران خان کو بھی اک کڑے اور بڑے امتحان کا سامنا ہے کہ کیا وہ اس ملک کی ڈولتی ڈگمگاتی ڈوبتی کشتی کو کنارے تک پہنچا سکے گا یا سنچری بنائے بغیر 99 پر آؤٹ ہو جائے گا۔ اس درویش کی یہ بات لکھ رکھیئے کہ اب عمران خان کو صرف عمران خان ہی مار سکتا ہے اور یہی عمران کا اصل امتحان ہے۔“
پنجابی زبان میں عام ایکسپریشن ہے کہ ”بارہ برس بعد تو روڑی کی بھی سنی جاتی ہے“… عمران کی سیاست پر تو ”سولہ سال“ بعد جوانی آئی ہے لیکن میرے خدشات اور تحفظات میری جان نہیں چھوڑ رہے جن کا اظہار کرنے کے بعد اب ذوالفقار مرزا بھی یہ کہہ رہا ہے کہ…
”عمران خان باؤنڈری پر کیچ آؤٹ ہو جائیں گے“
میرے دوست فلم رائٹر ناصر ادیب کی اک دھواں دار اور دھماکہ خیز پنجابی فلم تھی جس کے چربے انڈیا میں بھی پروڈیوس کئے گئے۔ اس تاریخی فلم کا نام تھا… ”مولا جٹ“۔ اس کا ایک ایک مکالمہ سونے میں تلنے والا تھا جن میں سے ایک یہ بھی زبان زد عام ہوا کہ
”مولے نوں مولا ناں مارے تے مولا نئیں مردا“
میں پورے یقین سے کہہ سکتا ہوں کہ … ”عمران نوں عمران ناں مارے تے عمران نئیں مردا“
تحریک انصاف کے جواں سال پُر جوش نوجوان سے میری درد بھری اپیل ہے کہ عمران خان کو عمران خان سے بچاؤ کہ صرف یہی اک پارٹی امید کی اکلوتی اور آخر کرن ہے اور صرف یہی اک پارٹی ہمیں تاجر، سودگرار اور گینگسٹر کی لیڈری سے بچا سکتی ہے لیکن پھر وہی خطرہ اور خدشہ کہ عمران خان کو عمران خان کی سادگی سے بچانا ہے ورنہ وہی ذوالفقار مرزا والی بات کہ… ”عمران خان باؤنڈری پر کیچ آؤٹ ہو جائیں گے۔“ عمران خان ذاتی حیثیت میں باؤنڈری پر کیچ آؤٹ ہو یا اندر کلین بولڈ مجھے قطعاً کوئی پرواہ نہیں لیکن ”پاکستان تحریک انصاف“ کو کسی قیمت پر بھی ناکام نہیں ہونا چاہئے کیونکہ اس پارٹی کی ناکامی اس ملک کی ناکامی ہو گی اور یہ بدنصیب ملک پھر ان کے شکنجے میں چلا جائے گا جو اسے قسط وار باری باری موت کے گھاٹ اتار رہے ہیں۔
عمران خان مجھے بہت اچھی طرح جانتا ہے۔ وہ اس بات سے بخوبی واقف ہے کہ میری محبت اور نفرت خالص ہوتی ہے اور یہ کہ میں اس کا خیر خواہ ہوں لیکن جھوٹ، ریا کاری، منافقت، دوہرے معیار میرے نزدیک سے بھی نہیں گزرے اور میں ”نان سینس“ کو ”نان سینس“ اور ”بل شٹ“ کو ”بل شٹ“ کہنا جانتا ہوں۔ وہ یہ بھی جانتا ہے کہ سیاست میں آنے سے پہلے ہی میں بطور ”سیاستدان“ اس کے ساتھ تھا جب میڈیا کا کوئی اور شخص اس پر چند حرف لکھنے کا روا دار نہ تھا۔ پھر جب سیاسی حماقتوں پر قلم اٹھایا تو وہ بھی ہماری صحافتی تاریخ کا حصہ ہے کہ ایک بھی پیش گوئی غلط نہ نکلی کہ ”سکاچ کارنر کے جانی واکر“ ویسے ہی نکلے جیسا میں نے کہا نہیں لکھا تھا۔ یہ عمران خان کی عالی ظرفی اور حقیقت پسندی ہے کہ اتنی قلمی مار دھاڑ کے بعد بھی ہمارے تعلقات نارمل ہو گئے ورنہ غصہ میں میں نے تعلق کی بربادی میں کوئی کسر نہ چھوڑی تھی۔
بدقسمتی یا خوش قسمتی سے آج ایک بار پھر میں خود کو اک عجیب موڑ پر کھڑا دیکھتا ہوں۔ میں پوری قوت و شدت کے ساتھ اپنی رائے دے کر قدم قدم پر تحریک انصاف کے شاہینوں اور شیروں سے اپیل کروں گا کہ عالیشان لیکن کچھ معاملات میں حیران کن حد تک ”سادہ“ اپنے لیڈر عمران خان کو چیک کریں اور بلنڈرز کے ارتکاب سے روکیں کہ چھوٹی موٹی غلطیاں تو معاف ہو سکتی ہیں… بلنڈر کی معافی نہیں ملے گی کیونکہ وہ لوگ جن کے ہاتھوں سے ان کی ”ذاتی ریاست“ نکلتی دکھائی ے رہی ہے وہ اپنی اس ”ذاتی جاگیر“ کو بچانے کے لئے کسی بھی حد تک جا سکتے ہیں اور جائیں گے۔
عمران کو تنظیم سازی پر بھرپور توجہ دینی ہو گی… لاہور کو ترجیحی بنیادوں پر آرگنائز کرنا ہو گا۔ اسے ان لوگوں سے بچنا ہو گا جو نئے آنے والوں کو صرف اس لئے شدید مزاحمت کر رہے ہیں کہ ان کی پھنے خانی کو کوئی خطرہ نہ ہو، اسے ان لوگوں سے خبردار رہنا ہو گا جن کے ذاتی جاسوسوں نے اسے مکمل طور پر گھیرا ہوا ہے اور وہ عمران کی اک اک حرکت اور ملاقات سے انہیں مکمل طور پر باخبر رکھتے ہیں۔ تنظیم سازی کے حوالہ سے اپنے نسخے آزمانے کی ضرورت نہیں۔ پیپلز پارٹی اور ن لیگ کا آزمودہ ماڈل موجود ہے جسے وقت ضائع کئے بغیر اپنانا ہو گا۔ عمران کو زیادہ سے زیادہ وقت لاہور میں گزارنا چاہئے اور وہ بھی اس طرح کہ عام آدمی بھی اس تک رسائی حاصل کر سکے۔ عمران خان کو فرنٹ فٹ پر آ کر اس بات کی بے تحاشہ حوصلہ افزائی کرنا ہو گی کہ ہر کوئی اس کے ساتھ اپنے دل کی بات شیئر کر سکے اور ہر سازش بے نقاب کرنے والے کو یہ یقین ہونا ضروری ہے کہ عمران اسے تحفظ دے گا اور کسی کی انتقامی کارروائی اسے نقصان نہیں پہنچا سکے گی۔ کون کہاں سے الیکشن لڑے گا؟ اس کا فیصلہ بھی بروقت کر کے لوگوں کو مطلع کر دیا جائے تاکہ وہ تندہی اور یکسوئی سے کام شروع کر سکیں۔
آج کے لئے بن مانگے اتنے ہی مشورے کافی سمجھیں… چکنے گھڑوں پر پانی پڑتا نظر آیا تو کچھ دن بعد چند مزید مفت مشورے اور تب تک اجازت لیکن اس فٹ نوٹ کے ساتھ کہ میں اچھی طرح جانتا ہوں ہر بن مانگے کا مشورہ بیحد نامناسب ہوتا ہے لیکن کیا کروں؟ ملک داؤ پر لگا ہے، کوئی رسک نہیں لیا جا سکتا!